Sir Aga Khan III (1877-1957)

In BIOGRAPHY
October 05, 2022
Sir Aga Khan III (1877-1957)

Sir Aga Khan III (1877-1957)

Sir Sultan Muhammad Shah, Aga Khan the Third was the leader of Shia Islamic Muslims. He was born in Karachi in 1877. Under the supervision of his mother, he got his religious and oriental education which was necessary for him to become a leader.

He also attended Eton and university. In 1885 at the age of eight, he succeeded his father as Imam of Shia Ismaili Muslim. He traveled to different areas of the world to receive homage from his followers. He was recognized for his public services by the German Emperor. He was a member of the Indian legislative assembly from 1902-1904. In 1904, he became the president of the All-Indian Muslim League. He suggested a separate electorate for Muslims during a meeting with Viceroy Lord Rippon. From 1906-1912 he became the President of the Muslim League. He tried to make fair relations between Hindus and Muslims.

In 1911 he raised 3 million rupees for the Aligarh Muslim University. In 1921 he was appointed as an administrator of Aligarh Muslim University. From 1928-29 he was president of the All Parties of Muslim Conference. From 1930-33 he was chairman of the British Indian delegation to the Round Table Conference. In 1934 he was a member of the council. He was the first Asian who was elected because of the president of League Nation in 1937. Queen Victoria made him a “Knight of the Indian Empire.” During his Imamat, he did significant development for the Ismaili community. He helped greatly in economic and social development in South Asia and in a geographic area. In The Ismaili community, they mark their Imams Jubilees as the symbolic declarations of ties that link the Ismaili Imam and his followers. The Jubliee doesn’t have any religious importance.

When Aga Khan the Third was 72 years old his community celebrated his Golden, Platinum, and jubilee to point out their affection. They weighed their Imam in gold and diamond and then use it for the event of the institutions in Asia and Africa. Many institutions were developed in India and later in Pakistan. jubilee schools were established for ladies in the Northern Areas of what’s now Pakistan. Scholarship programs were established during the time of the Golden Jubilee. Different social and economic welfare institutions were developed in geographical regions. Aga Khan the Third also introduced the organizations which regulate their own Ismaili affairs. In 1905, he regulated the first Ismaili constitutions for the social governance of the community in East Africa. Different rules were taken off in the constitution like marriage, divorce, inheritance, and mutual cooperation with other communities.

A number of books were written by him. Two of those were important namely “India in Transition” and “World Enough and Time”. He had 4 wives. First, he married on 2nd November 1896 in Poona, India along with his cousin Shahzadi Begum. His second marriage persisted in 1898, with Cleope Teresa Magliano who was a dancer. His third time married was on 7th December 1924 in France. His third wife didn’t accept Islam and he divorced her in 1943. His last marriage was persevered on 9th October 1944 in Switzerland, with Yvomme. She accepted Islam and her name changed and she was called Umm Habiba.

Aga Khan III died on 11th July 1957 and is buried in the Mausoleum of Aga Khan on the Nile in Aswan, Egypt.

سر آغا خان سوئم (1877-1957)

سر سلطان محمد شاہ، آغا خان سوئم شیعہ اسلامی مسلمانوں کے روحانی پیشوا تھے۔ وہ کراچی میں 1877 میں پیدا ہوئے۔ اپنی والدہ کی نگرانی میں انہوں نے اپنی مذہبی اور مشرقی تعلیم حاصل کی جو ان کے لیے روحانی پیشوا بننے کے لیے ضروری تھی۔ انہوں نے ایٹن اور کیمبرج یونیورسٹی میں بھی تعلیم حاصل کی۔ 1885 میں آٹھ سال کی عمر میں وہ اپنے والد کے بعد شیعہ اسماعیلی مسلم کے امام کے عہدے پر فائز ہوئے۔

اس نے اپنے پیروکاروں سے تعزیت حاصل کرنے کے لیے دنیا کے مختلف علاقوں کا سفر کیا۔ انہیں جرمن شہنشاہ کی جانب سے عوامی خدمات کے لیے تسلیم کیا گیا۔ وہ 1902-1904 تک ہندوستانی قانون ساز کونسل کے رکن رہے۔ 1904 میں آل انڈین مسلم لیگ کے صدر بنے۔ اس نے وائسرائے لارڈ رپن کے ساتھ ملاقات میں مسلمانوں کے لیے الگ انتخابی حلقہ تجویز کیا۔ 1906-1912 تک وہ مسلم لیگ کے صدر رہے۔ اس نے ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان منصفانہ تعلقات قائم کرنے کی کوشش کی۔

سنہ1911 میں انہوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے لیے 30 لاکھ روپے اکٹھے کیے تھے۔ 1921 میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے عہدے پر فائز ہوئے۔ 1928-29 تک وہ آل پارٹیز آف مسلم کانفرنس کے صدر رہے۔ 1930-33 تک وہ گول میز کانفرنس میں برطانوی ہندوستانی وفد کے چیئرمین رہے۔ 1934 میں وہ پریوی کونسل کے ممبر تھے۔ وہ پہلے ایشیائی تھے جنہیں 1937 میں لیگ نیشن کا صدر منتخب کیا گیا۔ ملکہ وکٹوریہ نے انہیں ‘نائٹ آف دی انڈین ایمپائر’ بنایا۔ اپنی امامت کے دوران انہوں نے اسماعیلی برادری کے لیے نمایاں ترقی کی۔ انہوں نے جنوبی ایشیا اور مشرقی افریقہ میں معاشی اور سماجی ترقی میں بہت مدد کی۔ اسماعیلی برادری میں وہ اپنے اماموں کی جوبلی کو علامتی طور پر ان تعلقات کے اعلان کے لیے نشان زد کرتے ہیں جو اسماعیلی امام اور ان کے پیروکاروں کو جوڑتے ہیں۔ جوبلی کی کوئی مذہبی اہمیت نہیں ہے۔

جب آغا خان سوئم کی عمر 72 سال تھی تو ان کی برادری نے اپنا پیار ظاہر کرنے کے لیے ان کی گولڈن، پلاٹینم اور ڈائمنڈ جوبلی منائی۔ انہوں نے اپنے امام کو ایشیا اور افریقہ کے اداروں کی ترقی کے لیے استعمال کرنے کے بجائے سونے اور ہیرے میں تولا۔ ہندوستان اور بعد میں پاکستان میں بہت سے ادارے بنائے گئے۔ اب پاکستان کے شمالی علاقوں میں لڑکیوں کے لیے ڈائمنڈ جوبلی اسکول قائم کیے گئے تھے۔ اسکالرشپ پروگرام گولڈن جوبلی کے دوران قائم کیا گیا تھا۔ مشرقی افریقہ میں مختلف سماجی اور اقتصادی فلاحی ادارے بنائے گئے۔ آغا خان تیسرے نے ان تنظیموں کو بھی متعارف کرایا جو اپنے اسماعیلی امور کو منظم کرتی ہیں۔ 1905 میں، اس نے مشرقی افریقہ میں کمیونٹی کی سماجی حکمرانی کے لیے پہلے اسماعیلی آئین کو منظم کیا۔ آئین میں مختلف قوانین وضع کیے گئے تھے جیسے شادی، طلاق، وراثت اور دیگر برادریوں کے ساتھ باہمی تعاون وغیرہ۔

ان کی طرف سے متعدد کتابیں لکھی گئیں۔ ان میں سے دو بہت اہم تھے یعنی ‘انڈیا ان ٹرانزیشن’ اور ‘دنیا کافی اور وقت’۔ اس کی 4 بیویاں تھیں۔ پہلی شادی 2 نومبر 1896 کو پونا میں ہندوستان میں اپنی کزن شہزادی بیگم سے ہوئی۔ اس کی دوسری شادی 1898 میں ہوئی تھی، کلیپ ٹریسا میگلیانو کے ساتھ جو ایک رقاصہ تھیں۔ تیسری شادی 7 دسمبر 1924 کو فرانس میں ہوئی۔ ان کی تیسری بیوی نے اسلام قبول نہیں کیا اور اس نے اسے 1943 میں طلاق دے دی۔ ان کی آخری شادی 9 اکتوبر 1944 کو سوئٹزرلینڈ میں یووومے کے ساتھ ہوئی۔ اس نے اسلام قبول کیا اور اس کا نام بدل کر ام حبیبہ رکھا گیا۔

آغا خان سوئم کا انتقال 11 جولائی 1957 کو ہوا اور وہ مصر کے اسوان میں دریائے نیل پر آغا خان کے مقبرے میں دفن ہیں۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram