کراچی میں خواتین کے لیے کوئی محفوظ جگہ نہیں کیونکہ دن دیہاڑے جنسی زیادتی کا ایک اور واقعہ پیش آیا

کراچی میں خواتین کے لیے کوئی محفوظ جگہ نہیں کیونکہ دن دیہاڑے جنسی زیادتی کا ایک اور واقعہ پیش آیا

کراچی میں خواتین کے لیے کوئی محفوظ جگہ نہیں کیونکہ دن دیہاڑے جنسی زیادتی کا ایک اور واقعہ پیش آیا

 

 

کراچی – ملک کے سب سے بڑے شہر میں مجرموں کے خلاف کوئی سنجیدہ کارروائی کیے بغیر جنسی زیادتی اور ہراساں کرنے کے واقعات میں اضافہ ہو رہا ہے اور بندرگاہی شہر میں یکم اگست کو ایک اور شرمناک واقعہ پیش آیا۔

چونکہ عصمت دری اور چھیڑ چھاڑ جیسے جرائم زیادہ تر رپورٹ نہیں ہوتے ہیں، ایسا ہی ایک پریشان کن واقعہ سرویلنس کیمروں میں قید ہوا ہے۔ انٹرنیٹ پر گردش کرنے والے کلپس میں دکھایا گیا ہے کہ کراچی میں اس طرح کے تیسرے واقعے میں ایک متاثرہ کو جنسی طور پر ہراساں کیا گیا۔

خاتون، تمام پردے میں ڈھکی ہوئی تھی، فیڈرل بی ایریا بلاک 17 کی ایک گلی سے گزرتے ہوئے موٹر سائیکل سوار نے اسے پکڑ لیا۔

سی سی ٹی وی فوٹیج پر لگے ٹائم اسٹیمپ سے پتہ چلتا ہے کہ واقعہ صبح 11 بجے کے قریب پیش آیا جبکہ فوٹیج میں مجرم کا چہرہ واضح طور پر قید تھا۔

متاثرہ شخص کو مدد کے لیے پکارتے دیکھا جا سکتا ہے لیکن مجرم فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا۔

اس واقعے نے سوشل میڈیا پر غم و غصے کا اظہار کیا، پولیس کو اس شخص کی تلاش شروع کرنے پر مجبور کیا جو واضح طور پر عورت کو ہراساں کرتے ہوئے دیکھا گیا تھا۔

یہ بندرگاہی شہر میں اس نوعیت کا تیسرا واقعہ ہے کیونکہ اس سے قبل دو واقعات کراچی کے گلستان جوہر اور اورنگی ٹاؤن میں پیش آئے تھے۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram