Rest Of Kashmir

In TOURISM
September 29, 2022
Rest Of Kashmir

Rest Of Kashmir

Azad Kashmir situated in the northeast of Pakistan is actually a land of beauty. it’s an autonomous district of Pakistan. It covers a area of 5134 square miles. The population density is about 258 persons per square kilometer. A literacy rate of 60% prevails in the region and is growing. There are a complete of ten districts in the Azad Kashmir.

The main rivers flowing through the Azad Kashmir are the Jhelum, Neelum and Poonch. This region is filled with thick forests, fast flowing rivers and streams flowing drinkable pure water. The topography comprises mainly of hills, mountains with terraces, valleys and plains at some point.

In this unique, one of a form project, we are going to take you to a tour of the Azad Kasmir. Let me assure you that you just are in an exceedingly for a treat. We’ll be starting off from a road travel from Islamabad to Pattikka and from there onwards to the remainder of Kashmir which can comprise of the subsequent destinations;

  • Redfort
  • Domail/Sangam
  • Pir Chinasi
  • Langarpura/Subri
  • Leepa Valley
  • Ghari Dupatta
  • Chikkar
  • Palandri
  • Nerian Sharif
  • Mangla Dam
  • Ram Fort

Patikka:
Patikka is a town in Azad Jammu and Kashmir on GPS coordinates 34° 36′ 46″ N and 73° 22′ 03″ E, Paikka is found 146-208 km from Islamabad depending on the route taken and 19 km from AJ&K. One in all two routes are often taken to succeed in Patikka, the routes are as follows:

Route one: The first route could be via Murree highway (Route N75) i.e. Islamabad to Murree, Murree to Muzaffarabad, and Muzaffarad to Patikka. this is able to take about 3 hours and therefore the journey would be around 146km.

Route two: The second route can be via Karakorum highway (Route N125) i.e. from Islamabad to Haripur, Haripur to Abbottabad, Abbottabad to Mansehra, Mansehra to Muzaffarabad and Muzaffarabad to Patikka.

The second route would take about 5-6 hours period and would be about 246km. this route would be more scenic since a lot of places would between the starting point and therefore the point of destination.

Patikka is well-known for the beautiful zoo that the wildlife commission AJ&K has set up. The zoo is an attraction point for both the locals and therefore the tourists, the zoo houses the animals and also the birds found in the natural habitat of Muzaffarabad region. These include the Golden/Chinese Pheasant, Lady Amherst’s Pheasant and therefore the elusive Himalayan Goral.

Patikka is additionally known for its local fish hatchery, the most attractive of the hatchery is that it serves freshly caught fish in the restaurant set up inside the hatchery. There are various tourist resorts in the surrounding areas of Patikka, but the foremost appreciated tourist resort is that the PC Muzaffarabad, Muzaffarabad is nineteen km from Patikka as already mentioned so it is a possible place to line up camp.

Red fort:
Red fort also called the Muzaffarabad fort is 16.7km from Patikka. Red Fort is on the skirmishes of Muzaffarabad city.

The construction of the Red Fort was started in 1559 during the rule of Chak Dynasty; however it had been severly damanged in the clashes between the Chaks and therefore the Mughal emperor Akbar. The Fort was later reconstructed/ repaired by Sultan Muzaffar Khan, after whom the Fort is now named.

The Fort contains a strong strategic importance; it’s covered on three sides by the water, preventing it from any land based attacks. At the time of construction of the Fort the navy attacks weren’t as severe because the land based attacks. The fort provided a strong line of defense for the residents of the nearby areas.

The Red Fort was severely damaged by the 2005 earthquake, the tourist development and archeology department of AJ&K has not been very effective in preserving this great landmark in AJ&K’s history.

Domail/Sangam:
The word Domail is really a Urdu word which when split is Do i.e. two and Mail meaning meeting of /combining of. The word sangam also means the meeting or combing of. Domail/Sangam is the area where the 2 rivers i.e. the river Jhelum and the river Neelum meet. Domail is 4.3km from the Red Fort.

The Jalalabad gardens are some extent of attraction for the tourists, these gardens are open for all and supply good ambiance for a family picnic. The luxurious green grass and also the beautiful fountains within the park are a tremendous sight for all.

The Domail food street also attracts locals and tourists. The food street offers an outsized sort of food, which has traditional cuisine moreover as international cuisine. There are plenty of resort options in Domail like the city Hotel, The Sangam Hotel etc. The resorts have varying rates depending on the seasons.

Pir Chinasi:

Pir Chinasi is 27km from Domail, and is located east of the Muzaffarabad city; it is approximately 30 km from the muzaffarabad city.

Pir Chinasi is mainly known for its scenic beauty. It is a resounding 2924 meters above sea level at its highest point. Pir Chinasi is named after Shah Hussain Bukhari, a saint whose shrine is also located in Pir chinasi. The Shrine is filled with the followers of Shah Hussain Bukhari.

The areas surrounding Pir Chinasi are Pir Asimar and Phanwa Da Dana; these areas are also blessed with natural beauty and provide a chance for hiking and camping.

A tourist resort is set in Saran, Saran is a place on the base of the Pir Chinasi cliff, and the resort is often packed with tourists or closed due to difficult weather. The visiting season for Pir Chinasi is between April to August.

Langarpura subri:
Langarpura Lake also known as Subri Lake is 9km from Domail. The lake was formed in 1975 by a natural cause. A cloud burst over the surrounding mountains of the River Jhelum near the Langarpura village which caused the mountain to block the way of the water and hence the lake was formed. The lake is on the skirmishes of the area called the Langarpura village and hence the name Langarpura lake.

The main attractions of the Langarpura/Subri Lake are the water boats that give a ride of the lake. The Langarpura area is very fertile. The main agriculture of the area is Rice and Maize.

A rest house is set up on the skirmishes of the lake called the Ansler’s hut. The hut provides for accommodation of the tourists and has a reasonable low rate.

Leepa valley:
Leepa valley is 48 km apart from Langarpura/Subri Lake. Leepa valley is one of the most mesmerizing valley throughout the world. The valley has an altitude ranging from 3200 meters above sea level to 1677 meters above sea level.

Leepa Valley is 38km from Resain(1921 meters above sea level). Tourists can come till Resian on normal transportation; distance from Resian to Leepa can only be covered through Jeeps due to the rigidness of the terrain. The main agricultural product in the summer is Rice, whereas apple, walnut, cherry and honey are also produced in the valley. The valley is covered in snow throughout the winter season and is closed for tourists; the tourism season starts from May and remains open until October.

Dao-khan is another tourist location near Leepa valley; Dao-khan has an altitude of 2490 meters above sea level. Dao-khan has become a tourist attraction due to its beautiful scenic view and its high altitude; furthermore the accommodation facilities are also overwhelming. The three main accommodation providers are the tourist Rest House Facility, the Forest Rest House Facility and the AJ&K Tourism Dept.

Ghari Dupatta:
Ghari dupatta is situated approximately 13.9 kilometers from Langarpura. This place is situated on the banks of river Jhelum. It is a small village in the valley with a beautiful view of the landscape which includes lush green mountains and river Jhelum flowing in the middle. This place is easily accessible by road and takes a mere 20 minutes drive from Subri Lake to reach. It is recommended for sightseeing during the day only because there are no good quality hotels to stay the night.

Recently our ex-prime minister Yousaf Raza Gillani inaugurated Degree college Gharri Dupatta which is the first degree college in this region. Mobile network coverage is also available in this village for all networks.

Chikkar:
25 kilometers away from Ghari Dupatta is a place called Chikkar. It can be reached by following the Chakothi road and Sudhan gali road.

The biggest tourist attraction in Chikkar is the Zal Zal lake which is 3.5 km long and 350 ft deep which was created during the earthquake in year 2005 because of a mountain slide which blocked the river flow and due to which five villages went under water. There are markets, hospital, banks, post office and educational institutes which provide the basic necessities of life.

Another feature of this destination is its breathtaking scenery and healthy environment.

Palandri: After visiting Chikkar, next place to visit this route is Palandri which is 126km away from Chikkar and it takes around 2 hours and 40minutes to reach there. The best route to take for this trip is Rawalakot road through Sudan Gali and bagh.

The importance of Palandri is that it was the first capital of Azad Kashmir. The beauty of Palandri lies with its beautiful weather and many historical forts and hilly landscapes. In summers, you can enjoy the mild temperature from 20 to 30 degree centigrade whereas winter are very cold and range from -5 to 15 degree centigrade.

After resting a night in Palandri, the first place to visit in the morning is the Cadet College Palandri which is a military high school, and students over here are trained for the defense and their nation’s security. This college has the beautiful depiction of infrastructure and scenery around it. Then comes the time to visit the riding track and enjoy the horse ride in a beautiful weather. Another beautiful place to visit while being in Palandri is Biral Fort.

Nerian Sharif:
After leaving Palandri, we will take the Hajira road for around 45 minutes and 28 km later comes a place known as Nerian Sharif; which will be our next stop for this trip. Nerian sharif is a popular place because of the prominent saints which includes Naqshbandi Chain and Khwaja Pir Ghulam Mohiuddin Ghazanvi and are the center of spiritual guidance.

Nerian Sharif was once an uninhabited place but because of the endless efforts of Khwaja Ghulam Mohiuddin Ghaznavi it became a blessed land and due to his efforts and the prayers, a tomb was made for Khwaja Ghaznavi and his brother which is visited daily by the people and now this tomb is known as Darba e Aalia Nerian Sharif. This Darbar is one of the places to visit while being in Nerian Sharif.

The next place to visit after the Darbar e Aalia is the Mohi-ud-Din Islamic University the name of which was also the tribute to Hazarat Sahab and is a huge institution for the Islamic and other studies in this region.

Mangla Dam:
Continuing our journey further, the next place to visit is Mangla Dam. The route of which is through Kotli-Mirpur Road and takes around three and a half hours for 150 km long drive.

Mangla Dam is the 9th largest dam in the world and is located in the Mirpur District on the River Jehlum. It is also one of the most visited places and a great tourist attraction. Mangla Fort is also a great place to visit.

While you are in Mangla, you can enjoy a great variety of food which includes fish, desi food, Italian food, and many others. One can also stay the night in mangla as many hotels are there which also includes a fours star hotel “Pearl Continental” which gives its customers a very good service and many other entertainment opportunities.

Other tourist activities in Mangla include Speed Boating, Paragliding, Skiing, Fishing, and many others.

Ramkot Fort:
The next stop after the Mangla Dam is the Ramkot Fort which is 90 km from Mangla Dam through Kotli road and it takes almost two hours and 15 minutes to reach there. Another route that is shorter to get to Ramkot Fort is through the boat, which is only 13 km away and it takes around 30 minutes to get there.

It is a very beautiful place along the river and its beauty and architecture are the main attraction for tourists. It is basically built over the old temple which belongs to the Hindu god “Shiva”. It is a great place to take pictures and to spend a few hours while you are visiting Mangla Dam.

With this our journey comes to an end and we drive back almost two and a half hours to Islamabad, covering the distance of 118 km.

باقی کشمیر

پاکستان کے شمال مشرق میں واقع آزاد کشمیر واقعی خوبصورتی کی سرزمین ہے۔ یہ پاکستان کا ایک خود مختار انتظامی ڈویژن ہے۔ یہ 5134 مربع میل کے رقبے پر محیط ہے۔ آبادی کی کثافت تقریباً 258 افراد فی مربع کلومیٹر ہے۔ اس خطے میں شرح خواندگی 60% ہے اور بڑھ رہی ہے۔ آزاد کشمیر میں کل دس اضلاع ہیں۔

آزاد کشمیر سے بہتے اہم دریا جہلم، نیلم اور پونچھ ہیں۔ یہ خطہ گھنے جنگلات، تیز بہنے والی ندیوں اور پینے کے صاف پانی سے بہنے والی ندیوں سے بھرا ہوا ہے۔ ٹپوگرافی بنیادی طور پر پہاڑیوں، چھتوں والے پہاڑوں، وادیوں اور میدانی علاقوں پر مشتمل ہوتی ہے۔

اس منفرد پروجیکٹ میں، ہم آپ کو آزاد کشمیر کی سیر پر لے جائیں گے۔ میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ آپ ایک دعوت میں ہیں۔ ہم اسلام آباد سے پٹیکا اور وہاں سے باقی کشمیر تک سڑک کے سفر سے شروع کریں گے جو درج ذیل مقامات پر مشتمل ہو گا۔

نمبر1:ریڈفورٹ
نمبر2:ڈومیل/سنگم
نمبر3:پیر چناسی
نمبر4:لنگر پورہ/سبڑی
نمبر5:وادی لیپا
نمبر6:گھاری دوپٹہ
نمبر7:چکڑ
نمبر8:پالندری۔
نمبر9:نیریاں شریف
نمبر10:منگلا ڈیم
نمبر11:رام قلعہ

پٹیکا
پٹیکا آزاد جموں و کشمیر کا ایک قصبہ ہے جو جی پی ایس کوآرڈینیٹس 34° 36′ 46″ این اور 73° 22′ 03″ ای پر ہے، پائیکا اسلام آباد سے 146-208 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے جو لیے گئے راستے پر منحصر ہے اوراے جے کے سے 19 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ پتیکا تک پہنچنے کے لیے دو راستوں میں سے ایک کو لیا جا سکتا ہے، راستے درج ذیل ہیں

پہلا راستہ: پہلا راستہ مری ہائی وے (روٹ این75) یعنی اسلام آباد سے مری، مری سے مظفرآباد اور مظفرآباد سے پتیکہ تک جا سکتا ہے۔ اس میں تقریباً 3 گھنٹے لگیں گے اور یہ سفر تقریباً 146 کلومیٹر کا ہوگا۔

دوسرا راستہ: دوسرا راستہ قراقرم ہائی وے (روٹ این125) سے ہو سکتا ہے یعنی اسلام آباد سے ہری پور، ہری پور سے ایبٹ آباد، ایبٹ آباد سے مانسہرہ، مانسہرہ سے مظفر آباد اور مظفر آباد سے پتیکا۔

دوسرا راستہ تقریباً 5-6 گھنٹے کا سفر کرے گا اور تقریباً 246 کلومیٹر کا ہوگا۔ یہ راستہ زیادہ خوبصورت ہوگا کیونکہ بہت ساری جگہیں نقطہ آغاز اور منزل کے درمیان ہوں گی۔ پٹیکا اس خوبصورت چڑیا گھر کے لیے مشہور ہے جسے وائلڈ لائف کمیشن اے جے کے نے ترتیب دیا ہے۔ چڑیا گھر مقامی لوگوں اور سیاحوں دونوں کے لیے ایک پرکشش مقام ہے، چڑیا گھر مظفرآباد کے علاقے کے قدرتی مسکن میں پائے جانے والے جانور اور پرندے رکھتا ہے۔ ان میں گولڈن/چائنیز فیزنٹ، لیڈی ایمہرسٹ فیزنٹ اور ہمالیائی گورل شامل ہیں۔

پٹیکا اپنی مقامی فش ہیچری کے لیے بھی جانا جاتا ہے، ہیچری کی سب سے بڑی کشش یہ ہے کہ یہ ہیچری کے اندر ریسٹورنٹ سیٹ اپ میں تازہ پکڑی گئی مچھلیوں کو پیش کرتی ہے۔ پتیکا کے آس پاس کے علاقوں میں مختلف سیاحتی ریزورٹ ہیں، لیکن سب سے زیادہ قابل تعریف سیاحتی مقام پی سی مظفرآباد ہے، مظفرآباد پتیکا سے 19 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے جیسا کہ پہلے ہی بتایا جا چکا ہے اس لیے یہ کیمپ لگانے کے لیے ایک ممکنہ جگہ ہو سکتی ہے۔

لال قلعہ

لال قلعہ جسے مظفرآباد قلعہ بھی کہا جاتا ہے پتیکا سے 16.7 کلومیٹر دور ہے۔ لال قلعہ مظفرآباد شہر کی جھڑپوں پر ہے۔ لال قلعہ کی تعمیر چک خاندان کے دور حکومت میں 1559 میں شروع ہوئی تھی۔ تاہم چکوں اور مغل بادشاہ اکبر کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں اسے شدید نقصان پہنچا۔ قلعہ کو بعد میں سلطان مظفر خان نے دوبارہ تعمیر/مرمت کیا، جس کے نام پر اب قلعہ کا نام رکھا گیا ہے۔

قلعہ ایک مضبوط تزویراتی اہمیت کا حامل ہے۔ یہ تین اطراف سے پانی سے ڈھکا ہوا ہے، اسے کسی بھی زمینی حملے سے روکتا ہے۔ قلعہ کی تعمیر کے وقت بحریہ کے حملے اتنے شدید نہیں تھے جتنے کہ زمینی حملے۔ قلعہ قریبی علاقوں کے باشندوں کے لیے دفاع کی مضبوط لائن فراہم کرتا تھا۔

لال قلعہ کو 2005 کے زلزلے سے شدید نقصان پہنچا تھا، آزاد جموں و کشمیر کا سیاحتی ترقی اور آثار قدیمہ کا محکمہ آزاد جموں و کشمیر کی تاریخ میں اس عظیم تاریخی نشان کو محفوظ رکھنے میں زیادہ موثر ثابت نہیں ہوا۔

ڈومیل/سنگم
لفظ ڈومیل اصل میں اردو کا لفظ ہے جو تقسیم ہونے پر ڈو یعنی دو اور میل کا مطلب ہے جمع ہونا۔ لفظ سنگم کا مطلب ملاقات یا کنگھی بھی ہے۔ ڈومیل/سنگم وہ علاقہ ہے جہاں دو دریا یعنی دریائے جہلم اور دریائے نیلم آپس میں ملتے ہیں۔ ڈومیل لال قلعہ سے 4.3 کلومیٹر دور ہے۔

جلال آباد کے باغات سیاحوں کی توجہ کا مرکز ہیں، یہ باغات سب کے لیے کھلے ہیں اور فیملی پکنک کے لیے اچھا ماحول فراہم کرتے ہیں۔ پارک میں ہری بھری گھاس اور خوبصورت فوارے سب کے لیے ایک حیرت انگیز نظارہ ہیں۔

ڈومیل فوڈ اسٹریٹ مقامی لوگوں اور سیاحوں کو بھی اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ فوڈ اسٹریٹ کھانے کی ایک بڑی قسم پیش کرتا ہے، جس میں روایتی کھانے کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی کھانے بھی شامل ہیں۔ ڈومیل میں ریزورٹ کے بہت سارے اختیارات ہیں جیسے سٹی ہوٹل، سنگم ہوٹل وغیرہ۔ موسموں کے لحاظ سے ریزورٹس کی قیمتیں مختلف ہوتی ہیں۔

پیر چناسی
پیر چناسی ڈومیل سے 27 کلومیٹر دور ہے، اور مظفرآباد شہر کے مشرق میں واقع ہے۔ یہ مظفرآباد شہر سے تقریباً 30 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ پیر چناسی بنیادی طور پر اپنی قدرتی خوبصورتی کے لیے جانا جاتا ہے۔ یہ اپنے بلند ترین مقام پر سطح سمندر سے 2924 میٹر بلند ہے۔ پیر چناسی کا نام ایک بزرگ شاہ حسین بخاری کے نام پر رکھا گیا ہے جن کا مزار بھی پیر چناسی می ہے۔ مزار شاہ حسین بخاری کے ماننے والوں سے بھرا ہوا ہے۔

پیر چناسی کے آس پاس کے علاقے پیر اسمار اور پھنوا دا دانا ہیں۔ یہ علاقے قدرتی حسن سے بھی نوازے گئے ہیں اور پیدل سفر اور کیمپنگ کا موقع فراہم کرتے ہیں۔ سرن میں ایک سیاحتی ریزورٹ قائم ہے، سارن پیر چناسی چٹان کی بنیاد پر ایک جگہ ہے، اور ریزورٹ اکثر سیاحوں سے بھرا رہتا ہے یا مشکل موسم کی وجہ سے بند رہتا ہے۔ پیر چناسی کی آمد کا موسم اپریل سے اگست تک ہوتا ہے۔

لنگر پورہ سبری
لنگر پورہ جھیل جسے سبری جھیل بھی کہا جاتا ہے، ڈومیل سے 9 کلومیٹر دور ہے۔ یہ جھیل 1975 میں ایک قدرتی وجہ سے بنی تھی۔ لنگر پورہ گاؤں کے قریب دریائے جہلم کے آس پاس کے پہاڑوں پر بادل پھٹ گیا جس کی وجہ سے پہاڑ نے پانی کا راستہ روک دیا اور جھیل بن گئی۔ یہ جھیل اس علاقے کی جھڑپوں پر ہے جسے لنگر پورہ گاؤں کہا جاتا ہے اور اسی لیے اس کا نام لنگر پورہ جھیل ہے۔

لنگر پورہ / سبری جھیل کے اہم پرکشش مقامات پانی کی کشتیاں ہیں جو جھیل کی سواری فراہم کرتی ہیں۔ لنگر پورہ کا علاقہ بہت زرخیز ہے۔ علاقے کی اہم زراعت چاول اور مکئی ہے۔
جھیل کی جھڑپوں پر ایک ریسٹ ہاؤس بنایا گیا ہے جسے نسلرزہٹ کہتے ہیں۔ جھونپڑی سیاحوں کی رہائش فراہم کرتی ہے اور اس کی قیمت کم ہے۔

وادی لیپا

لیپا وادی لنگر پورہ / سبری جھیل سے 48 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ وادی لیپا دنیا بھر میں سب سے زیادہ دلکش وادیوں میں سے ایک ہے۔ اس وادی کی سطح سمندر سے 3200 میٹر سے لے کر سطح سمندر سے 1677 میٹر تک کی اونچائی ہے۔

لیپا ویلی ریسین سے 38 کلومیٹر (1921 میٹر سطح سمندر سے بلندی پر) ہے۔ سیاح عام نقل و حمل پر ریسیان تک آ سکتے ہیں۔ علاقہ کی سختی کی وجہ سے ریسان سے لیپا تک کا فاصلہ صرف جیپوں کے ذریعے طے کیا جا سکتا ہے۔ موسم گرما میں اہم زرعی مصنوعات چاول ہیں، جہاں سیب، اخروٹ، چیری اور شہد بھی وادی میں پیدا ہوتے ہیں۔ وادی پورے موسم سرما میں برف سے ڈھکی رہتی ہے اور سیاحوں کے لیے بند رہتی ہے۔ سیاحت کا موسم مئی سے شروع ہوتا ہے اور اکتوبر تک کھلا رہتا ہے۔

داؤ خان وادی لیپا کے قریب ایک اور سیاحتی مقام ہے۔ داؤ خان کی سطح سمندر سے 2490 میٹر بلندی ہے۔ داؤ خان اپنے خوبصورت قدرتی نظارے اور بلندی کی وجہ سے سیاحوں کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے۔ مزید یہ کہ رہائش کی سہولیات بھی بہت زیادہ ہیں۔ تین اہم رہائش فراہم کرنے والے سیاحتی ریسٹ ہاؤس کی سہولت، فاریسٹ ریسٹ ہاؤس کی سہولت اور اےجے کے ٹورازم ڈیپارٹمنٹ ہاؤسنگ سہولت ہیں۔

گھاری دوپٹہ
گھڑی دوپٹہ لنگر پورہ سے تقریباً 13.9 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ یہ جگہ دریائے جہلم کے کنارے واقع ہے۔ یہ وادی کا ایک چھوٹا سا گاؤں ہے جس میں زمین کی تزئین کا خوبصورت نظارہ ہے جس میں سرسبز و شاداب پہاڑ اور درمیان میں بہتا ہوا دریائے جہلم شامل ہے۔ یہ جگہ سڑک کے ذریعے آسانی سے قابل رسائی ہے اور سبری جھیل سے صرف 20 منٹ کی مسافت پر پہنچتی ہے۔ یہ صرف دن کے وقت سیر و تفریح ​​کے لیے تجویز کیا جاتا ہے کیونکہ رات کے قیام کے لیے اچھے معیار کے ہوٹل نہیں ہیں۔

حال ہی میں ہمارے سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے ڈگری کالج گھڑی دوپٹہ کا افتتاح کیا جو اس خطے کا پہلا ڈگری کالج ہے۔ اس گاؤں میں تمام نیٹ ورکس کے لیے موبائل نیٹ ورک کوریج بھی دستیاب ہے۔

چکار
گھڑی دوپٹہ سے 25 کلو میٹر کے فاصلے پر چکڑ نامی جگہ ہے۔ چکوٹھی روڈ اور سودھن گلی روڈ سے اس تک پہنچا جا سکتا ہے۔ چکار میں سیاحوں کی توجہ کا سب سے بڑا مرکز زل زل جھیل ہے جو 3.5 کلومیٹر لمبی اور 350 فٹ گہری ہے جو 2005 میں زلزلے کے دوران ایک پہاڑی پھسلن کی وجہ سے پیدا ہوئی تھی جس سے دریا کا بہاؤ بند ہو گیا تھا اور جس کی وجہ سے پانچ گاؤں زیر آب آ گئے تھے۔

بازار، ہسپتال، بینک، پوسٹ آفس اور تعلیمی ادارے ہیں جو زندگی کی بنیادی ضروریات مہیا کرتے ہیں۔ اس منزل کی ایک اور خصوصیت اس کا سانس لینے والا منظر اور صحت مند ماحول ہے۔

پالندری
چکار جانے کے بعد، اس راستے پر جانے کے لیے اگلی جگہ پالندری ہے جو چکار سے 126 کلومیٹر دور ہے اور وہاں پہنچنے میں تقریباً 2 گھنٹے اور 40 منٹ لگتے ہیں۔ اس سفر کے لیے بہترین راستہ راولاکوٹ روڈ سودھن گلی اور باغ سے ہوتا ہوا ہے۔

پالندری کی اہمیت یہ ہے کہ یہ آزاد کشمیر کا پہلا دارالحکومت تھا۔ پالندری کی خوبصورتی اس کے خوبصورت موسم اور بہت سے تاریخی قلعوں اور پہاڑی مناظر سے مضمر ہے۔ گرمیوں میں، آپ 20 سے 30 ڈگری سینٹی گریڈ تک ہلکے درجہ حرارت سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں جبکہ سردیوں میں بہت سردی ہوتی ہے اور یہ -5 سے 15 ڈگری سینٹی گریڈ تک ہوتی ہے۔

پالندری میں ایک رات آرام کرنے کے بعد، صبح کے وقت دیکھنے کے لیے پہلی جگہ کیڈٹ کالج پالندری ہے جو ایک ملٹری ہائی اسکول ہے اور یہاں کے طلباء کو دفاع اور اپنی قوم کی سلامتی کے لیے تربیت دی جاتی ہے۔ اس کالج میں انفراسٹرکچر اور اردگرد کے مناظر کی خوبصورت عکاسی ہے۔ پھر وقت آتا ہے سواری کے ٹریک پر جانے اور خوبصورت موسم میں گھوڑے کی سواری سے لطف اندوز ہونے کا۔ پالندری میں رہتے ہوئے دیکھنے کے لیے ایک اور خوبصورت جگہ بیرل قلعہ ہے۔

نیریاں شریف
پالندری سے نکلنے کے بعد، ہم تقریباً 45 منٹ کے لیے ہجیرہ روڈ پر جائیں گے اور 28 کلومیٹر بعد ایک جگہ آتی ہے جسے نیریاں شریف کہا جاتا ہے۔ جو اس سفر کے لیے ہمارا اگلا پڑاؤ ہوگا۔ نیریاں شریف نامور اولیاء کرام کی وجہ سے ایک مقبول مقام ہے جس میں نقشبندی سلسلہ اور خواجہ پیر غلام محی الدین غزنوی شامل ہیں اور روحانی رہنمائی کا مرکز ہے۔

نیریاں شریف کسی زمانے میں ایک غیر آباد مقام تھا لیکن خواجہ غلام محی الدین غزنوی کی انتھک کوششوں سے یہ ایک بابرکت سرزمین بن گیا اور ان کی کوششوں اور دعاؤں سے خواجہ غزنوی اور ان کے بھائی کے لیے ایک مقبرہ بنایا گیا جس پر لوگ روزانہ آتے ہیں۔ اب یہ مقبرہ دربہ عالیہ نیریاں شریف کے نام سے مشہور ہے۔ یہ دربار نیریاں شریف میں ہوتے ہوئے دیکھنے کی جگہوں میں سے ایک ہے۔

دربار عالیہ کے بعد آنے کی اگلی جگہ محی الدین اسلامی یونیورسٹی ہے جس کا نام بھی حضرت صاحب کو خراج عقیدت تھا اور اس خطے میں اسلامی اور دیگر علوم کا ایک بہت بڑا ادارہ ہے۔

منگلا ڈیم

اپنے سفر کو مزید جاری رکھتے ہوئے، اگلی جگہ دیکھنے کے لیے منگلا ڈیم ہے۔ جس کا راستہ کوٹلی میرپور روڈ سے ہوتا ہے اور 150 کلومیٹر طویل ڈرائیو میں تقریباً ساڑھے تین گھنٹے لگتے ہیں۔

منگلا ڈیم دنیا کا 9واں بڑا ڈیم ہے اور یہ دریائے جہلم پر ضلع میرپور میں واقع ہے۔ یہ سب سے زیادہ دیکھے جانے والے مقامات میں سے ایک ہے اور سیاحوں کی توجہ کا ایک بڑا مرکز بھی ہے۔ منگلا قلعہ بھی دیکھنے کے لیے ایک بہترین جگہ ہے۔

جب آپ منگلا میں ہوں تو آپ مختلف قسم کے کھانے سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں جس میں مچھلی، دیسی کھانا، اطالوی کھانا اور بہت سے دوسرے شامل ہیں۔ منگلا میں بھی کوئی رات گزار سکتا ہے کیونکہ وہاں بہت سے ہوٹل ہیں جن میں ایک فور سٹار ہوٹل ‘پرل کانٹی نینٹل’ بھی شامل ہے جو اپنے صارفین کو بہت اچھی سروس اور دیگر تفریحی مواقع فراہم کرتا ہے۔

منگلا میں دیگر سیاحتی سرگرمیوں میں سپیڈ بوٹنگ، پیرا گلائیڈنگ، سکینگ، فشینگ اور بہت سی دوسری چیزیں شامل ہیں۔

رام کوٹ قلعہ
منگلا ڈیم کے بعد اگلا پڑاؤ رام کوٹ قلعہ ہے جو منگلا ڈیم سے کوٹلی روڈ سے 90 کلومیٹر دور ہے اور وہاں پہنچنے میں تقریباً دو گھنٹے اور 15 منٹ لگتے ہیں۔ ایک اور راستہ جو رام کوٹ قلعہ تک جانے کے لیے چھوٹا ہے وہ کشتی کے ذریعے ہے، جو صرف 13 کلومیٹر دور ہے اور وہاں پہنچنے میں تقریباً 30 منٹ لگتے ہیں۔

یہ دریا کے کنارے ایک بہت ہی خوبصورت جگہ ہے اور اس کی خوبصورتی اور فن تعمیر سیاحوں کے لیے خاص توجہ کا مرکز ہے۔ یہ بنیادی طور پر پرانے مندر پر بنایا گیا ہے جو ہندو دیوتا ‘شیوا’ کا ہے۔ جب آپ منگلا ڈیم کا دورہ کر رہے ہوں تو تصاویر لینے اور چند گھنٹے گزارنے کے لیے یہ ایک بہترین جگہ ہے۔

اس کے ساتھ ہی ہمارا سفر اختتام کو پہنچتا ہے اور ہم 118 کلومیٹر کا فاصلہ طے کرتے ہوئے تقریباً ڈھائی گھنٹے کی گاڑی سے واپس اسلام آباد پہنچ جاتے ہیں۔

/ Published posts: 1274

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram