Nasiruddin Humayun

In BIOGRAPHY
October 02, 2022
Nasiruddin Humayun

Nasiruddin Humayun

Humayun “the Fortunate” was the eldest son of Babur.He had three brothers, kamran,askari and Hindal. He was born in Kabul in March 1508. He was the son of Mahim Begum who was probably Shia. Young Humayun learned Turki, Arabic, and Persian.

On account of his careless habits, he didn’t acquire the exactness of a scholar. In his early youth, he was associated by his father with the Govt. of the country. He was appointed the governor of Badakhshan at the age of 20. On the eve of the Battle of Panipat 1526, he was sent against Hamid Khan who was defeated near Hissar Firoza. He also participated in the Battle of Kanawha. He was given the fief of Hissar Firoza, in 1526. after the death of Babur. An effort was made to put Mahdi Khwaja ( Brother _in_law of Babur ) on the throne of Agra. He was an experienced and competent administrator. On the other hand, Humayun had not shown any outstanding traits of greatness. In spite of that Humayun successfully placed himself on the throne of Agra on 30th December 1530.

The throne inherited by Humayun wasn’t a bed of roses. Babur had practically got no time to consolidate his position and authority. He inherited an ill-organized empire, empty treasure, a kingdom divided into fiefs, and a heterogeneous army, which wasn’t dependable. It absolutely was a mixed body of adventures. a number of them were Uzbeks and Mughals, other Indians, Afghans, Persians, and Chaghtais.

Additionally to his claims about his three brothers, Humayun had to pander to many Khans and nobles. They were busy in intrigues against the new emperor and plenty of them failed to consider the dominion of Delhi and Agra beyond the scope of their ambitions. Humayun had innumerable rivals. The Afghans were defeated in the battle of Panipat (1526) and therefore the Battle of Ghagra (1529) but they weren’t completely crushed, neutralized, or pacified. Moreover, they’d not forgotten the times after they were the rulers of the country and aspired to revive their rule.

Humayun made a blunder of real politics in showing kindness to his brothers. In accordance with the desires of his father, he gave Sambhal to Askari, and Alwar to Hindal. As regards Kamran, he gave him the provinces of Kabul and Qandahar. In spite of this, Kamran wasn’t satisfied. He attacked Punjab and brought the entire Punjab under his control. Humayun didn’t fight with Kamran and gave the Province of Punjab to him. This possession of important military importance gave Kamran control over the high road between Delhi and Punjab. It was a suicide attempt by Humayun. He was deprived of the source from which he could have recruited his new army. He was left only with the empire which was newly conquered and over which his hold wasn’t secure.

Humayun was faced with many difficulties but he could have overcome them if he had possessed tact and stronger willpower. Unfortunately, he failed to possess such a personality. He wasn’t a person of the moment. He did not measure up to the task before him. After his defeat at Kanuj at the hands of Sher shah, Humayun crossed the river Ganga and reached Agra persistently persuaded by Sher Shah.

After having managed to gather his treasure, he straightaway reached Delhi But found that he couldn’t retain even Delhi on account of the uncertainty of any solid help from any quarter. At Lahore, Humayun collected all his brothers and relatives and requested their help. Kamran was the last person prepared to assist him Mirza Haider Daghlat, cousin of Babur advised Humayun to retire towards Kashmir a few times and so organized his forces to attack Sher Shah. In the meantime, the Mughals heard that Sher Shah had already crossed the Beas and was coming to Lahore. ultimately Humayun decided to proceed toward Sindh.

Passing through great hardships during his journey along the river Sindh, Humayun reached Rohri. Humayun approached the ruler of Bhakhar, Shah Hussain Arghun for help to recover Hindustan, but n vain. Then he besieged Thatta, the capital of the ruler of Sindh, but he wasn’t successful thanks to the intrigues, thus he had to go away from Sindh soon.

Humayun stayed with the Shah of Persia for an extended time as his honorable guest, after protracted negotiations a treaty was concluded between the 2, according to which the Shah promised to convey Humayun 14,000 strong forces to enable him to conquer Kabul and Kandhar, in return Humayun promised to allow Kandhar to the Shah, propagating Shiasim in his new kingdom and to substantiate Shia faith. Thus Humayun left Persia with 14,000 strong Persian armies to overcome Kabul and Kandhar. Humayun laid siege to Kandahar, defeated Askari, and occupied Kandahar. He put Kandhar in charge of Bairam Khan, his faithful ally who was with him throughout his exile. Humayun proceeded to require Kabul. Kamran put up resistance but ultimately he too was defeated.

Humayun had recovered the throne of Delhi after an interval of about 15 years, but he wasn’t destined to enjoy the fruits of his victories for a protracted time. He died on 26th January 1556, after an accidental fall from the roof of his library, and fractured his head. Speedy arrangements were made to call Prince Akbar from the Punja. for a few days, the news of his death was kept secret. At last, an announcement was made regarding Akbar’s accession to the Delhi throne.

The name of Humayun implies “fortunate” but he proved to be one of the foremost unlucky monarchs who ever sat upon the throne of Delhi. together with the empire, he inherited many difficulties that he failed to owe any personal responsibility. Humayun was an intensive gentleman. He was an ideal son, husband, father, and brother. In spite of the acts of disloyalty and treachery on the part of his brother, nobles, and others, he forgave them again and again. But this virtue to a fault was the undoing of his career.

ناصر الدین ہمایوں

ہمایوں ‘خوش قسمت’ بابر کا سب سے بڑا بیٹا تھا۔ ان کے تین بھائی تھے، کامران، عسکری اور ہندل۔ وہ مارچ 1508 میں کابل میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ ماہم بیگم کے بیٹے تھے جو غالباً شیعہ تھیں۔ نوجوان ہمایوں نے ترکی، عربی اور فارسی سیکھی تھی۔ اپنی لاپرواہی کی وجہ سے وہ کسی عالم کا درجہ حاصل نہ کر سکے۔ ابتدائی جوانی میں، وہ اپنے والد کی طرف سے ملک کی حکومت کے ساتھ منسلک کیے گئے تھے. اسے 20 سال کی عمر میں بدخشاں کا گورنر مقرر کیا گیا۔ 1526 میں پانی پت کی جنگ کے موقع پر اسے حامد خان کے خلاف بھیجا گیا جسے حصار فیروزہ کے قریب شکست ہوئی تھی۔ کنواہا کی جنگ میں بھی حصہ لیا۔ اسے 1526 میں بابر کی موت کے بعد حصار فیروزہ کی جاگیر دی گئی۔ مہدی خواجہ (بابر کے بہنوئی) کو آگرہ کے تخت پر بٹھانے کی کوشش کی گئی۔ وہ ایک تجربہ کار اور قابل منتظم تھے۔ دوسری طرف ہمایوں نے عظمت کی کوئی نمایاں خصلت نہیں دکھائی تھی۔ اس کے باوجود ہمایوں نے 30 دسمبر 1530 کو آگرہ کے تخت پر کامیابی سے اپنے آپ کو بٹھایا۔

ہمایوں کو جو تخت وراثت میں ملا تھا وہ گلاب کا بستر نہیں تھا۔ بابر کے پاس عملی طور پر اپنی حیثیت اور اختیار کو مستحکم کرنے کا وقت نہیں تھا۔ اسے وراثت میں ایک غیر منظم سلطنت، خالی خزانہ، جاگیروں میں بٹی ہوئی سلطنت اور ایک متضاد فوج ملی، جو قابل اعتبار نہیں تھی۔ یہ مہم جوئی کا ایک ملا جلا جسم تھا۔ ان میں سے کچھ ازبک اور مغل، دوسرے ہندوستانی، افغان، فارسی اور چغتائی تھے۔ اپنے تین بھائیوں کے دعووں کے علاوہ ہمایوں کو بہت سے خانوں اور رئیسوں سے بھی واسطہ پڑا۔ وہ نئے شہنشاہ کے خلاف سازشوں میں مصروف تھے اور ان میں سے بہت سے لوگ دہلی اور آگرہ کی سلطنت کو اپنے عزائم کے دائرہ سے باہر نہیں سمجھتے تھے۔ ہمایوں کے بے شمار حریف تھے۔ افغانوں کو پانی پت کی جنگ (1526) اور گھاگرا کی جنگ (1529) میں شکست ہوئی لیکن وہ مکمل طور پر کچلے، بے اثر یا پرسکون نہیں ہوئے۔ مزید یہ کہ وہ ان دنوں کو نہیں بھولے تھے جب وہ ملک کے حکمران تھے اور اپنی حکمرانی کی بحالی کے خواہشمند تھے۔

ہمایوں نے اپنے بھائیوں کے ساتھ حسن سلوک کرنے میں حقیقی سیاست کی غلطی کی۔ اپنے والد کی خواہش کے مطابق اس نے عسکری کو سنبھل اور ہندل کو الور دیا۔ جہاں تک کامران کا تعلق ہے، اس نے اسے کابل اور قندھار کے صوبے دیئے۔ اس کے باوجود کامران مطمئن نہیں تھا۔ اس نے پنجاب پر حملہ کیا اور پورے پنجاب کو اپنے قبضے میں لے لیا۔ ہمایوں نے کامران سے جنگ نہیں کی اور صوبہ پنجاب اسے دے دیا۔ اہم فوجی اہمیت کے اس قبضے نے کامران کو دہلی اور پنجاب کے درمیان ہائی روڈ پر کنٹرول فراہم کر دیا، یہ ہمایوں کی خودکشی کی کوشش تھی۔ وہ اس ذریعہ سے محروم تھا جہاں سے وہ اپنی نئی فوج بھرتی کر سکتا تھا۔ اس کے پاس صرف وہ سلطنت رہ گئی تھی جو نئی فتح ہوئی تھی اور جس پر اس کی گرفت محفوظ نہیں تھی۔

ہمایوں کو بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا لیکن اگر وہ تدبر اور مضبوط قوت ارادی رکھتےتو وہ ان پر قابو پا سکتے تھے۔ بدقسمتی سے، وہ اس طرح کے کردار کے مالک نہیں تھے. وہ لمحہ فکریہ نہیں تھا۔ وہ اپنے سامنے کام کی پیمائش کرنے میں ناکام رہا۔ شیر شاہ کے ہاتھوں قنوج میں اپنی شکست کے بعد، ہمایوں نے دریائے گنگا کو عبور کیا اور شیر شاہ کے قائل ہو کر آگرہ پہنچا۔ اپنا خزانہ جمع کرنے میں کامیاب ہونے کے بعد، وہ فوراً دہلی پہنچ گیا، لیکن معلوم ہوا کہ کسی بھی سہ ماہی سے کسی ٹھوس مدد کی غیر یقینی صورتحال کی وجہ سے وہ دہلی کو بھی اپنے پاس نہیں رکھ سکتا تھا۔

لاہور میں ہمایوں نے اپنے تمام بھائیوں اور رشتہ داروں کو جمع کیا اور ان سے مدد کی درخواست کی۔ کامران آخری شخص تھا جو مرزا حیدر دغلت کی مدد کے لیے تیار تھا، بابر کے کزن نے ہمایوں کو مشورہ دیا کہ وہ کچھ عرصے کے لیے کشمیر کی طرف ریٹائر ہو جائے اور پھر اپنی فوجوں کو شیر شاہ پر حملہ کرنے کے لیے منظم کر دیا۔ اسی اثنا میں مغلوں کو خبر ملی کہ شیر شاہ بیاس پار کر چکا ہے۔ لاہور آ رہا تھا۔ آخر کار ہمایوں نے سندھ کی طرف بڑھنے کا فیصلہ کیا۔ ہمایوں دریائے سندھ کے سفر کے دوران سخت مشکلات سے گزرتے ہوئے روہڑی پہنچے۔ ہمایوں نے ہندوستان کی بازیابی کے لیے بھکھر کے حکمران شاہ حسین ارغون سے مدد کی درخواست کی، لیکن بے سود، پھر اس نے سندھ کے حکمران کے دار الحکومت ٹھٹھہ کا محاصرہ کرلیا، لیکن سازشوں کی وجہ سے وہ کامیاب نہ ہوسکا، اس لیے اسے جلد ہی سندھ چھوڑنا پڑا۔ .

ہمایوں شاہ فارس کے ساتھ اپنے معزز مہمان کے طور پر طویل عرصہ تک رہے، طویل مذاکرات کے بعد دونوں کے درمیان ایک معاہدہ طے پایا، جس کے مطابق شاہ نے ہمایوں کو 14000 مضبوط فوج دینے کا وعدہ کیا تاکہ وہ کابل اور قندھار کو فتح کر سکے۔ واپسی ہمایوں نے شاہ کو قندھار دینے کا وعدہ کیا، اپنی نئی سلطنت میں شیعسم کی تبلیغ اور شیعہ عقیدے کی تصدیق کی۔ اس طرح ہمایوں نے 14000 مضبوط فارسی فوج کے ساتھ کابل اور قندھار کو فتح کرنے کے لیے فارس چھوڑ دیا۔ ہمایوں نے قندھار کا محاصرہ کیا، عسکری کو شکست دی اور قندھار پر قبضہ کر لیا۔ اس نے اپنے وفادار ساتھی بیرم خان کو قندھار کا انچارج بنا دیا جو جلاوطنی کے دوران اس کے ساتھ تھا۔ ہمایوں کابل پر قبضہ کرنے کے لیے آگے بڑھا۔ کامران نے مزاحمت کی لیکن بالآخر اسے بھی شکست ہوئی۔

ہمایوں نے تقریباً 15 سال کے وقفے کے بعد دہلی کا تخت بحال کر لیا تھا، لیکن زیادہ دیر تک اپنی فتوحات کے ثمرات سے لطف اندوز ہونا نصیب نہیں ہوا۔ ان کا انتقال 26 جنوری 1556 کو لائبریری کی چھت سے حادثاتی طور پر گرنے سے ہوا اور اس کا سر ٹوٹ گیا۔ شہزادہ اکبر کو پنجہ سے بلانے کے لیے فوری انتظامات کیے گئے تھے۔ کچھ دنوں تک ان کی موت کی خبر خفیہ رکھی گئی۔ آخر کار اکبر کے تخت دہلی سے الحاق کا اعلان ہوا۔

ہمایوں کے نام کا مطلب ‘خوش قسمت’ ہے لیکن وہ دہلی کے تخت پر بیٹھنے والے بدقسمت بادشاہوں میں سے ایک ثابت ہوا۔ سلطنت کے ساتھ ساتھ اسے بہت سی مشکلات وراثت میں ملی جن کے لیے اس پر کوئی ذاتی ذمہ داری عائد نہیں ہوئی۔ ہمایوں ایک شریف آدمی تھا۔ وہ ایک مثالی بیٹا، شوہر، باپ اور بھائی تھے۔ اپنے بھائی اور امرا اور دیگر کی طرف سے بے وفائی اور خیانت کے کاموں کے باوجود آپ نے انہیں بار بار معاف کیا۔ لیکن ایک غلطی کی یہ خوبی اس کے کیریئر کا خاتمہ تھا۔

/ Published posts: 1277

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram