کیپٹن محمد سرور شہید نشانِ حیدر کی 75ویں برسی

کیپٹن محمد سرور شہید نشانِ حیدر کی 75ویں برسی

پاک فوج کا پہلا نشان حیدر حاصل کرنے والے کیپٹن سرور کو یوم شہادت پر خراج عقیدت

 

 

اسلام آباد – پاکستان کے پہلے اعلیٰ ترین فوجی اعزاز نشان حیدر حاصل کرنے والے کیپٹن سرور شہید کو آج جمعرات کو یوم شہادت پر یاد کیا جا رہا ہے۔

فوج کے میڈیا ونگ نے کہا کہ مسلح افواج، چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی اور سروسز چیفس نے کیپٹن محمد سرور شہید کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا۔

ایک بیان میں، انٹر سروسز پبلک ریلیشنز نے کہا کہ ان کی بے مثال بہادری، غیر متزلزل عزم اور استقامت کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔ آئیے ہم ان ہیروز کو یاد رکھیں جنہوں نے مادر وطن کے دفاع میں اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ فوج نے کہا کہ قوم کو اپنے بہادر بیٹوں پر فخر ہے۔

کیپٹن محمد سرور کو ملک کی تاریخ میں پہلی بار پاکستان کے اعلیٰ ترین فوجی اعزاز سے نوازا جانے کا اعزاز حاصل ہے، جس کی وجہ انہوں نے کشمیر کی جنگ کے دوران غیر معمولی بہادری کا مظاہرہ کیا۔

راجہ محمد سرور 10 نومبر 1910 کو ضلع گوجر خان کے گاؤں سنگھوری میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد راجہ محمد حیات خان نے برطانوی فوج میں بطور کانسٹیبل خدمات انجام دیں۔ برطانوی حکومت نے راجہ حیات خان کو پہلی جنگ عظیم کے دوران ان کی خدمات کی وجہ سے سمندری کے قریب جائیداد بھی تحفے میں دی تھی۔

سرور نے اپریل 1929 میں ایک سپاہی کے طور پر فوج میں شمولیت اختیار کی اور 1944 میں پنجاب رجمنٹ میں کمیشن حاصل کیا اور سیکنڈ لیفٹیننٹ کے عہدے پر ترقی پائی۔

سال 1946 میں انہوں نے پنجاب رجمنٹ میں شمولیت اختیار کی اور تقسیم سے چند ماہ قبل کیپٹن کا عہدہ حاصل کیا۔ بعد میں، کیپٹن نے کشمیر کو دوبارہ حاصل کرنے کے لیے بنائی گئی بٹالین کا حصہ بننے کے لیے رضاکارانہ خدمات انجام دیں۔ انہیں پنجاب رجمنٹ کی دوسری بٹالین کا کمپنی کمانڈر بنایا گیا۔

رجمنٹ ان کی قیادت میں ہندوستان کو جی بی کے بعض علاقوں سے پیچھے ہٹنے پر مجبور کرنے میں کامیاب رہی۔ اس کی بٹالین کو اوڑی سیکٹر میں شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا لیکن شدید گولی باری، گرینیڈ حملوں اور مارٹر فائر کا مقابلہ کرتے ہوئے آگے بڑھتے رہے۔ انہوں نے 27 جولائی 1948 کو اپنے سینے پر متعدد گولیاں لگنے کے بعد شہادت کو گلے لگایا جب انہوں نے آگے بڑھنے کی کوشش کرتے ہوئے خاردار تار کاٹنے کی کوشش کی۔

/ Published posts: 3238

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram