احد کے شہداء

In اسلام
March 08, 2023
احد کے شہداء

احد کے شہداء

احد پہاڑ کے دامن میں مذکورہ بالا دیوار کے بیچ میں حمزہ رضی اللہ عنہ، عبداللہ بن جشت رضی اللہ عنہ اور مصعب بن عمیر رضی اللہ عنہ کی قبریں ہیں جو تمام جنگ میں شہید ہوئے تھے۔ احد کے باقی شہداء اسی دیوار کے پیچھے مدفون ہیں۔

حمزہ بن عبدالمطلب رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا شمار عربوں کے بہترین شکاریوں اور عظیم جنگجوؤں میں ہوتا تھا۔ جنگ بدر میں حمزہ بن عبدالمطلب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے بہت سے قریشی سرداروں کو قتل کر دیا تھا اور ان کی صفوں میں سے اس طرح راستہ کاٹ لیا تھا جیسے ایک زبردست لہر سب کو فنا کر رہی ہو۔ قریشی رئیسوں میں سے ایک کے پاس حبشہ (موجودہ ایتھوپیا) سے تعلق رکھنے والا وحشی نام کا ایک سیاہ فام غلام تھا جو برچھی کو بڑی مہارت سے استعمال کر سکتا تھا۔ ابو سفیان کی بیوی ہند نے وحشی کی آزادی کا وعدہ کیا اور اس کے آقا جبیر بن مطعم نے بھی اس سے وہی وعدہ کیا جس طرح حمزہ رضی اللہ عنہ نے بدر میں اپنے چچا کو قتل کیا تھا۔ وحشی جنگجوؤں کے درمیان گھومتا رہا یہاں تک کہ اس نے حمزہ رضی اللہ عنہ کو دیکھا۔ وہ کہتا ہے، ‘میں نے اپنا نیزہ تھاما اور اسے اچھی طرح سے متوازن کیا، پھر میں نے اسے نشانہ بنایا۔ یہ اس کے پیٹ میں داخل ہوا اور دوسری طرف سے باہر نکل گیا۔ میں انتظار کرتا رہا یہاں تک کہ وہ (حمزہ بن عبدالمطلب رضی اللہ تعالیٰ عنہ)مر گیا، پھر میں نے اپنا نیزہ لیا اور کیمپ میں انتظار کرنے چلا گیا۔ میرا کسی سے کوئی جھگڑا نہیں تھا۔ میں نے اسے صرف آزاد کرنے کے لیے مارا ہے۔‘‘ وحشی بعد میں زندگی میں مسلمان ہو گیا اور مسیلمہ کو قتل کر دیا، جس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد نبوت کا دعویٰ کیا تھا۔

جب جنگ کا رخ قریش کی طرف ہوا تو قریش کی خواتین ہند کی قیادت میں جن کے بھائی، چچا اور عزیز بدر میں مارے گئے تھے، نے مسلمانوں کے مرنے والوں کو مسخ کرنا شروع کردیا۔ اس نے خاص طور پر حمزہ رضی اللہ عنہ کے جسم پر اپنا غصہ نکالا، ان کی ناک اور کان کاٹ ڈالے، ان کے سینے میں چیرا بنایا، ان کا جگر نکالا، اسے چبا کر کھایا لیکن اسے نگلنے کی طاقت نہ تھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے پیارے چچا کی میت پر تشریف لائے تو بہت غمگین ہوئے۔ برسوں بعد جب مکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیلیے کھول دیا گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے تمام باشندوں بشمول ہند کو معافی دے دی۔ اس کے بعد ہند نے اسلام قبول کیا۔

مصعب رضی اللہ عنہ نے اسلام کا پرچم تھام رکھا تھا۔ جب مسلمان شکست سے دوچار ہو رہے تھے تو وہ جھنڈا تھامے چٹان کی طرح اپنی چوکی پر کھڑے ہو گئے۔ ایک دشمن آیا اور تلوار سے ان کا ہاتھ کاٹ دیا تاکہ جھنڈا گر جائے اور شکست ہو جائے۔ مصعب رضی اللہ عنہ نے فوراً جھنڈا دوسرے ہاتھ میں لے لیا۔ پھر دشمن نے دوسرا ہاتھ بھی کاٹ دیا۔ مصعب رضی اللہ عنہ نے اپنے خون بہہ رہے بازوؤں کی مدد سے جھنڈے کو اپنے سینے سے تھام لیا۔ دشمن نے آخر کار تیر سےمصعب رضی اللہ عنہ کے جسم میں سوراخ کر دیا۔ مصعب رضی اللہ عنہ شہید ہو گئے اور مصعب رضی اللہ عنہ کے ساتھ وہ جھنڈا گرا جسے انہوں نے جیتے جی گرنے نہیں دیا تھا۔ ایک اور مسلمان نے دوڑ کر جھنڈا سنبھال لیا۔ تدفین کے وقت ان کے پاس اپنے جسم کو ڈھانپنے کے لیے صرف ایک چادر تھی۔ یہ چادر ان کے سائز کے لیے بہت چھوٹی تھی۔ جب سر ڈھانپنے کے لیے کھینچا جاتا تو پاؤں کھل جاتے اور جب پاؤں ڈھانپنے کے لیے کھینچتے تو سر بے نقاب ہو جاتا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کے سر کو چادر سے ڈھانپ دو اور اس کے پاؤں کو ازخر کے پتوں سے ڈھانپ دو۔

تقریباً پینسٹھ انصار اور چار مہاجرین نے شہادت کی سعادت حاصل کی، جب کہ مشرکین میں سے بائیس ہلاکتیں ہوئیں۔ یہودی اپنی محفوظ رہائش گاہوں میں جنگ کے نتائج کا انتظار کرتے رہے۔ مخیرق، یہودیوں میں سے ایک شخص نے اپنی قوم سے کہا کہ وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی حمایت کریں۔ ‘ہم ان کے لیے ہفتہ کے دن نہیں لڑ سکتے،’ انہوں نے جواب دیا۔ اس نے کہا کہ یہ نبی اور کفار کے درمیان لڑائی ہے اس لیے ہفتہ اس میں رکاوٹ نہیں بن سکتا۔ اس نے اپنی تلوار اٹھائی اور اعلان کیا کہ اگر وہ مارا جائے تو اس کی تمام جائیداد محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو دے دی جائے اور کوئی اس کے خلاف نہ جائے۔ وہ جنگ میں شامل ہوا اور مارا گیا۔ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس کا علم ہوا تو آپ نے فرمایا: وہ یہودیوں میں سب سے بہتر تھا۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے شہداء کو اس حالت میں دفن کرنے کا حکم دیا کہ وہ گرے ہوئے تھے۔ دو تین شہیدوں کو ایک ہی قبر میں دفن کیا گیا۔ بعض صورتوں میں، آپ نے اپنے ساتھیوں کو شہداء کو جوڑے میں کفن دینے کی ہدایت کی۔ جس شہید نے قرآن زیادہ سیکھا تھا اسے پہلے قبر میں اتارا گیا۔ اللہ کی راہ میں ان کی قربانیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میں قیامت کے دن ان کا گواہ رہوں گا۔

جب وہ اپنے شہید بھائیوں کی لاشیں نکال رہے تھے تو لوگ حنظلہ بن ابو عامر رضی اللہ عنہ کے جسد خاکی کے اوپر سے پانی ٹپکتے ہوئے دیکھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے آدمیوں کو سمجھایا کہ فرشتے اسے غسل دے رہے ہیں۔ بظاہر، نئی شادی شدہ حنظلہ رضی اللہ عنہ نے ابھی اپنی شادی کی تھی جب جہاد کی دعوت دی گئی۔ نہانے کیلیے بھی رکے بغیر وہ اپنی دلہن کو چھوڑ کر میدان جنگ میں چلے گئے۔ حنظلہ رضی اللہ عنہ نے بہادری سے جنگ کی اور شہید ہو گئے، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیان کیا کہ فرشتے اس کے جسم کو پاک کرنے کے لیے اسے غسل دے رہے تھے۔ حنظلہ رضی اللہ عنہ کو ہمیشہ کے لیے ‘غسیل الملائکہ’ (جسے فرشتوں نے غسل دیا ہے) کے نام سے یاد کیا گیا۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم شہدائے احد کی قبروں کی زیارت کیا کرتے تھے اس لیے ان کی بھی زیارت کرنا سنت ہے۔ تاہم اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ کسی بدعتی یا غیر مسلم عمل میں شامل نہ ہوں جیسے شہداء کے لیے دعا کرنا، خطوط یا رقم قبرستان میں پھینکنا، دھاگے باندھنا یا طواف کرنا۔

حوالہ جات: تاریخ مدینہ منورہ – ڈاکٹر محمد الیاس عبدالغنی، فضیلۃ عامل – شیخ محمد زکریا کاندھلوی، تاریخ اسلام – اکبر شاہ نجیب آبادی، محمد کی زندگی – طہیہ الاسماعیل

/ Published posts: 3238

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram