Zaheeruddin Babar

In BIOGRAPHY
October 02, 2022
Zaheeruddin Babar

Zaheeruddin Babar

Zaheer ud din Muhammad Babur is understood as the founding father of the Mughal dynasty which ruled the Indian Empire for almost 100 and fifty years and won many laurels in various domains of life.

Zaheer_ud Din Muhammad Babur, surnamed “Babur” was born in 1483 to Omer Shaikh Mirza ( Fifth male descendant from Taimur ) and Kutlak Nigar Khanum ( in the 15th degree from Chingiz khan ) thus he was connected with both families of Taimur and Chingiz Khan, thus he had in him the blood of the 2 great conquerors of Central Asia, “the ferocity of the Mongol, and therefore the courage and capacity of the Turks.”

Two persons who molded his personality were his family teacher, Sheikh Majid, and his own grandmother, Ahsan Daulat Begum. He learned Turki, Persian, and poetry from his tutor and also the art of administration from his grandmother in his childhood. At the early age of 12, his father, Sultan Omer Sheikh Mirza died and Babur became king of Farghana. At the time of the accession, he was surrounded on all sides by his enemies. His uncles and cousins took advantage of his youth and inexperience and attacked him on right and left. With the assistance of his experienced and wise grandmother, Ahsan Daulat Khanum, he hurriedly went through his coronation ceremony and put his house so as.

Then he addressed himself to the task of saving his county from the foreign invaders. First of all, he sent a message to his paternal uncle, Ahmed Mirza, to place Farghana under Babur, but the offer was rejected and it led to war, which resulted in Ahmed Mirza‘s going back to Samarqand. Babur‘s maternal uncle Mahmud khan also got disheartened by the stiff resistance put up by the besieged at Akhsi and retired to his country. Farghana was thus saved.

The city of Samarqand was the capital of Amir Timur for a protracted time. The town was the heart of Central Asia, politically, commercially, and especially culturally. There was a good yearning in Babur’s heart to sit down on his ancestor’s throne in his capital. When his paternal uncle Ahmed Mirza, died in July 1494, a war broke out among his sons. during this war, Babur found a chance of conquering Samarqand, but his attempt failed. Next year, he made a second attempt, which was successful. He sat on his ancestor’s throne and his life’s ambition was realized. But he was forced to abandon his capital after 100 days of rule. He felt ill in Samarqand and also the news of his illness reached Farghana where a rebellion broke out against him. When he recovered, he proceeded towards Farghana to suppress the rebellion, but he was disappointed to seek out that Andijan, his capital, had already passed into the hands of the rebels. He then returned to Samarqand but was disappointed to seek out that city also had been captured by his enemies.

Babur’s Wanderings

Babur, wandered for 2 years because he had no territory except a small hilly distract of Khokand. the number of his followers had reduced to the purpose that he had to show his reins from Hissar to seek the hospitality of Sultan Ahmed, the good Khan of the Mongols. On his way, he decided to require an opportunity at Samarqand where great discontent prevailed against the Uzbek conqueror. One dark night his supporters managed to smuggle him and his followers into Samarqand. He was hailed by the people that rose up in arms against the Uzbeks. It resulted in the defeat of the Shaibani Khan. Babur’s joy knew no bounds. He celebrated his success by marrying one daughter of every one of his two uncles who had ruled at Samarqand.

Burning with revenge, Shaibani Khan reorganized his forces for a final showdown. Babur abstracted Samarqand in 1501. A well-contested battle was fought at Saripul, within which Babur was discomfited. Samarqand was so vigorously besieged that the inhabitants of the town began to starve. Losing all hopes of saving the town, Babur sued for peace and surrendered the town of Samarqand. In 1503, Babur and his maternal uncles made a second bid to overcome Farghana but weren’t succeeded.

The first battle of Panipat (1526)

Babur so as to set out for the conquest of India, first of all, he had to cater to Daulat Khan who had clad Ala-ud-Din from Lahore. After defeating him, Babur advanced to Delhi. Ibrahim Lodhi came out of Delhi to present the battle to Babur. The opposing armies met on the historic plains of Pani Pat. Babur had certain advantages, he sent out 4 to five thousand of his men to create a mighty attack on the Afghan camp which failed in its object. When the Afghan army came near Babur and noticed Babur’s front defense, they hesitated and thus lost the advantage of shock charges. Babur took the advantage of the enemy’s hesitation and directed his men to require up the offensive. Thus the superior generalship and strategy of Babur won the day. Ibrahim Lodhi was killed fighting bravely.

Battle of Kanwaha

The victory of Panipat failed to make Babur the ruler of India. He met a powerful foe in Rana Sanga of Mewar, who had a desire to occupy the throne of Delhi himself. Such a formidable foe had to be disposed of if Babur was to possess an unchallengeable position. In 1527, Rana Sanga advanced with a large army, and Babur also advanced to Fateh Pur Sikri. the advance guard of Babur was defeated by the Rajputs. His followers got dishearted. At this point, Babur demonstrated his qualities of leadership. He decided to capitalize on the religious fervor of his army and ordered the breaking of the cups of wine. He repented of his past sins and promised to convey wine for the remainder of his life. The appeal and motivation had the specified effect. He started the attack with heavy fire. after an obstinate battle, the Rajputs were defeated.

Death of Babur, 1530

The circumstances resulting in the death of Babur in December 1530, were specified when his son Humayun, fell sick and it had been declared that there was no possibility of his survival. It absolutely was at this point that Babur is claimed to possess walked thrice around the bed of Humayun and prayed to God to transfer the illness of his son to him. It’s stated that from that point onward Humayun began to recover and the condition of Babur went from bad to worse and ultimately he breathed his last. At the time of his death, Babur was hardly 48 years old.

ظہیرالدین بابر

ظہیر الدین محمد بابر کو مغل خاندان کے بانی کے طور پر جانا جاتا ہے جس نے تقریباً ایک سو پچاس سال تک ہندوستانی سلطنت پر حکومت کی اور زندگی کے مختلف شعبوں میں بہت سے اعزازات حاصل کیے۔ ظہیر_الدین محمد بابر، کنیت ‘بابر’ 1483 میں عمر شیخ مرزا (تیمور کی نسل میں پانچویں) اور کٹلک نگار خانم (چنگیز خان سے 15 ویں درجے میں) کے ہاں پیدا ہوئے اس طرح وہ تیمور اور چنگیز خان کے دونوں خاندانوں سے جڑے ہوئے تھے۔ اس طرح اس کے اندر وسطی ایشیا کے دو عظیم فاتحوں کا خون تھا، ’’منگولوں کی وحشت، اور ترکوں کی ہمت اور صلاحیت۔‘‘

ان کی شخصیت کو ڈھالنے والے دو افراد تھے، ان کے خاندانی استاد شیخ ماجد اور ان کی اپنی نانی، احسن دولت بیگم۔ انہوں نے اپنے ٹیوٹر سے ترکی، فارسی اور شاعری اور نظم و نسق کا فن بچپن میں اپنی دادی سے سیکھا۔

بارہ سال کی ابتدائی عمر میں، ان کے والد، سلطان عمر شیخ مرزا کا انتقال ہو گیا اور بابر فرغانہ کا بادشاہ بنا۔ الحاق کے وقت وہ چاروں طرف سے دشمنوں میں گھرے ہوئے تھے۔ اس کے چچا اور کزن نے اس کی جوانی اور ناتجربہ کاری کا فائدہ اٹھایا اور اس پر دائیں بائیں حملہ کیا۔ اپنی تجربہ کار اور عقلمند دادی، احسن دولت خانم کی مدد سے، اس نے جلدی جلدی اپنی تاجپوشی کی تقریب سے گزر کر اپنے گھر کو ترتیب دیا۔ پھر اس نے اپنے ملک کو غیر ملکی حملہ آوروں سے بچانے کے لیے خود کو مخاطب کیا۔ سب سے پہلے اس نے فرغانہ کو بابر کے ماتحت کرنے کے لیے اپنے چچا احمد مرزا کو پیغام بھیجا، لیکن اس پیشکش کو ٹھکرا دیا گیا اور یہ جنگ کا باعث بنی، جس کے نتیجے میں احمد مرزا سمرقند کی طرف پسپائی اختیار کر گیا۔ بابر کے ماموں محمود خان بھی اکی سی میں محصورین کی طرف سے کی جانے والی سخت مزاحمت سے مایوس ہو گئے اور اپنے ملک کو ریٹائر ہو گئے۔ فرغانہ اس طرح بچ گئی۔

سمرقند شہر ایک طویل عرصے تک امیر تیمور کا دارالحکومت رہا۔ یہ قصبہ سیاسی، تجارتی اور سب سے بڑھ کر ثقافتی لحاظ سے وسطی ایشیا کا دل تھا۔ بابر کے دل میں اپنی راجدھانی میں اپنے آباؤ اجداد کے تخت پر بیٹھنے کی شدید تڑپ تھی۔ جب جولائی 1494 میں اس کے چچا احمد مرزا کا انتقال ہوا اور ان کے بیٹوں میں خانہ جنگی شروع ہوگئی۔ اس خانہ جنگی میں بابر کو سمرقند کو فتح کرنے کا موقع ملا لیکن اس کی کوشش ناکام ہوگئی۔ اگلے سال اس نے دوسری کوشش کی جو کامیاب رہی۔ وہ اپنے آباؤ اجداد کے تخت پر بیٹھا اور اس کی زندگی کی خواہش پوری ہوگئی۔ لیکن وہ سو دن کی حکمرانی کے بعد اپنا سرمایہ چھوڑنے پر مجبور ہو گیا۔ وہ سمرقند میں بیمار محسوس ہوا اور اس کی بیماری کی خبر فرغانہ تک پہنچی جہاں اس کے خلاف بغاوت ہو گئی۔ جب وہ صحت یاب ہوا، تو وہ بغاوت کو دبانے کے لیے فرغانہ کی طرف بڑھا، لیکن اسے یہ جان کر مایوسی ہوئی کہ اندیجان، اس کا دارالحکومت، پہلے ہی باغیوں کے قبضے میں جاچکا ہے۔ اس کے بعد وہ سمرقند واپس آیا لیکن یہ دیکھ کر مایوس ہوا کہ اس شہر پر بھی اس کے دشمنوں نے قبضہ کر لیا ہے۔

بابر کی آوارہ گردی

بابر، دو سال تک گھومتا رہا کیونکہ اس کے پاس کھوکنڈ کے ایک چھوٹے سے پہاڑی علاقے کے علاوہ کوئی علاقہ نہیں تھا۔ اس کے پیروکاروں کی تعداد اس حد تک کم ہو گئی تھی کہ اسے منگولوں کے عظیم خان سلطان احمد کی مہمان نوازی کے لیے حصار سے اپنی لگام موڑنی پڑی۔ راستے میں اس نے سمرقند میں موقع لینے کا فیصلہ کیا جہاں ازبک فاتح کے خلاف شدید ناراضگی پائی جاتی تھی۔ ایک تاریک رات اس کے حامی اسے اور اس کے پیروکاروں کو سمرقند میں سمگل کرنے میں کامیاب ہوگئے۔ ازبکوں کے خلاف ہتھیار اٹھانے والے لوگوں نے ان کی پذیرائی کی۔ اس کے نتیجے میں شیبانی خان کی شکست ہوئی۔ بابر کی خوشی کی انتہا نہ رہی۔ اس نے اپنی کامیابی کا جشن اپنے دو چچاوں میں سے ہر ایک کی ایک بیٹی سے شادی کر کے منایا جنہوں نے سمرقند پر حکومت کی تھی۔

انتقام کی آگ میں جلتے ہوئے، شیبانی خان نے اپنی افواج کو ایک آخری مقابلے کے لیے دوبارہ منظم کیا۔ بابر 1501 میں سمرقند سے باہر چلا گیا۔ ساری پل پر ایک اچھی معرکہ آرائی ہوئی، جس میں بابر کو تکلیف ہوئی۔ سمرقند کا اس قدر سخت محاصرہ کیا گیا کہ بستی کے باشندے بھوک سے مرنے لگے۔ قصبے کو بچانے کی تمام امیدیں کھوتے ہوئے، بابر نے امن کے لیے مقدمہ کیا اور سمرقند شہر کو ہتھیار ڈال دیا۔ 1503 میں، بابر اور اس کے ماموں نے فرغانہ کو فتح کرنے کی دوسری کوشش کی لیکن کامیاب نہیں ہوئے۔

پانی پت کی پہلی جنگ (1526)

بابر کو ہندوستان کی فتح کے لیے نکلنے کے لیے، سب سے پہلے اسے دولت خان سے نپٹنا پڑا جو لاہور سے علاؤالدین نکلا تھا۔ اسے شکست دینے کے بعد بابر نے دہلی کی طرف پیش قدمی کی۔ ابراہیم لودھی بابر کو جنگ دینے دہلی سے نکلے۔ پانی پت کے تاریخی میدانوں پر مخالف فوجیں آمنے سامنے ہوئیں۔ بابر کے کچھ فوائد تھے، اس نے اپنے 4 سے 5 ہزار آدمیوں کو افغان کیمپ پر زبردست حملہ کرنے کے لیے بھیجا جو اپنے مقصد میں ناکام رہا۔ جب افغان فوج بابر کے قریب آئی اور بابر کے فرنٹ لائن ڈیفنس کو دیکھا تو وہ ہچکچاہٹ کا شکار ہوئے اور اس طرح ایک جھٹکا لگانے کا فائدہ کھو دیا۔ بابر نے دشمن کی ہچکچاہٹ کا فائدہ اٹھایا اور اپنے جوانوں کو حملہ کرنے کی ہدایت کی۔ اس طرح بابر کے اعلیٰ جنرل جہاز اور حکمت عملی نے دن جیت لیا۔ ابراہیم لودھی بہادری سے لڑتے ہوئے مارے گئے۔

کنواہا کی جنگ

پانی پت کی فتح نے بابر کو ہندوستان کا حکمران نہیں بنایا۔ میواڑ کے رانا سانگا میں اس کی ملاقات ایک مضبوط دشمن سے ہوئی، جو خود دہلی کے تخت پر قبضہ کرنے کی خواہش رکھتا تھا۔ اگر بابر کو ایک ناقابل چیلنج مقام حاصل کرنا تھا تو اس طرح کے مضبوط دشمن کو ختم کرنا تھا۔ 1527 میں رانا سانگا نے ایک بڑی فوج کے ساتھ پیش قدمی کی، بابر نے بھی فتح پور سیکری کی طرف پیش قدمی کی۔ بابر کے پیشگی محافظ کو راجپوتوں نے شکست دی۔ اس کے پیروکار مایوس ہو گئے۔ اس وقت بابر نے اپنی قیادت کی خوبیوں کا مظاہرہ کیا۔ اس نے اپنی فوج کے مذہبی جذبے سے فائدہ اٹھانے کا فیصلہ کیا اور شراب کے پیالوں کو توڑنے کا حکم دیا۔ اس نے اپنے پچھلے گناہوں سے توبہ کی اور زندگی بھر شراب چھوڑنے کا وعدہ کیا۔ اپیل اور حوصلہ افزائی کا مطلوبہ اثر ہوا۔ اس نے بھاری توپ خانے سے حملہ شروع کیا۔ ایک جنگ کے بعد راجپوتوں کو شکست ہوئی۔

بابر کی وفات، 1530

دسمبر 1530 میں بابر کی موت کے حالات ایسے تھے کہ جب اس کا بیٹا ہمایوں بیمار پڑ گیا اور یہ اعلان کیا گیا کہ اس کے زندہ رہنے کا کوئی امکان نہیں ہے۔ یہی وہ وقت تھا جب بابر نے ہمایوں کے بستر پر تین بار چکر لگایا اور خدا سے دعا کی کہ وہ اس کے بیٹے کی بیماری اسے منتقل کرے۔ کہا جاتا ہے کہ اس وقت سے ہمایوں کی طبیعت سنبھلنے لگی اور بابر کی حالت بد سے بدتر ہوتی چلی گئی اور بالآخر اس نے آخری سانس لی۔ اپنی موت کے وقت بابر کی عمر بمشکل 48 سال تھی۔

/ Published posts: 1277

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram