Al-Behruni

In BIOGRAPHY
October 01, 2022
Al-Behruni

Al-Behruni

Al-Behruni was born in September 5, 973 in Khwarezm. His first twenty-five years were spent in Khwarezm where he studied fiqh, theology, grammar, mathematics, astronomy, medics, and other sciences. The end of the 10th century was the age of social unrest in the Islamic World.

Thus in 995, he left for Bukhara, and in 998, he visited the court of the Ziyarid amir of Tabaristan, where he wrote his first important work, al-Athar al-Baqqiya ‘an al-Qorun al-Khaliyya on historical and scientific chronology. In 1017, Al-Biruni was taken to Ghazna, by Mahmud Ghaznavi. Biruni was made court astrology. After the Indian invasion; he was sent to India, for some years. Where Biruni became conversant in all things associated with India, even Sanskrit. During this time he wrote the Kitab Tarikh al-Hind, around 1030.

Al-Biruni was one of the best scholars of the medieval Islamic era and who contributed to physics, mathematics, astronomy, Geography, Pharmacology, Mineralogy, History, Chronology, Religion, and beliefs. He was responsive to different languages (Persian, Arabic, Sanskrit, Greek, Hebrew, Syriac, and Berber).

He recorded observations of his travels to India in his book Kitab al-Hind which supplies an account of the historical and social conditions of the sub-continent. He translated two Sanskrit books into Arabic. He regarded the Indus valley as, an ancient sea basin. On his return from India, al-Biruni wrote his famous book Qanun-i Masoodi, during which he discussed several theorems of astronomy, trigonometry, solar, lunar, and planetary motions, and relative topics. His other book al-Athar al-Baqia, was an account of the ancient history of states, with Geography.

During this book, he also discussed the rotation of the world and has given correct values of latitudes and longitudes of various places. He also wrote the Kitab-al-Saidana, about medica. His book the Kitab-al-Jamahir deals with the properties of assorted precious stones. Al-Biruni discussed; centuries before the rest of the world, that the earth rotates around its axis. His book al-Tafhim-li-Awail Sina’at al-Tanjim gives a summary of mathematics and astronomy.

He was the first to undertake experiments associated with astronomical phenomena, which laid down the first foundation of contemporary science and astronomy. He explained the working of normal springs and artesian wells by the hydrostatic principle of communicating vessels. He observed that flowers have 3,4,5,6, or 18 petals, but never 7 or 9. His important work was the tactic of determining the radius and circumference of the world. Al-Biruni wrote about 2 hundred books and made some instruments for astronomy. The illustrating method proposed and utilized by Al-Biruni to estimate the radius and circumference of the planet laid the muse of recent astronomy and has become the bottom of astronomy.

Al-Biruni was a pioneer in the study of comparative religion. He studied Zoroastrianism, Judaism, Hinduism, Christianity, Buddhism, Islam, and other religions. In “Tarikh Al-Hind” he explored every aspect of Indian life, including religion, history, geography, geology, science, and mathematics. He has been considered jointly of the very greatest scientists of Islam. His critical spirit, love of truth, and scientific approach were combined with a way of toleration. He died in 1048 A.D. at the age of 75, after having spent 40 years in thus gathering knowledge and making his own original contributions to that.

البیرونی

البیرونی 5 ستمبر 973 کو خوارزم میں پیدا ہوئے۔ ان کے ابتدائی پچیس سال خوارزم میں گزرے جہاں انہوں نے فقہ، علم الٰہیات، گرامر، ریاضی، فلکیات، طب اور دیگر علوم کی تعلیم حاصل کی۔ 10ویں صدی کا اختتام اسلامی دنیا میں سماجی بے چینی کا دور تھا۔ چنانچہ 995ء میں وہ بخارا کے لیے روانہ ہوئے اور 998ء میں طبرستان کے امیر زیارد کے دربار میں گئے جہاں انہوں نے اپنی پہلی اہم تصنیف ’’الاطہر البقیع عن القرون الخیالیہ‘‘ تحریر کی۔

تاریخ 1017 میں، البیرونی کو محمود غزنوی نے غزنہ لے جایا۔ بیرونی کو درباری نجومی بنا دیا گیا۔ بھارتی حملے کے بعد؛ اسے چند سال کے لیے ہندوستان بھیج دیا گیا۔ جہاں برونی ہندوستان سے متعلق تمام چیزوں سے واقف ہو گئے، یہاں تک کہ سنسکرت سے بھی۔ اس دوران اس نے 1030 کے قریب کتاب تاریخ الہند لکھی۔ البیرونی قرون وسطیٰ کے اسلامی دور کے عظیم ترین اسکالرز میں سے ایک تھے اور جنہوں نے فزکس، ریاضی اور فلکیات، جغرافیہ، فارماکولوجی، معدنیات، تاریخ، تاریخ، تاریخ، مذہب اور نظریات میں اپنا حصہ ڈالا۔ وہ مختلف زبانوں (فارسی، عربی، سنسکرت، یونانی، عبرانی، سریانی اور بربر) سے واقف تھے۔

انہوں نے اپنی کتاب کتاب الہند میں ہندوستان کے اپنے سفر کے مشاہدات درج کیے ہیں جس میں برصغیر کے تاریخی اور سماجی حالات کا بیان ہے۔ اس نے سنسکرت کی دو کتابوں کا عربی میں ترجمہ کیا۔ وہ وادی سندھ کو ایک قدیم سمندری طاس سمجھتا تھا۔ ہندوستان سے واپسی پر البیرونی نے اپنی مشہور کتاب قانون مسعودی لکھی، جس میں اس نے فلکیات، مثلثیات، شمسی، قمری، اور سیاروں کی حرکات اور متعلقہ موضوعات کے کئی نظریات پر بحث کی۔ ان کی دوسری کتاب الاطہر البقیہ، جغرافیہ کے ساتھ قوموں کی قدیم تاریخ کا بیان تھا۔ اس کتاب میں اس نے زمین کی گردش پر بھی بحث کی ہے اور مختلف مقامات کے عرض بلد اور طول بلد کی صحیح قدریں بتائی ہیں۔ اس نے میڈیکا کے بارے میں کتاب السیدانہ بھی لکھی۔ ان کی کتاب کتاب الجماہر مختلف قیمتی پتھروں کی خصوصیات سے متعلق ہے۔ البیرونی نے بحث کی۔ باقی دنیا سے صدیوں پہلے، کہ زمین اپنے محور کے گرد گھومتی ہے یا۔ ان کی کتاب التفہیم لی اوائل سینا التنجیم میں ریاضی اور فلکیات کا خلاصہ ملتا ہے۔

وہ پہلا شخص تھا جس نے فلکیاتی مظاہر سے متعلق تجربات کیے، جنہوں نے جدید سائنس اور فلکیات کی ابتدائی بنیاد ڈالی۔ انہوں نے عام چشموں اور آرٹیشین کنوؤں کے کام کرنے کی وضاحت کی جو جہازوں کے رابطے کے ہائیڈرو سٹیٹک اصول کے ذریعہ ہے۔ اس نے دیکھا کہ پھولوں میں 3،4،5،6، یا 18 پنکھڑیاں ہوتی ہیں لیکن کبھی 7 یا 9 نہیں ہوتیں۔ اس کا اہم کام زمین کے رداس اور فریم کا تعین کرنے کا طریقہ تھا۔ البیرونی نے تقریباً دو سو کتابیں لکھیں اور فلکیات کے لیے چند آلات بنائے۔ البیرونی نے زمین کے رداس اور فریم کا اندازہ لگانے کے لیے جو طریقہ کار تجویز کیا اور استعمال کیا اس نے جدید فلکیات کی بنیاد رکھی اور فلکیات کی بنیاد بن گئی۔

البیرونی تقابلی مذہب کے مطالعہ کے علمبردار تھے۔ اس نے زرتشت، یہودیت، ہندو مت، عیسائیت، بدھ مت، اسلام اور دیگر مذاہب کا مطالعہ کیا۔ ‘تاریخ الہند’ میں اس نے ہندوستانی زندگی کے ہر پہلو کو تلاش کیا، بشمول مذہب، تاریخ، جغرافیہ، ارضیات، سائنس اور ریاضی۔ ان کا شمار اسلام کے عظیم سائنسدانوں میں ہوتا ہے۔ ان کی تنقیدی روح، سچائی سے محبت، اور سائنسی نقطہ نظر برداشت کے جذبے سے یکجا تھے۔ 1048ء میں 75 سال کی عمر میں انتقال کر گئے، اس طرح 40 سال علم اکٹھا کرنے اور اس میں اپنا اصل حصہ ڈالنے کے بعد۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram