Sir Sikandar Hayat Khan

In BIOGRAPHY
October 06, 2022

Sir Sikandar Hayat Khan

Sikandar Hayat Khan was born on June 5, 1892 in Multan. He belonged to the Khattar Tribe of Attock. He was the son of Nawab Muhammad Hayat Khan, a police inspector in the British Government. Later, he became Tehsildar and at last Assistant Commissioner.

He visited Aligarh for education and was admitted to Oriental College and high school. Sikandar Hayat visited England for higher education but came back without a degree. He joined the British Army in WW2 and reached the position of Captain. After the war, he started his business and entered local politics. He became managing director of several companies named the Wah Tea Estate, the Amritsar-Kasur Railway Company, the people’s bank of Northern India, the Sialkot Narowal Railway, the Wah stone, and Lime Company, and lots of others.

Political career:

Sir Sikandar Hayat Khan joined local politics when he returned from England. He actively participated in Punjab politics at an important time. He was elected as a member of the Punjab legislative assembly from the Attock District in 1920. He joined the secular unionist party of Sir Fazl-i-Hussain. It represented the interests of the landed gentry and landlords of Punjab including Muslims, Sikhs, and Hindus. Sikander Hayat got the victory in the elections of 1937 and has become the premier of Punjab. He allotted many reforms in favor of Punjabi Zamindar.

Muslim League and Lahore Resolution:-

Sir Sikandar Khan joined AIML in the wake of the Jinnah-Sikander Pact in 1937. He believed in the policy of cooperation with the British for the independence of India and tried to keep up a balance in the Punjab form of government. His inclusion in AIML upgraded Muslim morale. He guided other unionist members to counter congress totalitarianism. He was one of the chief supporters and designers of the Lahore Resolution. He resigned from National Defense Council on Jinnah’s recommendation in 1941. He also opposed Quit India Movement in 1942.

Role during Second World War:-

Sir Sikandar supported the British struggle against nazi Germany in the Second war. He believed in cooperating with the Brits Government because it would help in independence. He was active in the recruitment of troops from Punjab in the Second war as a part of the ‘War Effort’. The Muslim League leadership agreed together with his perspective and cooperated with British Raj.

Political Contributions of Sikandar Hayat Khan:-

Sikandar Hayat Khan was a good administrator. Sir Sikandar showed his strengths in the local administration in 1920. It resulted in his contacts with the unionist party. Unionist Party was a coalition of Hindu farmers in east Punjab and Muslim feudal and landowners in West Punjab. Sikandar was also appointed because of the revenue member of the Punjab Government. He succeeded Sir Fazl-e- Hussain, the leader of the Unionist Party, and claimed victory in the first election of the Punjab legislative assembly in 1937. Sikandar remained the premier of Punjab till his death.

His main contribution was the strong opposition of the Unionist Party toward the division of Punjab. His Administration was admired attributable to various innovative types of taxation. This alarmed the moneylenders. He appealed for the collection of 1 rupee tax from all Muslims to renovate the Badshahi Mosque. due to this, he had been buried at the doorstep of the Mosque.

Vision on the partition:-

Sikandar Hayat Khan viewed India as a collection of states including the Muslim majority and Hindu majority areas. Sikandar Hayat khan proposed a scheme of a loose federation for Indio in 1939. India should be divided into regional and zonal legislatures to cope with local people’s problems while the state might still remain united. Punjab couldn’t ignore the difficulty of partition because it was a Muslim-majority area and Jinnah includes a strong foothold. Lahore Resolution promised adequate and effective safeguards for the minorities to protect their politics, culture, religion, and economics. Jinnah also made efforts to avoid a clash between the Muslim Governor and Muslim-led parties to confirm the protection of Minorities. Sikandar Hayat, during this context, will be thought to be a robust voice for Punjab.

Death:-

He died in December 1942. he’s buried outside the Badshahi mosque. His numerous works were left half especially British war efforts and his attempt to save Punjab from communal friction.

سر سکندر حیات خان

سکندر حیات خان 5 جون 1892 کو ملتان میں پیدا ہوئے۔ ان کا تعلق اٹک کے کھٹر قبیلے سے تھا۔ وہ برطانوی حکومت میں پولیس انسپکٹر نواب محمد حیات خان کے بیٹے تھے۔ بعد میں وہ تحصیلدار اور آخر میں اسسٹنٹ کمشنر بن گئے۔ وہ تعلیم کے لیے علی گڑھ گئے اور اورینٹل کالج اور ہائی اسکول میں داخلہ لیا۔ سکندر حیات اعلیٰ تعلیم کے لیے انگلینڈ گئے لیکن بغیر ڈگری کے واپس آگئے۔ وہ دوسری جنگ عظیم میں برطانوی فوج میں شامل ہوئے اور کیپٹن کے عہدے تک پہنچے۔ جنگ کے بعد انہوں نے اپنا کاروبار شروع کیا اور مقامی سیاست میں قدم رکھا۔ وہ واہ ٹی اسٹیٹ، امرتسر-قصور ریلوے کمپنی، پیپلز بینک آف ناردرن انڈیا، سیالکوٹ نارووال ریلوے، واہ سٹون اور لائم کمپنی، اور بہت سی دوسری کمپنیوں کے منیجنگ ڈائریکٹر بنے۔

سیاسی کیریئر

سر سکندر حیات خان انگلینڈ سے واپس آتے ہی مقامی سیاست میں شامل ہو گئے۔ انہوں نے اہم وقت میں پنجاب کی سیاست میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ وہ 1920 میں ضلع اٹک سے پنجاب لیجسلیٹو کونسل کے ممبر منتخب ہوئے، انہوں نے سر فضل حسین کی سیکولر یونینسٹ پارٹی میں شمولیت اختیار کی۔ یہ پنجاب کے جاگیرداروں اور جاگیرداروں بشمول مسلمانوں، سکھوں اور ہندوؤں کے مفادات کی نمائندگی کرتا تھا۔ سکندر حیات 1937 کے انتخابات میں کامیاب ہوئے اور پنجاب کے وزیر اعظم بن گئے۔ اس نے پنجابی زمیندار کے حق میں بہت سی اصلاحات کیں۔

مسلم لیگ اور قرارداد لاہور
سر سکندر خان نے 1937 میں جناح سکندر معاہدہ کے نتیجے میں اے آئی ایم ایل میں شمولیت اختیار کی۔ وہ ہندوستان کی آزادی کے لیے انگریزوں کے ساتھ تعاون کی پالیسی پر یقین رکھتے تھے اور پنجاب کے سیاسی نظام میں توازن برقرار رکھنے کی کوشش کرتے تھے۔ اے آئی ایم ایل میں ان کی شمولیت سے مسلمانوں کے حوصلے بلند ہوئے۔ انہوں نے دیگر یونینسٹ ممبران کو کانگریس کی مطلق العنانیت کا مقابلہ کرنے کی رہنمائی کی۔ وہ قرارداد لاہور کے اہم حامیوں اور معماروں میں سے ایک تھے۔ انہوں نے 1941 میں جناح کی سفارش پر نیشنل ڈیفنس کونسل سے استعفیٰ دے دیا اور 1942 میں ہندوستان چھوڑو تحریک کی بھی مخالفت کی۔

دوسری جنگ عظیم کے دوران کردار

سر سکندر نے دوسری جنگ عظیم میں نازی جرمنی کے خلاف برطانوی جدوجہد کی حمایت کی۔ وہ برطانوی حکومت کے ساتھ تعاون کرنے پر یقین رکھتے تھے کیونکہ اس سے آزادی میں مدد ملے گی۔ وہ دوسری جنگ عظیم میں ‘جنگی کوششوں’ کے حصے کے طور پر پنجاب سے فوجیوں کی بھرتی میں سرگرم تھا۔ مسلم لیگی قیادت نے ان کے نقطہ نظر سے اتفاق کیا اور برطانوی راج کے ساتھ تعاون کیا۔

سکندر حیات خان کی سیاسی خدمات
سکندر حیات خان ایک بہترین منتظم تھے۔ سر سکندر نے 1920 میں مقامی انتظامیہ میں اپنی طاقت کا مظاہرہ کیا۔ اس کے نتیجے میں ان کے یونینسٹ پارٹی سے رابطے ہو گئے۔ یونینسٹ پارٹی مشرقی پنجاب میں ہندو کسانوں اور مغربی پنجاب کے مسلم جاگیرداروں اور زمینداروں کا اتحاد تھا۔ سکندر کو پنجاب حکومت کا ریونیو ممبر بھی تعینات کیا گیا۔ وہ یونینسٹ پارٹی کے رہنما کے طور پر سر فضل حسین کے بعد کامیاب ہوئے اور 1937 میں پنجاب قانون ساز اسمبلی کے پہلے الیکشن میں کامیابی کا دعویٰ کیا۔ سکندر اپنی موت تک پنجاب کے وزیر اعظم رہے۔

ان کی اہم سیاسی شراکت یونینسٹ پارٹی کی پنجاب کی تقسیم کی شدید مخالفت تھی۔ ان کی انتظامیہ کو ٹیکس کی مختلف اقسام کی وجہ سے سراہا گیا۔ اس نے ساہوکاروں کو گھبرایا۔ انہوں نے بادشاہی مسجد کی تزئین و آرائش کے لیے تمام مسلمانوں سے ایک روپیہ ٹیکس وصول کرنے کی اپیل کی۔ جس کی وجہ سے انہیں مسجد کی دہلیز پر دفن کر دیا گیا۔

تقسیم پر وژن

سکندر حیات خان نے ہندوستان کو مسلم اکثریتی اور ہندو اکثریتی علاقوں سمیت ریاستوں کا مجموعہ سمجھا۔ سکندر حیات خان نے 1939 میں انڈیا کے لیے ایک ڈھیلے فیڈریشن کی اسکیم تجویز کی۔ پنجاب تقسیم کے معاملے کو نظر انداز نہیں کر سکتا تھا کیونکہ یہ مسلم اکثریتی علاقہ تھا اور جناح کے قدم مضبوط ہیں۔ قرارداد لاہور میں اقلیتوں کو ان کی سیاست، ثقافت، مذہب اور معاشیات کے تحفظ کے لیے مناسب اور موثر تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا گیا تھا۔ جناح نے اقلیتوں کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے مسلم گورنر اور مسلم قیادت والی جماعتوں کے درمیان تصادم سے بچنے کی کوششیں بھی کیں۔ اس تناظر میں سکندر حیات کو پنجاب کی ایک مضبوط آواز قرار دیا جا سکتا ہے۔

موت
ان کا انتقال دسمبر 1942 میں ہوا۔ وہ بادشاہی مسجد کے باہر مدفون ہیں۔ ان کے بے شمار کام ادھورے رہ گئے خاص طور پر برطانوی جنگی کوششیں اور پنجاب کو فرقہ وارانہ تصادم سے بچانے کی کوشش جو کہ سر فہرست ہیں۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram