اس پاکستانی اداکار نے شاہ رخ خان کے والد کا کردار ادا کرنے کے لیے 1 روپے وصول کیےتھے

اس پاکستانی اداکار نے شاہ رخ خان کے والد کا کردار ادا کرنے کے لیے 1 روپے وصول کیےتھے

اس پاکستانی اداکار نے شاہ رخ خان کے والد کا کردار ادا کرنے کے لیے 1 روپے وصول کیے

 

 

 

بالی ووڈ سپر اسٹار شاہ رخ خان کی اوم شانتی اوم سب کے دلوں میں ایک خاص مقام رکھتی ہے۔ فرح خان کی ہدایت کاری میں 2007 کی ملٹی اسٹارر فلم میں دیپیکا پڈوکون کی پہلی فلم بھی تھی۔ ان کی کیمسٹری کو شائقین اور ناقدین یکساں پسند کرتے تھے۔

اب، فلم سے متعلق تفصیل کا ایک دلچسپ حصہ آن لائن منظر عام پر آیا ہے۔ یہ پاکستانی اداکار جاوید شیخ کے بارے میں ہے۔ انہوں نے فلم میں شاہ رخ خان کے والد کا کردار ادا کیا تھا۔ جاوید شیخ نے گلوس وغیرہ کو انٹرویو دیتے ہوئے فلم میں اپنے کردار اور فیس کے بارے میں بتایا۔

اسکرین پر شاہ رخ خان کے والد کا کردار ادا کرنے کو اعزاز قرار دیتے ہوئے اداکار نے کہا کہ ’’بات یہ ہے کہ سب سے پہلے یہ میرے لیے اعزاز کی بات ہے کہ میں شاہ رخ خان کے والد کا کردار ان کی اب تک کی سب سے بڑی فلم میں کر رہا ہوں۔ ہندوستان میں بہت سارے اداکار ہیں۔ آپ کسی کو بھی منتخب کریں اور وہ یہ کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہوں گے۔ لیکن شاہ رخ خان اور فرح خان کا میرا انتخاب میرے لیے اعزاز کی بات ہے۔

اوم شانتی اوم کے معاوضے کے بارے میں جاوید شیخ نے انکشاف کیا کہ انہوں نے اپنے کردار کے لیے کوئی رقم نہ لینے کا فیصلہ کیا۔’جب ٹیم کے منیجر نے میرے پاس آکر پوچھا تو میں نے ان سے کہا، ‘میں پیسے نہیں لوں گا۔ شاہ رخ کے والد کا کردار ادا کرنا میرے لیے اعزاز کی بات ہے، فرح خان اور شاہ رخ کی وجہ سے میں ایک روپیہ بھی نہیں لیتا، جب انہوں نے اصرار کیا تو میں نے ایک روپیہ لیا، حالانکہ انہوں نے مجھے بہت اچھی رقم دی۔ ، ’68 سالہ اداکار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا۔

سوشل میڈیا پر لوگوں نے جاوید شیخ کو خوب داد دی ہے۔ ایک مداح نے کہا کہ وہ ‘سب سے زیادہ عاجز اور معمولی’ ہیں۔ اس درمیان میں، کچھ اداکار کے انکشاف سے خوش نہیں تھے۔

جاوید شیخ اکشے کمار اور کترینہ کیف اسٹارر نمستے لندن کا بھی حصہ رہ چکے ہیں۔ دریں اثنا، شاہ رخ خان ایٹلی کے جوان کے لیے تیاری کر رہے ہیں۔ فلم ستمبر میں ریلیز ہوگی۔ اداکار کے پاس ڈنکی بھی پائپ لائن میں ہے۔

/ Published posts: 3238

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram