Karachi

In TOURISM
September 20, 2022
Karachi

Karachi

It is known to be the most important metropolitan city in the world. The most seaport of Pakistan is situated in Karachi. It’s the capital of Sindh province. The population of Karachi is estimated to be 23.5 million in 2013. The realm of Karachi is 3527 km2.

The world’s third largest city by population is Karachi. There are lots of industries in this city including banking, textiles, shipping, automotive, entertainment, arts, fashion, advertising, publishing, medical research, etc. There are a large number of places for tourism in Karachi. Because of terrorism, tourism has decreased within the past few years. Lots of places in Karachi are worth watching. People from everywhere in the world come to go to these places. These places include the following:

Mazar-e-Quaid

Also referred to as the Jinnah museum or the National Museum, Mazar-e-Quaid is the final resting place of the good Muhammad Ali Jinnah, his sister Fatima Jinnah and therefore the first prime minister of Pakistan, Liaquat Ali khan.

Mazar-e-Quaid is found in the Jamshed quarters neighborhood of Karachi. Completed in the 1960s, Mazar-e-Quaid is an illustrious part of Karachi and has the respect of representing it throughout the world. Home to about 10,000 visitors per day, the gorgeous white tomb will be seen from miles, especially at night thanks to the high-powered spotlights which shine a light on that in the dark.

The interesting part about the mausoleum is that it had been designed by a Mumbai-based architect called Yahya Merchant. it’s located in a very 53-hectare park. The building itself is constructed on a 4m high platform and also the size of the building is 75 x 75m on the ground. Each wall incorporates a separate entrance which implies that there are four entrances in total as are often seen in the pictures below. Moreover, there are fifteen fountains that cause the platform from one side while terraced avenues result in the gate from all the edges

The inner part of the mausoleum contains a stunning green chandelier that was gifted to Pakistan by the people of China.

On special occasions, official and military ceremonies take place like:

  • 23rd of March (Pakistan Day)
  • The 14th of August (Independence Day)
  • The 11th of September (the anniversary of Jinnah’s death)
  • 25th of December (Jinnah’s birthday)

Apart from that, dignitaries and officials from foreign countries also visit the mausoleum during official tours, and also the changing of guard ceremony takes place on a daily basis at the mausoleum specifically from 5 p.m to 7 p.m.

The mausoleum also consists of a museum below the mausoleum building which contains objects employed by Quaid-e-Azam. These include his cigars, monocles, pens, caps, clothes, coins, walking sticks, and coats yet as a specially designed room that contains his furniture. The museum also contains an incredible collection of cars that were utilized by the Quaid-e-Azam.

PAF Museum

PAF Museum, a good reminder of the heroics of this nation’s freedom fighters, is found adjacent to the PAF Base Faisal on the most Shahrah-e-Faisal. it absolutely was inaugurated by the then Chief of Air Staff, Air Chief Marshal Abbas Khattak on 14th August 1947. However, it had been opened to the general public in October 1997.

The museum consists of a large display of air defense equipment used in various wars still because the defense equipment is used for other purposes. The museum is home to different aircraft including:

  • F-86 Sabre,
  • F-104 Starfighter, Mirage,
  • FT-6, F-6, T-33,
  • U-Mig15, MFI-17 (Mushshak),
  • Aero Commander,
  • Antonov An-12,
  • Beech D-95A (Travel Air),
  • T-6G (Harvard),
  • Huskie (Helicopter).

Other rare relics such as the Viking- Quaid-e-Azam’s aircraft, an Indian Gnat aircraft which was force landed at Pasroor in the 1965 war, etc are displayed in a very huge archives gallery. The gallery is additionally installed with high-tech PCs which give information about the various aspects of PAF.

The gallery is then divided into four sub-galleries.

  1. One gallery depicts the history of aerial warfare through model aircraft and paintings.
  2. The second gallery shows different fighter aircraft models of the world.
  3. The other two galleries are dedicated to the “Shohada” and heroes of the 1965 & 1971 wars
    one in all these shows the achievements of various squadrons.
  4. While the other one shows the achievements/history of PAF Bases through rare photographs and therefore the reprints of paintings.

Clifton Beach

Located in the Arabian sea, Clifton Beach or Sea view is a beach in Karachi. More specifically, it is located in the neighborhood of Clifton, Saddar Town. Up until 2003, it was one of the world’s most popular silver-sand beach and health resorts during the 20th century. However in 2003 due to a major oil spill, the beauty of the once famous beach has been majorly compromised. This was when an oil tanker spilled thousands of gallons of oil into the sea. Major efforts were undertaken to deal with the issue but still, a full recovery has not been made. The water is still highly polluted which not only harms the wildlife but is a major threat to the health of the tourists and nearby residents.

The beach consists of numerous activities that families and tourists can enjoy such as beachside horse and camel rides, amusement parks, restaurants, and swimming in the Arabian Sea. The Defence Housing Authority is fighting erosion by bedding more sand, which may change the shape and features of the beach. The beach needs serious attention and consideration from the city government, as the area has become increasingly dirty and unpleasant.

A gated residential area called Seaview Apartments lies close to a section of Clifton beach known as Seaview beach or also as “Seaview”. Another attraction in this area is the recently constructed Cineplex cinema for the people who reside in DHA and Clifton.

Other beaches close to the city include Sandspit, Hawke’s Bay, and Paradise Point, Sonehra point, French beach, cape Mount, Manora Beach, but Clifton Beach is the most popular of them all.

Paradise Point

A major attraction of Karachi, Paradise Point, on the Arabian Sea, is a beach in Karachi. It is accessible through Mauripur Road in Karachi. The main reason for the popularity of this beach is the sandstone rock promontory with a natural arch. Due to the pressure of the waves on the sandstone rock, the arch is becoming wider and wider year by year

The beach consists of numerous activities that families and tourists can enjoy such as beachside horse and camel rides, amusement parks, restaurants, and swimming in the Arabian Sea.

As can be seen from the pictures below, the rock was like the one on the picture on the left a couple of years ago but presently it is like the picture on the right.

Wazir Mansion

Wazir mansion is the birthplace of the founder of Pakistan, Quaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah. It is located in New Naham Road, Kharadar, Karachi. Once it was considered that Jhirk is the birthplace of Quaid-e-Azam but later it was discovered that Wazir Mansion is the actual place of birth. In a book written in the 1960s by Fatima Jinnah, the sister of Muhammad Ali Jinnah, it is clearly mentioned the salient features of her brother’s life. This book it is clearly mentioned their ancestral village, Panel, and the birthplace of Muhammad Ali Jinnah.

In 1874, Mr. Jinnah’s father, who was a merchant at that time, got the house for rent and settled here for a few years. This is a two-story building that was constructed in 1865 using a mortar blend of lime and Jute. This house is a museum nowadays and carries the possessions of Mr. Muhammad Ali Jinnah. It serves as a national archive. The Government of Pakistan has declared this building a protected national monument. The government renovated it in 2008 and the Government of Sindh owns it since then.

The museum is a perfect attraction for tourists from all over the world. This building is converted into a museum. The museum consists of three floors. Its ground floor has a library, which carries the books which were once possessed by Mr. Muhammad Ali Jinnah. In addition, there is a reading hall in the library, where people can sit and read those books. There are two galleries on the first and second floors of the building. There are three rooms on the first floor. One room is the place of Mr. Jinnah’s birth. The other two rooms contain furniture items. These furniture items belonged to Mr. Jinnah and include a cabinet chair, a sofa, a bed, an office chair, and other articles. The other gallery has nine showcases that display relics of Mr. Jinnah including his dresses, a pair of spectacles, a walking stick, a monocle, a radio, a silver lock, a smoking pipe, books related to law, a manuscript of the Holy Quran, and many other items once owned by him. All these possessions show his sophisticated and elegant personality. His possessions give the feeling that he was a man well composed and very poised in his life. It is quite evident from his dressing that he had excellent taste and he was a well-sophisticated man. People must go and visit this place to get inspiration from one of the world’s greatest leaders.

Mohatta Palace

Mohatta palace is situated in Karachi, Pakistan. It used to be owned by Shivratan Chandraratan Mohatta, a Hindu businessman from the Rajasthan region of the subcontinent. He used to spend his summers in this palace. It was built in 1927 and he could own this building for only about two decades. The architectural style of the palace is based upon Indo-Saracen architecture. Agha Ahmed Hussain was the architect of the palace. Pink Jodhpur stone in combination with a yellow stone from Gizri was used to construct the house. This palace was built in the tradition of the palaces built from stones in Rajasthan at that time. This palace was located near the sea which is why Mohatta used to come here to spend his summers.

The area of the palace is 18,500 square feet. It has windows, balustrades with floral motifs, stone brackets, domes, and wonderful railings on the front side of the building. The stained glass windows in the rear area are arched while those in the front area are of blue color. The ground floor consists of rooms designed for entertainment while the rooms on the first floor are designed to provide private facilities. The terrace provides shade from intense sunlight. Teak wood is used in this palace which adds to the beauty of the palace. There are long corridors and doors opening within doors. There are three floors in this building. There is a small pool in the basement on the north of the building.

There are ventilators in the basement which might be used for the sunlight. There is a door, which opens into a tunnel that leads to a Hindu temple. It was built to provide a safe passage to the wife of Mohatta. There is a large square hall that opens into a corridor through seven different openings. There are octagonal towers on each corner of the tower. The two towers on the front have stairs leading to the roof. There are five windows in each octagonal tower. On the first floor, there are private rooms as well. Four bedrooms with attached restrooms and dressing rooms are there on this floor. The terrace on the first floor gives a sight of the Arabian Sea. The rooftop gives a view of the beautiful building as well as landscaping done below.

After the independence of Pakistan, this building was used by the Ministry of foreign affairs. In 1964, Fatima Jinnah started living in this house. It was converted into a museum by the Government of Pakistan in 1995. There are art exhibitions held in this museum for a period of 2 to 2.5 years.

Frere Hall

Frere Hall is one of the buildings which is constructed on the British colonial design. It is located in Karachi, Pakistan. The name Frere is kept after the name of Sir Henry Bartle Edward Frere. He promoted the economic development of Sindh and supported making Sindhi the only official language. There are two lawns surrounding the building which were called “Queen’s lawn” and “King’s lawn”. These are now named as Bagh-e-Jinnah. The Frere Hall is constructed on the Venetian Catholic design using yellow limestone, and red and yellow Jungshahi sandstones. The general public can visit Frere Hall. In its courtyard, there are exhibitions and stalls of books where people can buy these books. People are able to buy out of print old books from here. An auditorium and an orchestral gallery are located on the first floor of the building. Liaquat Municipal Library owns the ground floor of Frere Hall. In the past, it has been used for live theatrical performances, public meetings, and socio-cultural undertakings. The hall is also used for art exhibitions. The lush green lawns and Victorian-style fountains are surrounding Frere Hall.

Hawke’s Bay

Hawke’s bay is a beach located in Karachi, Pakistan. It is at a distance of 20 Km southwest of Karachi. It is nearby Hawke’s bay road. In the 1930s, Lord Hawke built a beach house here and used to visit it on weekends. It is a tourist resort. People come here on weekends to enjoy and picnic. It is a sandy beach and a large number of people from Karachi come here for swimming, fishing, and camel riding. There are huts on the beach that are available for rent. The view of the Arabian Sea is breathtaking from this beach. It is one of the few beaches in the world where green sea turtles lay eggs.

Port Grand

One of the latest additions to Karachi’s frivolous nightlife is port grand. This part is built along the harbor front of the 19th-century Native Jetty Bridge that links Karachi port trust to Keamari. It is a unique area where one can enjoy shopping, culture, dining, and happenings under one roof. Port grand is termed the largest food street in Asia so there is a variety of dining options.

The one-kilometer historical bridge has been converted into a distinct area where customers can enjoy a variety of cuisines and shop from their favorite brands. There are several destinations for visitors to explore; one of the main attractions as you enter is a world-class shopping mall that has a variety of international and local brands. Several other fascinations that await tourists are:

  • Napier’s Tavern: is a place for the ultimate dining experience while simultaneously enjoying the magnificent sight of the harbor.
  • Walker’s Pier: This is a place to enjoy delicious cuisine on the cruise.
  • Art Lane: This is a place to encourage art at a reasonable price.
  • Asian Village: This is a themed area in order to promote Asian cuisine and culture.
  • Mermaid Place: This is a maritime-themed place with a specialty in seafood.
  • Numaish: Offers a street-like environment in Karachi with a variety of restaurants.
  • Temple point: This is over a century-old temple where tourists can experience Hindu culture and tradition and an amazing spot for photography.

Port Grand has now become the epicenter for tourist attractions. Various events, concerts, competitions, and festivals are held at this place. To ensure Port Grand remains a safe and secure place the entrance is limited to families only. In order to keep the nightlife of Karachi alive, its timings are from 6:00 p.m to 11:00 p.m.

Timings 6-11. The entrance fee is Rs. 300, and it is free for children under 12.

Arena

Another exciting addition to Karachi’s amusements is Arena which provides exciting new facilities for indoor games. It is a state-of-the-art facility designed for recreational purposes. It is located at Karsaz next to the Navy museum. Various indoor facilities offered are:

  • Ice Skating: offers the first ice skating indoor areas in Pakistan
  • Paint Ball: another emerging trend in Pakistan
  • Virtual Bowling,
  • Arcade Games
  • Network Gaming Zone,
  • Virtual Simulator
  • Rock Climbing
  • OneShot Mini Golf
  • Indoor Cricket, Desserts/Mocktail Bar
  • Restaurant&Cafe
  • Gymnasium

There are several packages for example Arena Privilege plus for members where they can avail of discounts and special benefits. However, non-members are also allowed to utilize the facilities.

Other than sports facilities arena also has party and banquet halls. One of its famous halls is the Jade Hall, which is the biggest covered pillarless hall in Pakistan.

Manora

Manora forms a defensive barrier between Karachi and also the sea. The island includes an important location and had been popular among civilizations through time. It is approximately a twenty minutes boat ride from the Karachi waterfront. The return trip to the island costs around Rs. 2000. Manora is a diverse cultural hub unknown to the world. At a look, one can spot a Christian church, a temple, a Sikh gurudwara, and a mosque where worshippers are busy performing their daily religious rituals. one of the strategic importance of this place is that it absolutely was the world where Alexander the good camped to prepare a convoy to Babylonia.

Manora is already a well-liked spot among the general public because it has long sandy beaches that merge with other beaches at Hawkesbury and Sandspit.

Another tourist attraction on the island is that the tallest lighthouse in Pakistan which features a height of (91 feet) is found there at its southeastern end. so as to draw in tourist government of Pakistan is taken several steps to create hotels and restaurants to facilitate the visitors.

Sunway Lagoon Water Park

Sunway Lagoon is the first international standard water park in Pakistan. The water park is situated adjacent to Gharo Town and approximately fifty minutes faraway from Karachi airport.

The park is meant to keep international standards in mind with special attention to safety procedures for the rides. Special attention is given to the standard of water utilized in the park. The water is continuously filtered and treated through special filtration plants imported from Spain that keep the water glistening blue.

The entrance ticket for adults is Rs 700 whereas for kids between the age brackets of 3-12 years the ticket price is Rs. 600. SunlagoonWater Park stands paralleled to any international standard water park so it’s a preferred destination for tourists.

Various facilities offered at the Water Park are:

  • Mega Pool with 4 Slides
  • Children Pool with 3 Slides
  • Water Channel
  • Central Pool
  • Ladies Pool
  • Free Fall Pool
  • Spiral Pool
  • Lazy Pool (Asia’s Largest)
  • Children Play Land

Karachi Zoo

Karachi zoo is one of the oldest zoos in the country. it had been established in 1878. It’s situated on Nishter Road and Sir Agha Khan III Road. the doorway ticket costs only a nominal amount of Rs. 10.

Various attractions for tourists are:

  • Elephant House: Where elephants above fifty years old are often found.
  • Explanation Museum: This area has been revamped so as to draw in visitors. In the display area, one can find stuffed animals, skins, antlers, horns, and feathers. Zoology students for research and academic motives use this as part of the zoo.
  • Reptile House: It holds the importance of being one of the few reptile houses in Pakistan. There are about 13 species of snakes and lizards.
  • Mughal Garden: It had been constructed in 1970. The luxurious green lawn and various styles of flowers, make it an out-of-this-world place for visitors.
  • Karachi Municipal Aquarium: It had been established in 1953. The aquarium has approximately 28 tanks which contain around 300 fishes of about 30 species. Various flower exhibitions are held yearly in this area so it’s a known spot for visitors.
  • White Lions: One of the recent additions to the zoo is white lions that were purchased in 2012. It’s one the most attractions of the zoo the draws visitors

کراچی

یہ دنیا کا سب سے بڑا اور میٹروپولیٹن شہر کے طور پر جانا جاتا ہے۔ پاکستان کی اہم بندرگاہ کراچی میں واقع ہے۔ یہ صوبہ سندھ کا دارالحکومت ہے۔ کراچی کی آبادی 2013 میں 23.5 ملین بتائی گئی ہے۔ کراچی کا رقبہ 3527 کلومیٹر 2 ہے۔ آبادی کے لحاظ سے دنیا کا تیسرا بڑا شہر کراچی ہے۔ اس شہر میں بہت ساری صنعتیں ہیں جن میں بینکنگ، ٹیکسٹائل، شپنگ، آٹوموٹو، تفریح، فنون، فیشن، اشتہارات، اشاعت، طبی تحقیق وغیرہ شامل ہیں، کراچی میں سیاحت کے لیے بڑی تعداد میں جگہیں موجود ہیں۔ دہشت گردی کی وجہ سے گزشتہ چند سالوں میں سیاحت میں کمی آئی ہے۔ کراچی میں بہت سی جگہیں دیکھنے کے لائق ہیں۔ دنیا بھر سے لوگ ان مقامات کو دیکھنے آتے ہیں۔ ان مقامات میں درج ذیل شامل ہیں:

مزار قائد

جناح میوزیم یا قومی عجائب گھر کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، مزار قائداعظم محمد علی جناح، ان کی بہن فاطمہ جناح اور پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان کی آخری آرام گاہ ہے۔

مزار قائد کراچی کے جمشید کوارٹرز محلے میں واقع ہے۔ 1960 کی دہائی میں مکمل ہونے والا مزار قائد کراچی کا ایک نمایاں حصہ ہے اور اسے دنیا بھر میں اس کی نمائندگی کا اعزاز حاصل ہے۔ روزانہ تقریباً 10,000 زائرین کا گھر، خوبصورت سفید مقبرہ میلوں دور سے دیکھا جا سکتا ہے، خاص طور پر رات کے وقت اس پر روشنی ڈالنے والی ہائی پاور اسپاٹ لائٹس کی وجہ سے۔

مقبرے کے بارے میں دلچسپ بات یہ ہے کہ اسے ممبئی کے ایک معمار یحییٰ مرچنٹ نے ڈیزائن کیا تھا۔ یہ 53 ہیکٹر کے پارک میں واقع ہے۔ عمارت خود ایک 4 میٹر اونچے پلیٹ فارم پر بنائی گئی ہے اور عمارت کا سائز زمین پر 75 x 75 میٹر ہے۔ ہر دیوار کا ایک علیحدہ داخلی دروازہ ہے جس کا مطلب ہے کہ کل چار داخلی دروازے ہیں جیسا کہ نیچے دی گئی تصویروں میں دیکھا جا سکتا ہے۔ مزید یہ کہ پندرہ فوارے ہیں جو ایک طرف سے پلیٹ فارم کی طرف جاتے ہیں جبکہ چھت والے راستے چاروں اطراف سے گیٹ تک جاتے ہیں۔

اس کے مزار کے اندرونی حصے میں ایک خوبصورت سبز فانوس ہے جو چین کے لوگوں نے پاکستان کو تحفے میں دیا تھا۔ خاص مواقع پر، سرکاری اور فوجی تقریبات ہوتی ہیں جیسے کہ :

نمبر ایک:23 مارچ (یوم پاکستان)
نمبر دو:14 اگست (یوم آزادی)
نمبر تین:11 ستمبر (جناح کی برسی)
نمبر چار:25 دسمبر (جناح کا یوم پیدائش)

اس کے علاوہ بیرونی ممالک کے معززین اور اہلکار بھی سرکاری دوروں کے دوران مزار پر آتے ہیں اور مزار پر گارڈز کی تبدیلی کی تقریب روزانہ شام 5 بجے سے شام 7 بجے تک ہوتی ہے۔

مزار بھی مقبرے کی عمارت کے نیچے ایک میوزیم پر مشتمل ہے جس میں قائداعظم کے زیر استعمال اشیاء موجود ہیں۔ ان میں اس کے سگار، مونوکلز، قلم، ٹوپیاں، کپڑے، سکے، واکنگ اسٹکس، کوٹ کے ساتھ ساتھ ایک خاص طور پر تیار کردہ کمرہ بھی شامل ہے جس میں اس کا فرنیچر ہے۔ میوزیم میں کاروں کا ایک حیرت انگیز ذخیرہ بھی موجود ہے جو قائداعظم کے زیر استعمال تھیں۔

پی اے ایف میوزیم

پی اے ایف میوزیم، جو کہ اس قوم کے جنگجوؤں کی بہادری کی ایک عظیم یاد دہانی ہے، مرکزی شاہراہ فیصل پر پی اے ایف بیس فیصل سے متصل واقع ہے۔ اس کا افتتاح اس وقت کے فضائی عملے کے سربراہ ایئر چیف مارشل عباس خٹک نے 14 اگست 1947 کو کیا تھا۔ تاہم اسے اکتوبر 1997 میں عام لوگوں کے لیے کھول دیا گیا۔

عجائب گھر مختلف جنگوں میں استعمال ہونے والے فضائی دفاعی آلات کے ساتھ ساتھ دیگر مقاصد کے لیے استعمال ہونے والے دفاعی آلات کی ایک بڑی نمائش پر مشتمل ہے۔ میوزیم سمیت مختلف ہوائی جہازوں کا گھر ہے۔

نمبر1:ایف-86 صابری
نمبر2:ایف-104 اسٹار فائٹر، میراج
نمبر3:ایف ٹی-6، ایف-6، ٹ-33
نمبر4:ایرو کمانڈر
نمبر5:اینٹونوو این-12
نمبر6:بیچ ڈ-95اے (ٹریول ایئر)
نمبر7:ٹی-6جی (ہارورڈ)
نمبر8:ہسکی (ہیلی کاپٹر)۔

دیگر نایاب آثار جیسے وائکنگ قائداعظم کا طیارہ، ایک ہندوستانی طیارہ جسے 1965 کی جنگ میں پسرور میں زبردستی اتارا گیا تھا وغیرہ کو آرکائیوز کی ایک بڑی گیلری میں رکھا گیا ہے۔ گیلری میں ہائی ٹیک پی سی بھی نصب ہیں جو پی اے ایف کے مختلف پہلوؤں کے بارے میں معلومات فراہم کرتے ہیں۔

اس کے بعد گیلری کو چار ذیلی گیلریوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔

نمبر1:ایک گیلری میں ماڈل ہوائی جہاز اور پینٹنگز کے ذریعے فضائی جنگ کی تاریخ کو دکھایا گیا ہے۔
نمبر2:دوسری گیلری میں دنیا کے مختلف لڑاکا طیاروں کے ماڈل دکھائے گئے ہیں۔
نمبر3:باقی دو گیلریاں ‘شہدا’ اور 1965 اور 1971 کی جنگوں کے ہیروز کے لیے وقف ہیں۔
نمبر4:ان میں سے ایک مختلف سکواڈرن کی کامیابیوں کو ظاہر کرتا ہے۔ جبکہ دوسرا نایاب تصویروں اور پینٹنگز کے دوبارہ پرنٹ کے ذریعے پی اے ایف بیسز کی کامیابیوں/تاریخ کو ظاہر کرتا ہے۔

کلفٹن بیچ

بحیرہ عرب میں واقع، کلفٹن بیچ یا سی ویو کراچی کا ایک ساحل ہے۔ مزید خاص طور پر، یہ کلفٹن، صدر ٹاؤن کے پڑوس میں واقع ہے۔ 2003 تک یہ 20 ویں صدی کے دوران دنیا کا سب سے مشہور سلور ریت والا ساحل اور صحت ریزورٹ تھا۔ تاہم 2003 میں تیل کے بڑے اخراج کی وجہ سے، ایک زمانے کے مشہور ساحل سمندر کی خوبصورتی میں بڑے پیمانے پر سمجھوتہ کیا گیا ہے۔ یہ اس وقت ہوا جب ایک آئل ٹینکر نے ہزاروں گیلن تیل سمندر میں بہایا۔ اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے بڑی کوششیں کی گئیں لیکن ابھی تک مکمل بحالی نہیں ہو سکی۔ پانی اب بھی انتہائی آلودہ ہے جو نہ صرف جنگلی حیات کو نقصان پہنچاتا ہے بلکہ سیاحوں اور آس پاس کے رہائشیوں کی صحت کے لیے بھی بڑا خطرہ ہے۔

ساحل سمندر متعدد سرگرمیوں پر مشتمل ہے جس سے خاندان اور سیاح لطف اندوز ہوسکتے ہیں جیسے ساحل کے کنارے گھوڑے اور اونٹ کی سواری، تفریحی پارکس، ریستوراں، اور بحیرہ عرب میں تیراکی۔ ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹی مزید ریت ڈال کر کٹاؤ سے لڑ رہی ہے، جو ساحل سمندر کی شکل اور خصوصیات کو تبدیل کر سکتی ہے۔ ساحل سمندر پر شہری حکومت کی سنجیدگی اور غور و فکر کی ضرورت ہے، کیونکہ یہ علاقہ تیزی سے گندا اور ناخوشگوار ہوتا جا رہا ہے۔

سی ویو اپارٹمنٹس نامی ایک گیٹڈ رہائشی علاقہ کلفٹن بیچ کے ایک حصے کے قریب واقع ہے جسے سی ویو بیچ یا ‘سی ویو’ بھی کہا جاتا ہے۔ اس علاقے میں ایک اور کشش ڈ اور کلفٹن میں رہنے والے لوگوں کے لیے حال ہی میں تعمیر ہونے والا سینی پلیکس سینما ہے۔

شہر کے قریب دیگر ساحلوں میں سینڈ اسپٹ، ہاکس بے، اور پیراڈائز پوائنٹ، سونہرا پوائنٹ، فرانسیسی بیچ، کیپ ماؤنٹ، منورا بیچ شامل ہیں، لیکن کلفٹن بیچ ان سب میں سب سے زیادہ مقبول ہے۔

پیراڈائز پوائنٹ

کراچی کا ایک بڑا پرکشش مقام، پیراڈائز پوائنٹ، بحیرہ عرب پر، کراچی کا ایک ساحل ہے۔ یہ کراچی میں ماڑی پور روڈ کے ذریعے قابل رسائی ہے۔ اس ساحل کی مقبولیت کی بنیادی وجہ قدرتی محراب کے ساتھ بلوا پتھر کی چٹان ہے۔ بلوا پتھر کی چٹان پر لہروں کے دباؤ کی وجہ سے محراب سال بہ سال چوڑا ہوتا جا رہا ہے۔

ساحل سمندر متعدد سرگرمیوں پر مشتمل ہے جس سے خاندان اور سیاح لطف اندوز ہوسکتے ہیں جیسے ساحل کے کنارے گھوڑے اور اونٹ کی سواری، تفریحی پارکس، ریستوراں، اور بحیرہ عرب میں تیراکی مقبول ہیں۔ یہ چٹان چند سال پہلے بائیں طرف کی تصویر کی طرح تھی لیکن فی الحال یہ دائیں طرف کی تصویر کی طرح ہے۔

وزیر حویلی

وزیر حویلی بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کی جائے پیدائش ہے۔ یہ نیو نہم روڈ، کھارادر، کراچی میں واقع ہے۔ کبھی یہ سمجھا جاتا تھا کہ جھرک قائداعظم کی جائے پیدائش ہے لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ وزیر مینشن اصل جائے پیدائش ہے۔ محمد علی جناح کی بہن فاطمہ جناح کی 1960 کی دہائی میں لکھی گئی ایک کتاب میں ان کے بھائی کی زندگی کی نمایاں خصوصیات کا واضح طور پر ذکر کیا گیا ہے۔ اس کتاب میں واضح طور پر ان کے آبائی گاؤں پنیلی اور محمد علی جناح کی جائے پیدائش کا ذکر ہے۔

سنہ1874 میں، مسٹر جناح کے والد، جو اس وقت ایک تاجر تھے، نے کرایہ پر مکان حاصل کیا اور چند سال کے لیے یہاں آباد ہو گئے۔ یہ ایک دو منزلہ عمارت ہے جسے 1865 میں چونے اور جوٹ کے مارٹر مرکب کا استعمال کرتے ہوئے تعمیر کیا گیا تھا۔ یہ گھر آج کل ایک عجائب گھر ہے اور اس میں جناب محمد علی جناح کا سامان موجود ہے۔ یہ ایک قومی آرکائیو کے طور پر کام کرتا ہے۔ حکومت پاکستان نے اس عمارت کو ایک محفوظ قومی یادگار قرار دیا ہے۔ حکومت نے 2008 میں اس کی تزئین و آرائش کی اور اس کے بعد سے حکومت سندھ اس کی مالک ہے۔

میوزیم دنیا بھر سے آنے والے سیاحوں کے لیے ایک بہترین کشش ہے۔ اس عمارت کو میوزیم میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ میوزیم تین منزلوں پر مشتمل ہے۔ اس کے گراؤنڈ فلور پر ایک لائبریری ہے، جس میں وہ کتابیں ہیں جو کبھی جناب محمد علی جناح کے پاس تھیں۔ اس کے علاوہ لائبریری میں ایک ریڈنگ ہال ہے، جہاں لوگ بیٹھ کر وہ کتابیں پڑھ سکتے ہیں۔ عمارت کی پہلی اور دوسری منزل پر دو گیلریاں ہیں۔ پہلی منزل پر تین کمرے ہیں۔ ایک کمرہ مسٹر جناح کی جائے پیدائش ہے۔ باقی دو کمروں میں فرنیچر کا سامان ہے۔ یہ فرنیچر کا سامان مسٹر جناح کا تھا اور ان میں کابینہ کی کرسی، ایک صوفہ، ایک بستر، ایک دفتری کرسی اور دیگر سامان شامل تھا۔ دوسری گیلری میں نو شوکیسز ہیں جن میں مسٹر جناح کے آثار دکھائے گئے ہیں جن میں ان کے کپڑے، چشموں کا ایک جوڑا، واکنگ اسٹک، ایک مونوکل، ایک ریڈیو، ایک چاندی کا تالا، ایک سگریٹ نوشی کا پائپ، قانون سے متعلق کتابیں، قرآن پاک کا ایک نسخہ، اور بہت سی دوسری اشیاء جو کبھی اس کی ملکیت تھیں۔ یہ تمام چیزیں اس کی نفیس اور خوبصورت شخصیت کو ظاہر کرتی ہیں۔ اُس کے اثاثوں سے یہ احساس ہوتا ہے کہ وہ اپنی زندگی میں ایک اچھی طرح سے مرتب اور بہت پرجوش آدمی تھا۔ اس کے لباس سے یہ بات بالکل واضح ہے کہ اس کا ذائقہ بہت اچھا تھا اور وہ ایک نفیس آدمی تھا۔ دنیا کے عظیم لیڈروں میں سے ایک سے تحریک حاصل کرنے کے لیے لوگوں کو اس جگہ جانا چاہیے

موہٹا پیلس

موہٹہ پیلس پاکستان کے شہر کراچی میں واقع ہے۔ اس کی ملکیت برصغیر کے علاقے راجستھان سے تعلق رکھنے والے ایک ہندو تاجر شیورتن چندرٹن موہٹا کی ملکیت تھی۔ وہ اپنی گرمیاں اس محل میں خرچ کرتا تھا۔ یہ 1927 میں تعمیر کیا گیا تھا اور وہ صرف دو دہائیوں تک اس عمارت کا مالک ہوسکتا ہے۔ محل کا آرکیٹیکچرل اسٹائل ہند سارکین فن تعمیر پر مبنی ہے۔ آغا احمد حسین محل کا معمار تھا۔ گھر کی تعمیر کے لئے گیزری کے پیلے رنگ کے پتھر کے ساتھ مل کر گلابی جودھ پور پتھر کا استعمال کیا گیا تھا۔ یہ محل اس وقت راجستھان کے پتھروں سے بنائے گئے محلات کی روایت میں تعمیر کیا گیا تھا۔ یہ محل سمندر کے قریب واقع تھا اسی وجہ سے موہٹہ اپنی گرمیاں گزارنے کے لئے یہاں آتے تھے۔

محل کا رقبہ 18،500 مربع فٹ ہے۔ اس میں عمارت کے اگلے حصے میں کھڑکیاں ، پھولوں کے نقشوں ، پتھروں کی بریکٹ ، گنبد اور حیرت انگیز ریلنگ کے ساتھ بالسٹریڈس ہیں۔ عقبی علاقے میں داغ شیشے کی کھڑکیاں محراب ہیں جبکہ سامنے والے علاقے میں وہ نیلے رنگ کے ہیں۔ گراؤنڈ فلور تفریح ​​کے لئے ڈیزائن کردہ کمروں پر مشتمل ہے جبکہ پہلی منزل کے کمرے نجی سہولیات فراہم کرنے کے لئے ڈیزائن کیے گئے ہیں۔ چھت شدید سورج کی روشنی سے سایہ فراہم کرتی ہے۔ اس محل میں ساگون کی لکڑی کا استعمال کیا جاتا ہے جو محل کی خوبصورتی میں اضافہ کرتا ہے۔ دروازوں کے اندر طویل راہداری اور دروازے کھل رہے ہیں۔ اس عمارت میں تین منزلیں ہیں۔ عمارت کے شمال میں تہہ خانے میں ایک چھوٹا سا تالاب ہے۔ تہہ خانے میں وینٹیلیٹر موجود ہیں جو سورج کی روشنی کے لئے استعمال ہوسکتے ہیں۔ ایک دروازہ ہے ، جو ایک سرنگ میں کھلتا ہے جو ہندو مندر کی طرف جاتا ہے۔ یہ موہٹہ کی اہلیہ کو محفوظ گزرنے کے لئے بنایا گیا تھا۔ ایک بہت بڑا اسکوائر ہال ہے جو سات مختلف سوراخوں کے ذریعے راہداری میں کھلتا ہے۔ ٹاور کے ہر کونے پر آکٹاگونل ٹاورز ہیں۔ سامنے والے دونوں ٹاوروں کی سیڑھیاں چھت کی طرف جاتے ہیں۔ ہر آکٹاگونل ٹاور میں پانچ ونڈوز ہیں۔ پہلی منزل پر نجی کمرے بھی ہیں۔ اس فرش پر منسلک ریسٹ رومز اور ڈریسنگ روم والے چار بیڈروم وہاں موجود ہیں۔ پہلی منزل پر چھت بحیرہ عرب کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ چھت خوبصورت عمارت کے ساتھ ساتھ نیچے دیئے گئے زمین کی تزئین کا نظارہ بھی دیتی ہے۔

پاکستان کی آزادی کے بعد ، اس عمارت کو وزارت خارجہ امور نے استعمال کیا۔ 1964 میں ، فاطمہ جناح نے اس گھر میں رہنا شروع کیا۔ 1995 میں حکومت پاکستان کے ذریعہ اسے میوزیم میں تبدیل کیا گیا تھا۔ اس میوزیم میں 2 سے 2.5 سال کی مدت تک آرٹ نمائشیں موجود ہیں۔

فریئر ہال

فریئر ہال ان عمارتوں میں سے ایک ہے جو برطانوی نوآبادیاتی ڈیزائن پر تعمیر کی گئی ہے۔ یہ پاکستان کے کراچی میں واقع ہے۔ فریئر کا نام سر ہنری بارٹل ایڈورڈ فریئر کے نام کے بعد رکھا گیا ہے۔ انہوں نے سندھ کی معاشی ترقی کو فروغ دیا اور سندھی کو واحد سرکاری زبان بنانے میں مدد کی۔ عمارت کے آس پاس کے دو لان ہیں جنھیں “ملکہ کا لان” اور “کنگز لان” کہا جاتا ہے۔ ان کا نام اب باغ-جنہ کے نام سے رکھا گیا ہے۔ فریئر ہال پیلے رنگ کے چونا پتھر ، سرخ اور پیلے رنگ کے جنگشاہی سینڈ اسٹونز کا استعمال کرتے ہوئے وینیشین کیتھولک ڈیزائن پر تعمیر کیا گیا ہے۔ عام لوگ فریئر ہال کا دورہ کرسکتے ہیں۔ اس کے صحن میں ، کتابوں کی نمائشیں اور اسٹالز موجود ہیں جہاں لوگ یہ کتابیں خرید سکتے ہیں۔ لوگ یہاں سے پرنٹ پرانی کتابیں خریدنے کے اہل ہیں۔ ایک آڈیٹوریم اور ایک آرکیسٹرل گیلری عمارت کی پہلی منزل پر واقع ہے۔ لیاکوٹ میونسپل لائبریری فریئر ہال کی زیریں منزل کا مالک ہے۔ ماضی میں یہ براہ راست تھیٹر پرفارمنس ، عوامی جلسوں اور سماجی و ثقافتی اقدامات کے لئے استعمال ہوتا رہا ہے۔ ہال آرٹ کی نمائشوں کے لئے بھی استعمال ہوتا ہے۔ سرسبز سبز لانوں اور وکٹورین طرز کے چشمے فریئر ہال کے آس پاس ہیں۔

ہاکس بے

ہاکس بے وہ ساحل سمندر ہے جو پاکستان کے شہر کراچی میں واقع ہے۔ یہ کراچی سے 20 کلومیٹر جنوب مغرب کے فاصلے پر ہے۔ یہ قریب ہی ہاکس بے روڈ ہے۔ 1930 کی دہائی میں ، لارڈ ہاک نے یہاں ایک بیچ ہاؤس بنایا اور ہفتے کے آخر میں اس کا دورہ کیا۔ یہ ایک سیاحتی ریسورٹ ہے۔ لوگ اختتام ہفتہ پر یہاں لطف اٹھانے اور پکنک کے لئے آتے ہیں۔ یہ ایک سینڈی ساحل سمندر ہے اور کراچی سے تعلق رکھنے والے افراد کی ایک بڑی تعداد یہاں تیراکی ، ماہی گیری اور اونٹ کی سواری کے لئے آتی ہے۔ ساحل سمندر پر جھونپڑی ہیں جو کرایہ پر دستیاب ہیں۔ بحیرہ عرب کا نظارہ اس ساحل سمندر سے سانس لے رہا ہے۔ یہ دنیا کے ان چند ساحلوں میں سے ایک ہے جہاں سبز سمندری کچھوے انڈے دیتے ہیں۔

پورٹ گرینڈ

کراچی کی غیر سنجیدہ رات کی زندگی میں تازہ ترین اضافے میں سے ایک پورٹ گرینڈ ہے۔ یہ حصہ 19 ویں صدی کے آبائی جیٹی برج کے بندرگاہ کے محاذ کے ساتھ بنایا گیا ہے جو کراچی پورٹ ٹرسٹ کو کیماری سے جوڑتا ہے۔ یہ انوکھا علاقہ ہے جہاں کوئی ایک چھت کے نیچے خریداری ، ثقافتی ، کھانے اور واقعات سے لطف اندوز ہوسکتا ہے۔ پورٹ گرینڈ کو ایشیاء کی سب سے بڑی فوڈ اسٹریٹ کہا جاتا ہے لہذا کھانے کے مختلف اختیارات موجود ہیں۔

ون کلومیٹر تاریخی پل کو ایک الگ علاقے میں تبدیل کردیا گیا ہے جہاں صارفین مختلف قسم کے کھانوں سے لطف اندوز ہوسکتے ہیں اور اپنے پسندیدہ برانڈز سے خریداری کرسکتے ہیں۔ زائرین کے لئے دریافت کرنے کے لئے متعدد مقامات ہیں۔ جب آپ داخل ہوتے ہیں تو ایک اہم پرکشش مقام ایک عالمی معیار کا شاپنگ مال ہے جس میں مختلف قسم کے بین الاقوامی اور مقامی برانڈز ہیں۔ سیاحوں کے منتظر کئی دیگر دلکشی یہ ہیں:

نیپیر کا ہوٹل: آخری کھانے کے تجربے کے لئے ایک جگہ ہے جبکہ بیک وقت بندرگاہ کی شاندار نظر سے لطف اندوز ہوتی ہے

واکر کا گھاٹ: کروز پر مزیدار کھانوں سے لطف اندوز ہونے کی جگہ ہے

آرٹ لین: مناسب قیمت پر آرٹ کی حوصلہ افزائی کرنے کے لئے آئی ایس اے کی جگہ

ایشین ولیج: ایشین کھانوں اور ثقافتوں کو فروغ دینے کے لئے ایک تیمادار علاقہ ہے

متسیستری جگہ: سمندری کھانے میں خاصیت والی ایک سمندری جگہ ہے

نعش: مختلف قسم کے ریستوراں کے ساتھ کراچی کے ماحول کی طرح ایک گلی پیش کرتا ہے

ٹیمپل پوائنٹ: ایک صدی سے زیادہ پرانا مندر ہے جہاں سیاح ہندو ثقافت اور روایت کا تجربہ کرسکتے ہیں اور فوٹو گرافی کے لئے حیرت انگیز جگہ ہے

پورٹ گرینڈ اب سیاحوں کی توجہ کا مرکز بن گیا ہے۔ اس جگہ پر مختلف تقریبات، محافل موسیقی، مقابلے اور میلے منعقد ہوتے ہیں۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ پورٹ گرینڈ ایک محفوظ اور محفوظ جگہ رہے، داخلی راستہ صرف خاندانوں تک محدود ہے۔ کراچی کی نائٹ لائف کو زندہ رکھنے کے لیے اس کے اوقات شام 6 بجے سے رات 11 بجے تک ہیں۔

اوقات 6-11۔ داخلہ فیس روپے ہے۔ 300، اور یہ 12 سال سے کم عمر بچوں کے لیے مفت ہے۔

میدان

کراچی کے تفریحی مقامات میں ایک اور دلچسپ اضافہ ایرینا ہے جو ان ڈور گیمز کے لیے دلچسپ نئی سہولیات فراہم کرتا ہے۔ یہ ایک جدید ترین سہولت ہے جسے تفریحی مقصد کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ یہ نیوی میوزیم کے ساتھ کارساز میں واقع ہے۔ پیش کردہ مختلف اندرونی سہولیات ہیں:

آئس سکیٹنگ: پاکستان میں سب سے پہلے آئس سکیٹنگ انڈور ایریا پیش کرتا ہے۔
پینٹ بال: پاکستان میں ایک اور ابھرتا ہوا رجحان
ورچوئل باؤلنگ
آرکیڈ گیمز
نیٹ ورک گیمنگ زون
ورچوئل سمیلیٹر
راک چڑھنا
ون شاٹ منی گالف
انڈور کرکٹ، ڈیسرٹ/ماک ٹیل بار
ریستوراں اور کیفے
جمنازیم

اراکین کے لیے کئی پیکجز ہیں مثال کے طور پر ایرینا پریویلیج پلس جہاں وہ رعایت اور خصوصی فوائد حاصل کر سکتے ہیں۔ تاہم غیر ممبران کو بھی سہولیات سے استفادہ کرنے کی اجازت ہے۔ کھیلوں کی سہولیات کے علاوہ میدان میں پارٹی اور بینکوئٹ ہال بھی ہیں۔ اس کے مشہور ہالوں میں سے ایک جیڈ ہال ہے، جو پاکستان کا سب سے بڑا ڈھکنے والا ستون والا ہال ہے۔

منوڑہ

منوڑہ کراچی اور بحیرہ عرب کے درمیان ایک دفاعی رکاوٹ ہے۔ یہ جزیرہ ایک اہم مقام رکھتا ہے اور وقت کے ساتھ ساتھ تہذیبوں میں مقبول رہا ہے۔ کراچی واٹر فرنٹ سے کشتی کی سواری سے یہ تقریباً بیس منٹ کی مسافت پر ہے۔ جزیرے کے واپسی کے سفر کی قیمت تقریباً روپے ہے۔ 2000. منورا ایک متنوع ثقافتی مرکز ہے جو دنیا کے لیے نامعلوم ہے۔ ایک نظر میں ایک کیتھولک چرچ، ایک مندر، سکھ گرودوارہ اور مسجد دیکھ سکتے ہیں جہاں نمازی اپنی روزمرہ کی مذہبی رسومات ادا کرنے میں مصروف ہیں۔ اس جگہ کی تزویراتی اہمیت میں سے ایک یہ ہے کہ یہ وہ علاقہ تھا جہاں سکندر اعظم نے بابل کے قافلے کو منظم کرنے کے لیے ڈیرہ ڈالا تھا۔

منوڑہ پہلے ہی عوام میں پسند کی جانے والی جگہ ہے کیونکہ اس کے لمبے ریتیلے ساحل ہیں جو ہاکس بے اور سینڈ اسپیٹ کے دوسرے ساحلوں کے ساتھ مل جاتے ہیں۔اس جزیرے پر سیاحوں کی توجہ کا ایک اور مقام یہ ہے کہ پاکستان کا سب سے اونچا لائٹ ہاؤس جس کی اونچائی (91 فٹ) ہے اس کے جنوب مشرقی سرے پر واقع ہے۔ سیاحوں کو راغب کرنے کے لیے حکومت پاکستان نے سیاحوں کی سہولت کے لیے ہوٹل اور ریسٹورنٹ بنانے کے لیے کئی اقدامات کیے ہیں۔

سن وے لیگون واٹر پارک

سن وے لیگون پاکستان کا پہلا بین الاقوامی معیار کا واٹر پارک ہے۔ واٹر پارک گھارو ٹاؤن سے ملحق اور کراچی ایئرپورٹ سے تقریباً پچاس منٹ کے فاصلے پر واقع ہے۔

پارک کو بین الاقوامی معیارات کو مدنظر رکھتے ہوئے ڈیزائن کیا گیا ہے اور سواریوں کے لیے حفاظتی طریقہ کار پر خصوصی توجہ دی گئی ہے۔ پارک میں استعمال ہونے والے پانی کے معیار پر خصوصی توجہ دی جاتی ہے۔ اسپین سے درآمد کیے گئے خصوصی فلٹریشن پلانٹس کے ذریعے پانی کو مسلسل فلٹر اور ٹریٹ کیا جاتا ہے جو پانی کو چمکدار نیلا رکھتے ہیں۔بالغوں کے لیے داخلہ ٹکٹ 700 روپے ہے جبکہ 3 سے 12 سال کی عمر کے بچوں کے لیے ٹکٹ کی قیمت روپے ہے۔ 600. سنلاگون واٹر پارک کسی بھی بین الاقوامی معیار کے واٹر پارک کے متوازی کھڑا ہے لہذا یہ سیاحوں کے لیے ایک مقبول مقام ہے۔

واٹر پارک میں پیش کردہ مختلف سہولیات ہیں

چار سلائیڈوں کے ساتھ میگا پول
تین سلائیڈوں کے ساتھ بچوں کا پول
واٹر چینل
سنٹرل پول
لیڈیز پول
فری فال پول
سرپل پول
سست پول (ایشیا کا سب سے بڑا)
بچے زمین کھیلتے ہیں۔

کراچی چڑیا گھر

کراچی چڑیا گھر ملک کے قدیم ترین چڑیا گھروں میں سے ایک ہے۔ یہ 1878 میں قائم کیا گیا تھا۔ یہ نشتر روڈ اور سر آغا خان 3 روڈ پر واقع ہے۔ داخلے کے ٹکٹ کی قیمت 10 روپے صرف ایک معمولی رقم ہے۔

سیاحوں کے لیے مختلف پرکشش مقامات ہیں

ہاتھی گھر: جہاں پچاس سال سے زیادہ عمر کے ہاتھی پائے جاتے ہیں۔

نیچرل ہسٹری میوزیم: زائرین کو راغب کرنے کے لیے اس علاقے کو نئے سرے سے بنایا گیا ہے۔ ڈسپلے ایریا پر آپ بھرے جانور، کھالیں، سینگ، سینگ اور پنکھ دیکھ سکتے ہیں۔ حیوانیات کے طلباء تحقیق اور تعلیمی مقاصد کے لیے چڑیا گھر کے اس حصے کو استعمال کرتے ہیں۔

ریپٹائل ہاؤس: یہ پاکستان کے چند رینگنے والے گھروں میں سے ایک ہونے کی اہمیت رکھتا ہے۔ سانپوں اور چھپکلیوں کی تقریباً 13 اقسام ہیں۔

مغل گارڈن: یہ 1970 میں تعمیر کیا گیا تھا۔ سرسبز و شاداب لان اور پھولوں کی مختلف اقسام، اسے دیکھنے والوں کے لیے ایک ناقابل یقین جگہ بناتی ہیں۔

کراچی میونسپل ایکویریم: یہ 1953 میں قائم کیا گیا تھا۔ ایکویریم میں تقریباً 28 ٹینک ہیں جن میں تقریباً 30 اقسام کی 300 مچھلیاں ہیں۔ اس علاقے میں ہر سال پھولوں کی مختلف نمائشیں لگائی جاتی ہیں اس لیے یہ سیاحوں کے لیے ایک مشہور مقام ہے۔

سفید شیر: چڑیا گھر میں حالیہ اضافے میں سے ایک سفید شیر ہے جو 2012 میں خریدے گئے تھے۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram