Jalaluddin Akbar

In BIOGRAPHY
October 02, 2022
Jalaluddin Akbar

Jalaluddin Akbar

Akbar, the great was one of the foremost eminent rulers of Indian history. He was one of the 2 greatest and after all the foremost controversial personalities together with Aurangzeb. Both are variously held responsible for the downfall of the Mughal Empire.

Akbar came to the throne in 1556 after the sudden death of his father, Humayun. The news of Humayun’s death was kept secret for 17 days. When he came to power he was a toddler of hardly 14. The first aim of Akbar was to bring all of India under one ruler and to accomplish this task in a very great measure by enlisting in its favor several races which he desired to bring into his fold.

Hemu, Commander of Adil Shah occupied Agra and Delhi, and Tardi Beg, Mughal Commander fled away. For this, he was awarded death punishment and Bairam Khan became Commander of the Mughal Army.

Second Battle of Panipat

Hemu occupied Delhi and Agra. He proclaimed himself king under the title of Vikrama Jit. When the news of the autumn of Delhi and Agra reached Akbar, he ordered an on-the-spot march towards Sirhind. At Sirhind Tardi Beg joined with the remnant of his forces. In the meantime, Hemu was setting his troops so as, and when he heard of the arrival of Akbar at Sirhind, he marched from Delhi, sending his artillery earlier to Panipat. From Sirhind Akbar moved towards Panipat, on the day, 1556, the fight began at the battlefield of Panipat.

Hemu succeeded in overthrowing the correct and left of the Mughal forces and was attempting to crush the center with his elephants, but suddenly an arrow pierced through his eyes which made him unconscious. On seeing their leader fall, the military of Hemu fled away, and also the Mughals came out victorious.

The second Battle of Panipat proved to be of far-reaching importance. The Mughals gained a decisive victory over the Afghans.

Akbar’s Rajput Policy

Akbar probably was the first Muslim ruler of India who adopted the liberal policy of conciliation toward Rajputs and his other non-Muslim subjects. The Rajput chiefs not only offered submission to the Mughal Emperor but fought for him together with

Mughal soldiers in the expansion of the Mughal Empire yet as in the subjugation of the Rajput rulers and rebels. He secured Rajput friendship by matrimonial alliances with them still as by granting posts of trust and responsibility to the Hindus within the civil and military administration. Except that the first step towards friendship with them was that he removed the religious restrictions imposed by the Delhi Sultans over the Hindus. Akbar abolished the pilgrim tax imposed on the Hindus and also remitted jizya or the capitation on the non-Muslims.

The Promulgation of Din-i-Illahi

The third or ultimate stage in the evolution of his religious views was reached in 1582 when he promulgated a replacement religion, the Din_i_llahi or Divine Religion. He opened the Ibadat Khana to the people of various faiths towards the tip of the year 1578. Although discussions within the Ibadat Khana continued on, Akbar arranged private meetings with the students and holly men of various faiths. He lose faith in Sunni orthodoxy, then he turned to Shia scholars, but yet he got no mental satisfaction from the Shia faith, then he turned to Sufism but in vain. Now he attempted to determine consolation in other religions by freely mixing with Hindus Sanyasis, Christian missionaries, Zoroastrian priests, and Hindu philosophers. After long inquiries about all the religions, he came to the conclusion that there have been sensible men altogether religions. So he decided to establish a standard religion that was acceptable to any or all the faiths, by including all the nice points taken from all the religions, investigated by him. The essential principles of the new religious faith were:

(a) The principle of toleration.

(b) Grant of liberty of conscience and worship to all or any.

(c) Removal of all distinctions between the 2 communities.

The effects of toleration pursued toward the Hindus endeared the latter to him so strongly that they became so loyal and faithful supporters altogether the matters of the state. The danger from the Rajputs and Hindus was also over now. They were afterward utilized by him as a valuable weapon against his enemies – the Uzbeks and other rebellious officers.

In 1556 when Akbar came to power, he had no territory, but when he died in 1605, he left a really long powerful, and consolidated empire.

Akbar as an Administrator

Akbar wasn’t only the founding father of the Mughal Empire in India, but he was also an excellent administrator. He laid the muse of a splendid system of administration that continued for a period of two centuries. Salient features of his administration were as follow:

The Central Ministers:

For their assistance in the administration of the country, the Mughal Emperors had appointed ministers under them. The subsequent ministers had been appointed.

(a) The Prime Minister ( vakil )

(b) The government minister ( diwan or Wazir )

Provincial Government

Akbar had divided his empire into well-defined provinces in which he founded a well-established and uniform system of administration. In each such province or Suba, there was a Governor, styled as Sipah Salar, Commander_in_chief, the Diwan, a Bakhshi, a Faujdar, a kotwal, the Qazi, the Sadar, the Amil, the Bitikchi, the Potdar and other officers of the revenue department.

Apart from that Akbar established an efficient Mansabdari system in 1570, to manage the Imperial services. All the gazetted Imperial officers of the state were styled as Mansabdars. To start with they were classified into sixty-six grades, from the mansab of ten to 10 thousand. Thus it absolutely was Akbar who organized the mansabs of his Imperial officers during a very systematic form that became related to his name.

جلال الدین اکبر

اکبر، عظیم ہندوستانی تاریخ کے نامور حکمرانوں میں سے ایک تھے۔ وہ اورنگ زیب کے ساتھ دو عظیم اور یقیناً سب سے زیادہ متنازعہ شخصیتوں میں سے ایک تھے۔ دونوں کو مغلیہ سلطنت کے زوال کے لیے مختلف طور پر ذمہ دار ٹھہرایا جاتا ہے۔

اکبر اپنے والد ہمایوں کی ناگہانی موت کے بعد 1556 میں تخت پر بیٹھا۔ ہمایوں کی موت کی خبر کو 17 دن تک خفیہ رکھا گیا۔ جب وہ اقتدار میں آیا تو وہ مشکل سے 14 سال کا بچہ تھا۔ اکبر کا پہلا مقصد پورے ہندوستان کو ایک حکمران کے تحت لانا تھا اور اس کے حق میں کئی نسلوں کو شامل کرکے اس کام کو بڑے پیمانے پر پورا کرنا تھا جنہیں وہ اپنے دائرے میں لانا چاہتا تھا۔ .

آگرہ اور دہلی پر قابض عادل شاہ کا کمانڈر ہیمو اور مغل کمانڈر تردی بیگ فرار ہو گئے۔ اس کے لیے اسے سزائے موت دی گئی اور بیرم خان مغل فوج کا کمانڈر بن گیا۔

پانی پت کی دوسری جنگ

ہیمو نے دہلی اور آگرہ پر قبضہ کر لیا۔ اس نے خود کو وکرما جیت کے عنوان سے بادشاہ قرار دیا۔ جب دہلی اور آگرہ کے سقوط کی خبر اکبر کو پہنچی تو اس نے فوری طور پر سرہند کی طرف کوچ کرنے کا حکم دیا۔ سرہند میں تردی بیگ اپنی باقی ماندہ فوجوں کے ساتھ شامل ہو گیا۔ اس دوران ہیمو اپنی فوجوں کو ترتیب دے رہا تھا، اور جب اسے اکبر کی سرہند میں آمد کی خبر ملی تو اس نے دہلی سے کوچ کیا، اپنا توپ خانہ پانی پت کی طرف پیشگی روانہ کیا۔ سرہند سے اکبر پانی پت کی طرف بڑھا، 5 نومبر 1556 کو پانی پت کے میدان جنگ میں لڑائی شروع ہوئی۔

ہیمو مغل افواج کے دائیں اور بائیں بازو کو اکھاڑ پھینکنے میں کامیاب ہو گیا اور اپنے ہاتھیوں کے ذریعے مرکز کو کچلنے کی کوشش کر رہا تھا، لیکن اچانک ایک تیر اس کی آنکھوں میں جا لگا جس سے وہ بے ہوش ہو گیا۔ اپنے لیڈر کو گرتے ہوئے دیکھ کر ہیمو کی فوج بھاگ گئی اور مغل فاتح ہو کر نکل آئے۔

پانی پت کی دوسری جنگ بہت دور رس اہمیت کی حامل ثابت ہوئی۔ مغلوں نے افغانوں پر فیصلہ کن فتح حاصل کی۔

اکبر کی راجپوت پالیسی

اکبر غالباً ہندوستان کا پہلا مسلم حکمران تھا جس نے راجپوتوں اور ان کی دیگر غیر مسلم رعایا کے ساتھ مفاہمت کی لبرل پالیسی اپنائی۔ راجپوت سرداروں نے نہ صرف مغل شہنشاہ کو تسلیم کرنے کی پیشکش کی بلکہ اس کے ساتھ مل کر لڑے۔

مغل سلطنت کی توسیع کے ساتھ ساتھ راجپوت حکمرانوں اور باغیوں کی محکومیت میں مغل سپاہی۔ اس نے راجپوت دوستی کو ان کے ساتھ ازدواجی اتحاد کرکے اور ساتھ ہی سول اور فوجی انتظامیہ میں ہندوؤں کو اعتماد اور ذمہ داری کے عہدے دے کر حاصل کیا۔ اس کے علاوہ ان سے دوستی کی طرف پہلا قدم یہ تھا کہ اس نے دہلی کے سلطانوں کی طرف سے ہندوؤں پر عائد مذہبی پابندیاں ہٹا دیں۔ اکبر نے ہندوؤں پر عائد حج ٹیکس ختم کر دیا اور غیر مسلموں پر جزیہ یا پول ٹیکس بھی معاف کر دیا۔

دین الٰہی کا اعلان

اس کے مذہبی نظریات کے ارتقا کا تیسرا یا آخری مرحلہ 1582 میں اس وقت پہنچا جب اس نے ایک نئے مذہب، دین_اللہ یا الہی مذہب کا اجرا کیا۔ اس نے 1578 کے آخر میں عبادت خانہ کو مختلف مذاہب کے لوگوں کے لیے کھول دیا۔ اگرچہ عبادت خانہ میں بات چیت جاری رہی، اس کے باوجود اکبر نے مختلف مذاہب کے علماء اور مقدسین سے نجی ملاقاتوں کا اہتمام کیا۔ اس کا سنی راسخ العقیدہ پر اعتماد ختم ہو گیا، پھر اس نے شیعہ علماء کی طرف رجوع کیا، لیکن پھر بھی اسے شیعہ مسلک سے کوئی ذہنی تسکین نہیں ملی، پھر اس نے تصوف کی طرف رجوع کیا لیکن بے سود۔ اب اس نے ہندو سنیاسیوں، عیسائی مشنریوں، زرتشتی پادریوں اور ہندو فلسفیوں کے ساتھ آزادانہ طور پر گھل مل کر دوسرے مذاہب میں تسلی دیکھنے کی کوشش کی۔ تمام مذاہب کے بارے میں طویل استفسار کے بعد وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ تمام مذاہب میں سمجھدار آدمی موجود ہیں۔ لہٰذا اس نے ایک مشترکہ مذہب قائم کرنے کا فیصلہ کیا جو تمام مذاہب کے لیے قابل قبول ہو، اس میں تمام مذاہب سے لیے گئے تمام اچھے نکات کو شامل کرکے، ان کی تحقیق کی گئی تھی۔ نئے مذہبی عقیدے کے بنیادی اصول یہ تھے:

اے) رواداری کا اصول۔

بی) سب کو ضمیر اور عبادت کی آزادی دینا۔

سی) دونوں برادریوں کے درمیان تمام تفریق کو ختم کرنا۔

ہندوؤں کی طرف رواداری کے اثرات نے بعد والے کو اس قدر پیارا کیا کہ وہ ریاست کے تمام معاملات میں اس قدر وفادار اور وفادار مددگار بن گئے۔ راجپوتوں اور ہندوؤں سے خطرہ بھی اب ختم ہو چکا تھا۔ انہیں بعد میں اس نے اپنے دشمنوں – ازبکوں اور دیگر باغی افسران کے خلاف ایک قیمتی ہتھیار کے طور پر استعمال کیا۔

سنہ1556 میں جب اکبر برسراقتدار آیا تو اس کے پاس کوئی علاقہ نہیں تھا لیکن جب 1605 میں اس کا انتقال ہوا تو اس نے ایک بہت طویل طاقتور اور مستحکم سلطنت چھوڑ دی۔

اکبر بطور ایڈمنسٹریٹر

اکبر نہ صرف ہندوستان میں مغلیہ سلطنت کا بانی تھا بلکہ وہ ایک عظیم منتظم بھی تھا۔ اس نے ایک شاندار نظام حکومت کی بنیاد رکھی جو دو صدیوں تک جاری رہا۔ ان کی انتظامیہ کی نمایاں خصوصیات حسب ذیل تھیں۔

مرکزی وزراء

ملک کے انتظام میں ان کی مدد کے لیے مغل بادشاہوں نے ان کے ماتحت وزیر مقرر کیے تھے۔ درج ذیل وزراء کا تقرر کیا گیا تھا۔

(الف) وزیر اعظم (وکیل)

(ب) وزیر خزانہ (دیوان یا وزیر)

صوبائی حکومت

اکبر نے اپنی سلطنت کو اچھی طرح سے متعین صوبوں میں تقسیم کیا تھا جس میں اس نے ایک اچھی طرح سے قائم اور یکساں نظام حکومت قائم کیا۔ ایسے ہر صوبے یا صوبے میں ایک گورنر ہوتا تھا، جسے سپاہ سالار، کمانڈر_ان_چیف، دیوان، ایک بخشی، ایک فوجدار، ایک کوتوال، قاضی، صدر، عامل، بیٹکچی، پوتدار اور دیگر افسران کے نام سے جانا جاتا تھا۔ شعبہ آمدنی.

اس کے بعد اکبر نے شاہی خدمات کو منظم کرنے کے لیے 1570 میں ایک موثر منصب داری نظام قائم کیا۔ ریاست کے تمام گزیٹڈ امپیریل افسروں کو منصب دار کہا جاتا تھا۔ شروع کرنے کے لیے ان کو چھیاسٹھ درجات میں درجہ بندی کیا گیا تھا، دس سے دس ہزار کے منصب سے۔ اس طرح یہ اکبر ہی تھا جس نے اپنے شاہی افسروں کے منصب کو نہایت منظم انداز میں منظم کیا کہ یہ اس کے نام کے ساتھ جڑ گیا۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram