Nooruddin Jahangir

In BIOGRAPHY
October 02, 2022
Nooruddin Jahangir

Nooruddin Jahangir

Jahangir was the son of the many prayers. Akbar wanted an heir to succeed him, he not only prayed to God but also begged for the blessings of saints to own a son. All previous children of the emperor had died in their infancy, ultimately, a son was born in August 1569, and he was named Muhammad Saleem. It absolutely was as a result of the blessings of the famous Sheikh Saleem Chishti that he was blessed with a son and named him after the saint Muhammad Sultan Saleem, but Akbar wont to call Saleem by the nickname of Sheikho Baba.

The child was noted with utmost care and affection. Akbar paid full attention to the education of Saleem and placed him under the guardianship of the most effective scholars and tutors of the age. Saleem learned Turki, Hindi, Geography, arithmetics, and other important sciences from his teachers.

Saleem was married to Man Bai at the age of 15, but Saleem kept some eight hundred women in his harem. Saleem developed a great love for wine and other sensual pleasures at an early age. This wasn’t liked by Akbar and he tried to fix the young prince but without much success.

The loose character of Saleem was a reason behind great concern for Akbar but the young prince wasn’t willing to pay any heed to Akbar’s advice. In 1599, when Akbar left for the Deccan expedition, he directed Saleem to attack Rana Amar Singh of Mewar. Rather than complying with the directions of Akbar, Saleem utilized the occasion to lift a banner of revolt. Saleem had declared his independence and founded a court in Allahabad. Akbar rushed back to Agra and crushed the revolt.

Jahangir succeeded to the throne on November 1605, on the eighth day of Akbar’s death. Soon after accession to the throne, Jahangir proceeded to issue a proclamation of his policy within the shape of twelve rules of conduct ( Dastur_ul- Amal ). These rules or instructions were as follow:

  • Prohibition of Cesses ( Zakat )
  • Regulations about Highway Robbery and Theft
  • Free Inheritance of Property of Deceased persons
  • Prohibition of Wine and every one style of Intoxicating Liquors
  • Prohibition of the occupation of the homes and cutting the Noses and Ears of the criminals.
  • Prohibition of Ghasbi
  • Building of Hospitals and Appointment of Physicians to attend the Sick
  • Prohibiting Slaughter of Animals
  • The respect paid to Sunday
  • General Confirmation of Mnsabs and Jagirs
  • Confirmation of aima Lands
  • Amnesty for all Prisoners

It was a crucial event of Jahangir’s reign, his marriage with Nur Jahan, which left a deep impact on the course of the history of his reign. He bestowed on her the title of Nur Mahal ( light of the harem ) which was subsequently turned into Nur Jahan Begum ( Light of the globe ). Once installed as empress the influence continued on the administration. She was a brave and shrewd lady and came to exercise tremendous influence on Jahangir during the amount from 1611 to 1627. Two Sides to his character:

(A) the bright side of his character.

Jahangir possessed a really amiable personality. He always showed great relationships with his mother and other elders of his family. Though he rebelled against his father, he showed much repentance over his folly. He always cherished the memory of Akbar and wont to pay his homage to the departed soul.

Jahangir was a highly educated man. He had acquired sufficient knowledge of Arabic, Hindi, and Persian languages. His own memoirs called Tuzak_i_ Jahangiri may be proof of his excellent composition. He was a great deal fascinated by the fine arts like music, architecture, painting, and others.

Jahangir had an excellent passion for justice, allowing all men to approach him with complaints that he himself heard. With a view to creating him accessible to any or all the seekers of justice, he caused gold chains with bells to be hung between the Shah Burj and the Agra fort and a post on the road near the bank of the river Jumna and so on to enable the suitors to ring the bell of justice.

(B) Dark Side of His Character.

Jahangir had many good qualities in his character, but he had certain shortcomings too which eclipsed his great qualities in him. He was a notorious drunkard but punished other drunkards very severely. He had formed such a powerful habit of wine that wine didn’t intoxicate him. Thus he became more and more engrossed in pleasure and ease, till he became a figurehead within the State, and real powers being thus enjoyed by Nur Jahan, he never interfered with the work of Nur Jahan.

The health of Jahangir was completely shattered on account of excessive drinking. He was trying to revive it by visiting Kashmir and Kabul. On his way from Kabul to Kashmir, he returned to Lahore on account of severe cold and died on the way in October 1627, probably within the vicinity of Murree and Abbottabad, in step with one account, his body was delivered to Lahore and was ultimately interred within the tomb near Shahdara, Lahore.

نورالدین جہانگیر

جہانگیر بہت دعاؤں کے بعد آنے والا بیٹا تھا۔ اکبر اس کے بعد ایک وارث چاہتا تھا، اس نے نہ صرف خدا سے دعا کی بلکہ اولیاء سے بیٹے کی دعا بھی مانگی۔ شہنشاہ کے تمام سابقہ ​​بچے بچپن میں ہی فوت ہو چکے تھے، بالآخر اگست 1569 میں ایک بیٹا پیدا ہوا اور اس کا نام محمد سلیم رکھا گیا۔ یہ مشہور شیخ سلیم چشتی کی عنایت کا نتیجہ تھا کہ ان کو ایک بیٹا نصیب ہوا اور اس کا نام ولی محمد سلطان سلیم رکھا، لیکن اکبر سلیم کو شیخو بابا کے نام سے پکارتے تھے۔

بچے کی پرورش انتہائی پیار اور محبت سے ہوئی۔ اکبر نے سلیم کی تعلیم پر پوری توجہ دی اور اسے اپنے زمانے کے بہترین اسکالروں اور اساتذہ کی سرپرستی میں رکھا۔ سلیم نے اپنے اساتذہ سے ترکی، ہندی، جغرافیہ، ریاضی اور دیگر اہم علوم سیکھے۔

سلیم کی شادی 15 سال کی عمر میں من بائی سے ہوئی، اس کے علاوہ سلیم نے تقریباً آٹھ سو خواتین کو اپنے حرم میں رکھا۔ سلیم کو کم عمری میں ہی شراب اور دیگر جنسی لذتوں سے بے پناہ لگاؤ ​​تھا۔ اکبر کو یہ پسند نہیں آیا اور اس نے نوجوان شہزادے کو ٹھیک کرنے کی کوشش کی لیکن زیادہ کامیابی نہیں ہوئی۔

سلیم کا گمشدہ کردار اکبر کے لیے بڑی پریشانی کا باعث تھا لیکن نوجوان شہزادہ اکبر کے مشورے پر کوئی توجہ دینے کو تیار نہیں تھا۔ 1599 میں جب اکبر دکن کی مہم پر روانہ ہوا تو اس نے سلیم کو میواڑ کے رانا امر سنگھ پر حملہ کرنے کی ہدایت کی۔ اکبر کی ہدایات پر عمل کرنے کے بجائے، سلیم نے اس موقع کو بغاوت کا جھنڈا اٹھانے کے لیے استعمال کیا۔ سلیم نے اپنی آزادی کا اعلان کیا تھا اور الہ آباد میں عدالت قائم کی تھی۔ اکبر آگرہ واپس چلا گیا اور بغاوت کو کچل دیا۔

اکبر کی وفات کے آٹھویں دن نومبر 1605 کو جہانگیر تخت نشین ہوا۔ تخت پر فائز ہونے کے فوراً بعد جہانگیر نے بارہ ضابطوں (دستور_العمل) کی شکل میں اپنی پالیسی کا اعلان جاری کیا۔ یہ اصول یا ہدایات حسب ذیل تھیں۔

نمبر1:محصول (زکوٰۃ) کی ممانعت
نمبر2:ہائی وے ڈکیتی اور چوری کے بارے میں ضوابط
نمبر3:فوت شدہ افراد کی جائیداد کی مفت وراثت
نمبر4:شراب اور ہر قسم کی نشہ آور شراب کی ممانعت
نمبر5:گھروں پر قبضہ کرنے اور مجرموں کی ناک اور کان کاٹنے کی ممانعت۔
نمبر6:غسبی کی ممانعت
نمبر7:ہسپتالوں کی تعمیر اور بیماروں کی حاضری کے لیے معالجین کی تقرری
نمبر8:جانوروں کے ذبح پر پابندی
نمبر9:اتوار کو ادا کی گئی عزت
نمبر10:مناصب اور جاگیروں کی عمومی تصدیق
نمبر11:آئمہ لینڈز کی تصدیق
نمبر12:تمام قیدیوں کے لیے عام معافی

یہ جہانگیر کے دور حکومت کا ایک اہم واقعہ تھا، اس کی نور جہاں سے شادی، جس نے اس کے دور حکومت کی تاریخ پر گہرا اثر چھوڑا۔ اس نے اسے نور محل (حرم کی روشنی) کا خطاب دیا جسے بعد میں نور جہاں بیگم (دنیا کی روشنی) میں تبدیل کر دیا گیا۔ ایک بار مہارانی کے طور پر متعارف ہونے کے بعد انتظامیہ پر اثر و رسوخ جاری رہا۔ وہ ایک بہادر اور ہوشیار خاتون تھیں اور 1611 سے 1627 کے عرصے میں جہانگیر پر زبردست اثر و رسوخ استعمال کرنے آئیں۔

اس کے کردار کے دو رخ۔

(A) اس کے کردار کا روشن پہلو۔

جہانگیر انتہائی ملنسار شخصیت کے مالک تھے۔ اس نے ہمیشہ اپنی والدہ اور اپنے خاندان کے دیگر بزرگوں کا بہت احترام کیا۔ اگرچہ اس نے اپنے باپ کے خلاف بغاوت کی لیکن اس نے اپنی حماقت پر بہت پشیمانی ظاہر کی۔ وہ اکبر کی یاد کو ہمیشہ یاد رکھتے تھے اور مرحوم کی روح کو خراج عقیدت پیش کرتے تھے۔

جہانگیر اعلیٰ تعلیم یافتہ آدمی تھا، اسے عربی، ہندی اور فارسی زبانوں کا کافی علم حاصل تھا۔ ان کی اپنی یادداشتوں کا نام تزک جہانگیری ان کی بہترین ترکیب کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ فنون لطیفہ جیسے موسیقی، فن تعمیر، مصوری اور دیگر میں ان کی بہت دلچسپی تھی۔

جہانگیر کو انصاف کا زبردست جذبہ تھا، جس کی وجہ سے وہ تمام لوگوں کو اس کے پاس شکایات لے کر آتے جو اس نے خود سنی۔ انصاف کے تمام متلاشیوں کے لیے اس کی رسائی ممکن بنانے کے لیے، اس نے شاہ برج اور آگرہ کے قلعے اور دریائے جمنا کے کنارے سڑک پر ایک چوکی کے درمیان گھنٹیوں کے ساتھ سونے کی زنجیریں لٹکا دیں۔ انصاف کی گھنٹی بجانا۔

(B) اس کے کردار کا تاریک پہلو۔

جہانگیر کے کردار میں بہت سی خوبیاں تھیں لیکن ان میں کچھ خامیاں بھی تھیں جو ان میں خوبیوں کو گرہن لگ گئیں۔ وہ ایک بدنام شرابی تھا لیکن دوسرے شرابیوں کو بہت سخت سزا دیتا تھا۔ اس نے شراب کی ایسی سخت عادت بنا لی تھی کہ شراب اسے نشہ کرنے میں ناکام رہی۔ اس طرح وہ زیادہ سے زیادہ لذت اور آسانیوں میں مگن ہوتا گیا، یہاں تک کہ وہ ریاست میں ایک بدنام شخصیت بن گیا، اور حقیقی اختیارات اس طرح نورجہاں کو حاصل ہوئے، اس نے کبھی نورجہاں کے کام میں مداخلت نہیں کی۔

ضرورت سے زیادہ شراب پینے کی وجہ سے جہانگیر کی طبیعت بالکل خراب ہو گئی تھی۔ وہ کشمیر اور کابل کا دورہ کر کے اسے بحال کرنے کی کوشش کر رہے تھے۔ کابل سے کشمیر جاتے ہوئے وہ شدید سردی کی وجہ سے لاہور واپس آیا اور اکتوبر 1627 میں راستے میں ہی غالباً مری اور ایبٹ آباد کے قرب و جوار میں انتقال کر گیا، ایک بیان کے مطابق ان کی میت کو لاہور لایا گیا اور بالآخر ان کی تدفین شاہدرہ لاہور کے قریب مقبرہ میں کی گئی۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram