Sher Shah Suri

In BIOGRAPHY
October 02, 2022
Sher Shah Suri

Sher Shah Suri

Sher Shah was one of the greatest administrators and rulers of medieval India. the first name of Sher Shah, the lion king, was Farid. He was the grandson of Ibrahim Sur and the son of Hussain. His grandfather came to India in search of employment in the time of Bahlol Lodhi and joined services in Punjab.

Farid is claimed to own been born in Punjab in 1472. After Farid’s birth, both his grandfather and father entered the services of Jamal Khan in Punjab. When Jamal khan was transferred to Jaunpur in the time of Sikandar Lodh, he granted the jagir of Saharan, Kanpur Tanda to Hassan in Bihar. When grew up, his stepbrothers challenged his right to the full of the Jagir. Farid refused to share the jagir along with his brothers and took up services under Bahar Shah Lodhi, ruler of South Bihar. When he was in this helpless condition, Sher Khan joined the Mughal services in 1527. When Babur attacked Bihar, Sher khan rendered his very valuable services, and as an award, jagir was given to him. Sher Khan spent his time in the Mughal administration and military organization. Thus he studied the weaknesses of the Mughal politico_military machine and financial system with insight and full.

On the opposite hand, Sultan Mahmud, the king of the Bengal, couldn’t tolerate his defeat in the Battle of Shurajgarh and he wanted to wash off his slur. He entered into an alliance with the Portuguese of Chinsura and invaded Sher khan., but he was defeated n this battle, encouraged by these victories, Sher khan proceeded further and besieged the famous forte of Gaur. It had been from the Forte of Gaur that the king of Bengalapproached Humayun for help. Humayun was then, busy against Bahadur Shah of Gujrat, pleasures, and merry-making, and in the meantime, Sher Khan had already occupied not only the full of Bengal but also the foremost famous fort of Rohtasgarh.

When Mahmood Lodhi was defeated in the battle of Ghagra in 1529, Mahmood again wanted to do his luck in 1530. He felt that point was ripe for his strength.cvHumayun, after his succession to the throne, didn’t take great interest in the affairs of an overseas place like Bihar. Mahmood Lodhi got the assistance of all the Afghan chiefs. Many months were spent in preparation. In the battle of Dourah, in August 1532, the Afghans were defeated and Mahmood fled. After this success, Humayun besieged the fort of Chunar which belonged to Sher Khan. However, Humayun made peace with Sher khan and he was allowed to continue in possession of Chunar on the condition that he was to send a contingent of 300 troops for service in the Mughal army.

When Sher khan occupied Bengal, at that point Humayun was busy with Bahadur Shah, he didn’t realize the magnitude of danger from the Afghan leader. Sher khan proceeded to Bengal, but there Humayun committed a fatal mistake, he wasted full six months in reducing the occupation of the fort of Chunar which wasn’t so important achievement. Sher khan took full advantage of Humayun’s blunder and managed to hold the families of his afghan nobles and therefore the whole of the treasure to Ruhtas which he had occupied in 1538. Then he returned together with his forces to fulfill the advanced army of Humayun.

Humayun in his march towards Agra crossed the river Ganga at Monghyr and encamped himself at Chausa. Sher Khan reached this place to live his strength with Humayun. Humayun now realized that he was during great difficulty. He sent his agents for peace to be concluded between the Afghans and therefore the Mughals but negotiations failed. Then all of sudden Sher Khan arrived at the unprepared Mughal forces. Humayun could no time to arrange his forcesagainst Sher Khan. The result was that Humayun received a crushing defeat at Chausa. Humayun plunged into the river Ganga on horseback and was close to drowning when he was saved by a water- carrier, Nizam, whom he seated on his throne for 2 days at Agra in recognition of his services to the emperor.

Humayun was defeated by Sher khan in the battles of Chausa and in the battle of Kanauj and was forced to flee far away from the battlefield. Sher Shah pursued Humayun out of Punjab and the throne of Delhi passed nto the hands of the hands of the Afghans. The Mughal Emperor was reduced to the position of a helpless fugitive.

Sher Khan was an ambitious person. He wanted to show the Mughals from India and established Afghan rule once more. His Indian emperor was broadly based upon the people’s will. Sher khan was wise enough to realize that if he wanted to be secure on the throne and leave a permanent name in history, he must win the loyalty and affection of his people and accord equal treatment to them regardless of creed or religion. Although a strict Sunni, he was well-disposed towards other sects and religions. Though his government was a military despotism, he had real look after the welfare of all his people. The Hindus were granted Waqfs for the encouragement of their education. Hindus were recruited in every department of the government.

In his Central Government there have been four departments as discussed below:
1. Diwan_ I _ Wizarat.
2. Diwan_ I_ Ariz.
3. diwan_ i_ Risalat or Diwan_ i_ MUhtasib.
4. Diwan _i Insha.

Provincial Administration

  1. Subha or Iqta
  2. Sarkars
  3. Parganas
  4. Village

The main sources of income for the state were land revenue.

Sher shah showed brilliant capacity as an organizer, both in the military and in civil affairs. By dint of indefatigable industry and personal attention to the smallest details of administration. He restored law and order throughout Hindustan in the short space of 5 years. He was something quite the capable leader of a horde of fierce Afghans.

شیر شاہ سوری

شیر شاہ قرون وسطی کے ہندوستان کے عظیم ترین منتظم اور حکمرانوں میں سے ایک تھے۔  شیر شاہ کا اصل نام فرید تھا۔ وہ ابراہیم سور کے پوتے اور حسین کے بیٹے تھے۔ ان کے دادا بہلول لودھی کے زمانے میں روزگار کی تلاش میں ہندوستان آئے اور پنجاب میں خدمات انجام دیں۔ فرید کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ 1472 میں پنجاب میں پیدا ہوئے تھے۔ فرید کی پیدائش کے بعد، اس کے دادا اور والد دونوں پنجاب میں جمال خان کی خدمات میں شامل ہو گئے۔ سکندر لودھ کے زمانے میں جب جمال خان کو جونپور منتقل کیا گیا تو اس نے بہار میں حسن کو سہسران، کان پور ٹانڈہ کی جاگیر عطا کی۔ جب بڑا ہوا تو اس کے سوتیلے بھائیوں نے پوری جاگیر پر اس کے حق کو چیلنج کردیا۔ فرید نے اپنے بھائیوں کے ساتھ جاگیر بانٹنے سے انکار کردیا اور جنوبی بہار کے حکمران بہار شاہ لودھی کے ماتحت خدمات انجام دیں۔ جب وہ اس بے بس حالت میں تھا، شیر خان 1527 میں مغلوں کی خدمات میں شامل ہو گیا۔ جب بابر نے بہار پر حملہ کیا تو شیر خان نے اس کی بہت گراں قدر خدمات انجام دیں، انعام کے طور پر اسے جاگیر دی گئی۔ شیر خان نے اپنا وقت مغل انتظامیہ اور فوجی تنظیم میں گزارا۔ چنانچہ اس نے مغلوں کی سیاسی_فوجی مشین اور معاشی نظام کی کمزوریوں کا بصیرت اور گہرائی سے مطالعہ کیا۔

دوسری طرف بنگال کا بادشاہ سلطان محمود شوراج گڑھ کی لڑائی میں اپنی شکست کو برداشت نہ کر سکا اور اس نے اپنا یہ داغ دھونا چاہا۔ اس نے چنسورہ کے پوٹوگیس کے ساتھ اتحاد کیا اور شیر خان پر حملہ کر دیا، لیکن اس جنگ میں اسے شکست ہوئی، ان فتوحات سے حوصلہ پا کر شیر خان نے مزید آگے بڑھا اور گور کے مشہور قلعے کا محاصرہ کر لیا۔ یہ گور کے قلعے سے ہی تھا کہ بنگال کے بادشاہ نے ہمایوں سے مدد کے لیے رابطہ کیا۔ ہمایوں اس وقت بہادر شاہ کے خلاف عجائب، عیش و عشرت میں مصروف تھا اور اس دوران شیر خان نہ صرف پورے بنگال پر بلکہ روہتاس گڑھ کے مشہور ترین قلعے پر بھی قبضہ کر چکا تھا۔

جب محمود لودھی کو 1529 میں گھاگرا کی جنگ میں شکست ہوئی تو محمود نے 1530 میں دوبارہ قسمت آزمانا چاہی۔ اسے لگا کہ اس کی طاقت کا وقت آ گیا ہے۔ محمود لودھی کو تمام افغان سرداروں کی مدد حاصل تھی۔ تیاری میں کئی مہینے گزر گئے۔ دورہ کی جنگ میں اگست 1532 میں افغانوں کو شکست ہوئی اور محمود بھاگ گیا۔ اس کامیابی کے بعد ہمایوں نے چنڑ کے قلعے کا محاصرہ کر لیا جو شیر خان کا تھا۔ تاہم ہمایوں نے شیر خان سے صلح کر لی اور اسے اس شرط پر چنڑ پر قبضہ جاری رکھنے کی اجازت دی گئی کہ وہ مغل فوج میں خدمت کے لیے 300 فوجیوں کا دستہ بھیجے۔

جب شیر خان نے بنگال پر قبضہ کیا تو اس وقت ہمایوں بہادر شاہ کے ساتھ مصروف تھا، اسے افغان لیڈر سے خطرے کی شدت کا احساس نہیں تھا۔ شیر خان بنگال کی طرف روانہ ہوا، لیکن وہاں ہمایوں نے ایک مہلک غلطی کا ارتکاب کیا، اس نے چونڑ کے قلعے پر قبضہ چھڑانے میں پورے چھ مہینے ضائع کر دیے جو کہ اتنی اہم کامیابی نہیں تھی۔ اپنے افغان امرا کا اور سارا خزانہ روہتاس کو جس پر اس نے 1538 میں قبضہ کر لیا تھا۔ پھر وہ اپنی فوجوں کے ساتھ ہمایوں کی ترقی یافتہ فوج سے ملنے کے لیے واپس آیا۔

ہمایوں نے آگرہ کی طرف اپنی چال میں دریائے گنگا مونگھیر کو عبور کیا اور چوسا میں ڈیرہ ڈال لیا۔ شیر خان ہمایوں کے ساتھ اپنی طاقت ناپنے کے لیے اس مقام پر پہنچا۔ ہمایوں کو اب احساس ہوا کہ وہ بڑی مشکل میں ہے۔ اس نے افغانوں اور مغلوں کے درمیان امن کے لیے اپنے ایجنٹ بھیجے لیکن مذاکرات ناکام ہوئے۔ پھر اچانک شیر خان بغیر تیاری کے مغل افواج پر گر پڑا۔ ہمایوں کے پاس شیر خان کے خلاف اپنی افواج کو منظم کرنے کا وقت نہیں تھا۔ نتیجہ یہ ہوا کہ چوسہ میں ہمایوں کو عبرتناک شکست ہوئی۔ ہمایوں نے گھوڑے کی پیٹھ پر دریائے گنگا میں چھلانگ لگا دی اور ڈوبنے ہی والا تھا کہ اسے ایک آبی بردار نظام نے بچایا، جسے اس نے شہنشاہ کی خدمات کے اعتراف میں آگرہ میں دو دن تک اپنے تخت پر بٹھایا۔

چوسہ کی لڑائیوں اور قنوج کی لڑائی میں ہمایوں کو شیر خان کے ہاتھوں شکست ہوئی اور اسے میدان جنگ سے بھاگنے پر مجبور کیا گیا۔ شیر شاہ نے پنجاب سے ہمایوں کا تعاقب کیا اور دہلی کا تخت افغانوں کے ہاتھوں میں چلا گیا۔ مغل شہنشاہ کو ایک بے بس مفرور کی حیثیت سے ہٹا دیا گیا۔

شیر خان ایک پرجوش شخص تھا۔ وہ مغلوں کو ہندوستان سے نکال کر ایک بار پھر افغان حکومت قائم کرنا چاہتا تھا۔ اس کا ہندوستانی شہنشاہ بڑے پیمانے پر لوگوں کی مرضی پر مبنی تھا۔ شیر خان اتنا سمجھدار تھا کہ اگر وہ تخت پر محفوظ رہنا چاہتا ہے اور تاریخ میں مستقل نام چھوڑنا چاہتا ہے تو اسے اپنے لوگوں کی وفاداری اور پیار حاصل کرنا ہوگا اور بلا تفریق مسلک و مذہب ان کے ساتھ یکساں سلوک کرنا ہوگا۔ اگرچہ ایک سخت سنی تھے، لیکن وہ دوسرے فرقوں اور مذاہب کے ساتھ اچھا سلوک کرتے تھے۔ اگرچہ اس کی حکومت ایک فوجی آمریت تھی، پھر بھی اسے اپنے تمام لوگوں کی فلاح و بہبود کا حقیقی خیال تھا۔ ہندوؤں کو ان کی تعلیم کی حوصلہ افزائی کے لیے وقف دیا گیا تھا۔ حکومت کے ہر محکمے میں ہندو بھرتی کیے گئے۔

ان کی مرکزی حکومت میں چار محکمے تھے جن پر ذیل میں بحث کی گئی ہے۔
نمبر1. دیوان_ ون _ وزارات۔
نمبر2. دیوان_ ون_ آریز.
نمبر3. دیوان_ون_رسالت یا دیوان_محتسب۔
نمبر4. دیوان _ون انشاء۔

صوبائی انتظامیہ

نمبر1:سبھا یا اقطا۔
نمبر2:سرکار
نمبر3:پرگنہ
نمبر4:گاؤں

ریاست کی آمدنی کے اہم ذرائع زمینی محصول تھے۔

شیر شاہ نے ایک منتظم کے طور پر شاندار صلاحیت کا مظاہرہ کیا، دونوں سول معاملات میں ملٹری میں۔ ناقابل تسخیر صنعت اور انتظامیہ کی چھوٹی چھوٹی تفصیلات پر ذاتی توجہ کے ذریعے وہ ایسا کرنے میبں کامیاب ہوئے۔ انہوں نے پانچ سال کے مختصر عرصے میں پورے ہندوستان میں امن و امان بحال کیا۔

/ Published posts: 1277

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram