جنگ بدر کے مشرکین کی تدفین کی جگہ

In اسلام
March 02, 2023
جنگ بدر کے مشرکین کی تدفین کی جگہ

جنگ بدر کے مشرکین کی تدفین کی جگہ

یہ بنجر زمین، مسجد عریش کے قریب ہے، جہاں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ جنگ بدر کے بعد مکہ کے مشرکوں کو دفن کیا گیا تھا۔ اس علاقے کو القلیب کے نام سے جانا جاتا ہے۔

قریش کے 70 لوگ جنگ میں مارے گئے اور 70 کو بدر کے دن گرفتار کر لیا گیا۔ ہلاک ہونے والوں میں ابوجہل اور امیہ بن خلف بھی شامل تھے جو اسلام کے دو بدترین دشمن تھے۔

عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ بدر کے دن وہ محاذ پر لڑ رہے تھے کہ ایک لڑکا ان کے پاس آیا اور کہا: مجھے ابوجہل دکھاؤ۔ عبدالرحمٰن رضی اللہ عنہ نے جواب دیا کہ تمہارا اس سے کیا تعلق؟ ‘مجھے بتایا گیا ہے کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کرتا ہے۔ اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں میری جان ہے، میں اسے دیکھ کر مار ڈالوں گا، یا اس کے ہاتھوں مارا جاؤں گا۔’ ایک اور نوجوان لڑکے نے عبدالرحمٰن رضی اللہ عنہ سے بھی یہی کہا۔ اچانک عبدالرحمٰن رضی اللہ عنہ نے ابو جہل کو میدان جنگ میں دیکھا اور اسے ان دونوں نوعمر لڑکوں کی طرف اشارہ کیا۔ انہوں نے اپنی تلواروں سے اس پر شدید حملہ کیا اور ابوجہل زمین پر گر پڑا۔ جنگ کے بعد دونوں نے اپنے آپ کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے پیش کیا، ہر ایک نے ابوجہل کو قتل کرنے کا دعویٰ کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی تلواروں کی طرف دیکھا اور اعلان کیا کہ تم دونوں نے اسے مار ڈالا ہے۔ نوجوان لڑکے معاذ بن عفرہ اور معاذ بن عمرو تھے۔

عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے، جنہوں نے ابوجہل کو میدان جنگ میں مرتے ہوئے پایا،اپنی ٹانگ اپنے پرانے دشمن کی گردن پر رکھ دی اور اس کی داڑھی پکڑ کر اس کا سر قلم کر دیا۔ اے اللہ کے دشمن کیا اللہ نے تجھے رسوا نہیں کیا؟ مرتے وقت بھی ابو جہل نادم تھا۔ ‘میں کس لیے رسوا ہوا ہوں؟ جس آدمی کو تم نے مارا ہے کیا اس سے بڑھ کر کوئی ہے؟ کاش ایک کسان کے علاوہ کوئی اور مجھے مار دیتا۔ بتاؤ آج کس کی جیت ہوئی؟ عبداللہ نے کہا کہ اللہ اور اس کا رسول۔ ‘اے چرواہے! تم نے بہت مشکل جگہ پر چڑھائی کی ہے۔‘‘ ابوجہل نے جواب دیا۔ عبداللہ رضی اللہ عنہ نے پھر اس کا سر کاٹ کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے رکھ دیا۔ ‘الله سب سے بڑا ہے! تمام تعریفیں اللہ کے لیے ہیں۔‘‘ نبیﷺ نے پکارا۔ ‘اس نے اپنے وعدے کو سچا ثابت کیا، اپنے بندوں کی مدد کی، اور مخالف فوج کو شکست دی۔’ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ابوجہل کے سر کو اپنے سامنے دیکھ کر فرمایا کہ وہ اپنی قوم کا فرعون تھا۔

ابو طلحہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بدر کے دن حکم دیا کہ قریش کے چوبیس سرداروں کی لاشیں بدر کے گندے خشک کنویں میں سے ایک میں ڈال دی جائیں۔ جب وہ کنویں کے کنارے رکے تو قریش کی لاشوں کو ان کے ناموں اور ان کے باپوں کے ناموں سے مخاطب کرتے ہوئے فرمایا: اے فلاں فلاں کے بیٹے اور اے فلاں کے بیٹے۔ فلاں کی! اگر تم اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرتے تو کیا تم خوش ہوتے؟ ہمارے رب نے ہم سے جو وعدہ کیا تھا ہم نے اسے سچ کر دکھایا۔ کیا تم نے بھی تمہارے رب کا وعدہ سچا پایا؟ عمر رضی اللہ عنہ نے عرض کیا: یا رسول اللہ! آپ ان جسموں سے بات کر رہے ہیں جن کی کوئی روح نہیں! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اس ذات کی قسم جس کے ہاتھ میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی جان ہے تم نہیں سنتے جو میں ان سے بہتر کہتا ہوں۔

جب مسلمان واپس مدینہ کی طرف جا رہے تھے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر اللہ کی طرف سے مال غنیمت کی تقسیم کے بارے میں وحی نازل ہوئی۔ مالِ غنیمت کا پانچواں حصہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے مختص کیا گیا اور باقی جنگ لڑنے والوں میں تقسیم کر دیا گیا۔ وہ پہلے نبی تھے جنہیں غنیمت میں حصہ لینے کی اجازت دی گئی۔

عظیم فتح کی خبر سن کر مدینہ کے بہت سے شہری اس امید پر بدر کی طرف روانہ ہوئے کہ وہ سب سے پہلے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو مبارکباد پیش کریں گے۔ وہ روحہ ​​میں فاتح مسلمانوں سے ملے، اور ان کے ساتھ مدینہ واپس چلے گئے۔ درجنوں اسیروں کے ساتھ فاتح مسلمانوں کے مدینے میں داخل ہونے کے نظارے نے بہت سے لوگوں کو مسلمان کر لیا۔

حوالہ جات: جب چاند پھٹ گیا – شیخ صفی الرحمن مبارکپوری، محمد (ص) آخری پیغمبر – مولانا سید حسن علی ندوی، محمد (ص) کی زندگی – طہیہ الاسماعیل

/ Published posts: 3239

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram