10 محرم کے بعد کربلا میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے اہل خانہ کے ساتھ کیا ہوا۔

10 محرم کے بعد کربلا میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے اہل خانہ کے ساتھ کیا ہوا۔

دس محرم کے بعد کربلا میں رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے اہل خانہ کے ساتھ کیا ہوا۔

 

 

سب سے بڑی قربانی، محرم میں کربلا، یقیناً کوئی بھی مسلمان، چاہے وہ شیعہ ہو یا سنی، کبھی نہیں بھول سکتا۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے بے بس خاندان پر ڈھائے جانے والے اس قدر عبرتناک ظلم کو نہ تو کبھی جائز قرار دیا جا سکتا ہے اور نہ ہی اس سے جذباتی طور پر لاتعلقی کا اظہار کیا جا سکتا ہے۔ محرم اور کربلا ساتھ ساتھ چلتے ہیں، جیسے امام حسین (ع) اور پیغمبر اکرم (ص) نے کیا.

دس محرم کے دن جب خاندانِ رسول (ص) کے خیموں کے آخری جنگجو حضرت امام حسین (ع) جنگ کے لیے نکلے تو آپ نے دانتوں اور ناخنوں سے جنگ کی لیکن دشمن کے مقابلے میں ان کی تعداد بہت زیادہ تھی۔ امام حسین علیہ السلام جنگ میں اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور تیروں سے شہید کیا ہوا جسم زمین پر پڑا رہا۔

یزید کی فوج کے جرنیل شمر نے امام حسین (ع) کا سر کاٹ کر نیزے سے چھید کر اپنے ساتھ واپس لے لیا۔ جب امام حسین (ع) کا گھوڑا خیموں میں واپس آیا تو وہ خون آلود تھا. عورتیں امام حسین (ع) کے جسد خاکی کو ڈھونڈتی ہوئی میدان کی طرف بھاگیں، ان میں ان کی بیٹی چار سالہ بی بی سکینہ بھی تھیں۔

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے خاندان کے ساتھ غیر انسانی سلوک

اس کے بعد یزید کی جابر فوجیں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر کے مقدس خیموں میں داخل ہوئیں اور جو کچھ انہوں نے دیکھا اسے لوٹ لیا، یہاں تک کہ خواتین کے حجاب بھی چھین لیے۔ شمر جو کہ انسان کی بدترین شکل ہے، بھی خیموں میں داخل ہوا، اس نے چھوٹی بی بی سکینہ کو روتے ہوئے دیکھا تو اسے تھپڑ مارا اور اس کے کانوں سے اس کی بالیاں اتار ڈالیں، جس سے خون بہہ رہا تھا۔

بی بی سکینہ بھاگ کر میدان جنگ میں آگئیں، جب کہ یزید کی فوج نے خیموں کو جلانا شروع کر دیا۔ امام حسین (ع) کی بہن بی بی زینب اور امام حسین (ع) کی اہلیہ بی بی رباب چھوٹی بی بی سکینہ کی تلاش میں نکلیں اور انہیں اپنے والد کی لاش پر پایا۔ وہ اپنے بابا کے سینے پر سر رکھ کر روتی رہیں۔

بی بی زینب نے سکینہ سے پوچھا: ’’اے سیدہ سکینہ! تم نے اپنے باپ کو کیسے پہچانا؟ کسی شخص کو اس کے چہرے یا پہننے والے کپڑوں سے پہچانا جا سکتا ہے۔ تمہارے باپ کا سر قلم کر دیا گیا ہے اور ان کے کپڑے خون کے سرخ داغوں سے ڈھکے ہوئے ہیں۔

سکینہ نے معصومیت سے جواب دیا: ’’میں اپنے والد کو بتانا چاہتی تھی کہ لوگوں نے میرے ساتھ کیا سلوک کیا۔ میں انہیں بتانا چاہتی تھا کہ شمر نے وہ بالیاں کیسے چھین لیں جو میرے والد نے مجھے اتنی محبت سے دی تھیں۔ میں انہیں بتانا چاہتی تھا کہ اس نے کیسے میرے کانوں کو پھاڑ کر میرے کانوں کے لوتھڑے بنا ڈالے اور خون بہہ رہا تھا۔

میں انہیں بتانا چاہتی تھا کہ جب میں درد سے رو رہی تھی تو اس درندے نے مجھے کس طرح بے رحمی سے تھپڑ مارا تھا۔ جب میں صحرا میں بے مقصد دوڑ رہی تھا تو میں نے اپنے والد کی آواز سنی ہے جو مجھے کہہ رہے ہیں کہ وہ یہاں ہیں، الایا الیہ سکینہ۔

میں نے آواز کا تعاقب کیا اور میں نے انہیں وہاں پڑا ہوا پایا۔ میں نے انہیں سب کچھ بتایا اور پھر مجھے لگا جیسے میں آخری بار ان کے سینے پر سو رہی ہوں جس طرح میں نے ہمیشہ کیا تھا ۔ چنانچہ میں نے اپنا سر ان کے سینے پر رکھا اور آپ کے آنے تک سو گئی۔

/ Published posts: 3237

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram