Muhammad Bin Tughluq

In BIOGRAPHY
October 01, 2022
Muhammad Bin Tughluq

Muhammad Bin Tughluq

Muhammad bin Tughlaq Shah generally called Muhammad Tughlaq, who ascended the throne after the death of his father has been a puzzle to historians. He received an honest liberal education and was highly gifted and accomplished.

He was well versed in logic, philosophy, mathematics, astronomy, and physical sciences and also had the knowledge of drugs and dialectics. He was generous and possessed great purity of character but his rule brought misery to the people and materially weakened the Government.

His reign coincided with a protracted period of drought and a protracted famine which in its intensity and extent was one of the worst the subcontinent has known. The rains are said to possess failed for seven successive years (1335-1342) and there was widespread famine.

The king tried to handle things by opening poor houses and distributing grain freely but the matter was beyond his resources and therefore the people suffered heavily. This created many difficulties for the king but his misfortunes weren’t all thanks to natural and unavoidable causes. While he was an interesting man he focused more on fantastic ideas, always thinking out of new measures but lacked two essential qualities to be a successful Sultan Practical judgment and common sense, moreover, an impatient man. He tried to require bold steps to enhance the condition of his people and administrative system but it resulted in great follies and failure.

Muhammad Tughlaq tried to improve revenue administration. He ordered the entire compilation of land assessment records. The work was completed with intense supervision and therefore the system began to work smoothly. Unrest rose among peasants of the fertile Doab region once they were ordered to pay tax 50 to the next than that of Alaudin Khilgi’s time. The time was incorrect because the peasants were faced with a terrible famine. This whole process caused damage to Sultan’s prestige.

Sultan Muhammad Tughlaq tried to introduce some new monetary techniques. The prolonged famine and also the expensive wars had severely strained the exchequer. To deal with the situation, the king issued brass and copper tokens in situ of silver coins. It had been designed to be a good token currency however the measure wasn’t welcome to the people, particularly the commercial class. The failure was thanks to the inefficiency of the govt to stop the difficulty of forgery. It reached such a level that individuals were manufacturing coins in their own homes. As Barani says, “every Hindu’s house became a mint”. The king had the sense to acknowledge his failure and also the token currency was withdrawn from circulation after three or four years. Its introduction and failure, however, neither enhanced public confidence in the Sultan nor did it restore economic prosperity to the country.

In 1327, he decided to alter the seat of the state to a more centralized position to manage the rebellions in the South. He selected the city of Divagiri for this purpose and renamed it Daulatabad. He made it a fabulous city and provided a highway connecting Delhi to Daulatabad together with an everyday post. Then he called upon the Muslim inhabitants of Delhi to migrate to the new capital, but they were reluctant to urge settled in an unfamiliar land. The king adopted stern measures to enforce his decree and ordered a whole evacuation. But his orders brought great suffering to the people. Many perished on the long route of 700 miles to Daulatabad.

The king’s decision was much of strategic importance. Consolidation of Muslim rule in the South was perhaps his main consideration, and there’s little doubt that the migration of a large Muslim population drawn from all sections of society established Muslim rule in that part of the subcontinent. After some time the Sultan allowed those that so desired to return to Delhi, but many of those who had gone to the South stayed on and were a source of strength to the Muslim rulers of the south. Other measures of the king were equally ill-conceived and ill-fated. He arrange to interfere in the affairs of Transoxiana and Persia, with a view perhaps to annexing some areas, and therefore the projected conquest of Tibet in 1337-38 ended in fiasco and considerable loss of life and money.

Muhammad Tughlaq’s policy toward Sufi saints was as much different from his other policies. He thought the position and esteem that Sufi saints held was a danger to the throne so he took various steps to interrupt their power. He dispersed them or, otherwise persecuted them. He sharply discouraged enthusiasm for the contemporary leading Sufis. The result of this systematic policy was that the influence of the Sufis in Delhi sharply declined. Muhammad Tughlaq’s policy towards the Sufis at the capital was primarily dictated by political consideration, but consistent with Barani, it had been also thanks to his association with skeptics and philosophers.

There were widespread rebellions and therefore the vast empire started breaking apart. In 1335 Ma’bar became independent, followed by Bengal three years later. In 1346 Vijayanagar became the nucleus of a powerful Hindu state. In the same year, Gujrat and Kathiawar revolted, but the Sultan was able to quell the rebellions in these two areas. Next, it absolutely was the turn of Sind, and, in1351, the king was marching towards Thatta to put down the revolt there when he fell ill and died. As Bada’uni says: “The king was free of his people and that they from their king.”

محمد بن تغلق

محمد بن تغلق شاہ، جسے عام طور پر محمد تغلق کے نام سے جانا جاتا ہے، جو اپنے والد کی وفات پر تخت پر بیٹھا، مورخین کے لیے ایک معمہ بنا ہوا ہے۔ اس نے ایک اچھی لبرل تعلیم حاصل کی، اور وہ انتہائی باصلاحیت اور قابل تھا۔ وہ منطق، فلسفہ، ریاضی، فلکیات اور طبیعیات پر عبور رکھتے تھے، طب اور جدلیات کا بھی علم رکھتے تھے۔ وہ سخی اور پاکیزہ سیرت کے مالک تھے لیکن اس کی حکمرانی نے لوگوں کو تکلیفیں پہنچائیں اور حکومت کو مادی طور پر کمزور کردیا۔

اس کا دورِ حکومت ایک طویل عرصے کے مسودے اور ایک طویل قحط کے ساتھ موافق تھا جو اپنی شدت اور حد تک برصغیر کے بدترین حالات میں سے ایک تھا۔ کہا جاتا ہے کہ بارشیں لگاتار سات سال (1335-1342) تک ناکام رہیں اور وسیع پیمانے پر قحط پڑا۔ بادشاہ نے غریبوں کے گھر کھول کر اور آزادانہ اناج تقسیم کر کے حالات سے نمٹنے کی کوشش کی لیکن مسئلہ اس کے وسائل سے باہر تھا اور لوگوں کو بہت زیادہ نقصان اٹھانا پڑا۔ اس سے بادشاہ کے لیے بہت سی مشکلات پیدا ہوئیں لیکن اس کی بدقسمتی قدرتی اور ناگزیر وجوہات کی وجہ سے نہیں تھی۔ جب وہ ایک قابل ذکر آدمی تھا تو اس نے لاجواب خیالات پر زیادہ توجہ مرکوز کی، ہمیشہ نئے اقدامات سے ہٹ کر سوچا لیکن ایک کامیاب سلطان بننے کے لیے دو ضروری خصوصیات کی کمی تھی عملی فیصلہ اور عقل، اس کے علاوہ، ایک بے صبرا آدمی۔ انہوں نے اپنے لوگوں اور انتظامی نظام کی حالت کو بہتر بنانے کے لیے جرات مندانہ اقدامات کرنے کی کوشش کی لیکن اس کا نتیجہ بڑی حماقتوں اور ناکامیوں کی صورت میں نکلا۔

محمد تغلق نے ریونیو ایڈمنسٹریشن کو بہتر بنانے کی کوشش کی۔ انہوں نے زمین کی تشخیص کے ریکارڈ کو مکمل مرتب کرنے کا حکم دیا۔ سخت نگرانی کے ساتھ کام مکمل ہوا اور نظام آسانی سے کام کرنے لگا۔ دوآب کے زرخیز علاقے کے کسانوں میں اس وقت بے چینی پھیل گئی جب انہیں علاؤالدین خلگی کے زمانے کے مقابلے 50 فیصد زیادہ ٹیکس ادا کرنے کا حکم دیا گیا۔ وہ وقت غلط تھا کیونکہ کسانوں کو خوفناک قحط کا سامنا تھا۔ اس سارے عمل نے سلطان کے وقار کو نقصان پہنچایا۔

سلطان محمد تغلق نے چند نئی مالیاتی تکنیکیں متعارف کرانے کی کوشش کی۔ طویل قحط اور مہنگی جنگوں نے سرکاری خزانے کو بری طرح متاثر کیا تھا۔ صورت حال سے نمٹنے کے لیے بادشاہ نے چاندی کے سکوں کی جگہ پیتل اور تانبے کے نشانات جاری کیے۔ اسے ایک موثر ٹوکن کرنسی کے طور پر ڈیزائن کیا گیا تھا تاہم یہ اقدام لوگوں خاص طور پر تجارتی طبقے کے لیے خوش آئند نہیں تھا۔ جعلسازی کے معاملے کو روکنے میں حکومت کی نااہلی کی وجہ سے ناکامی ہوئی۔ یہ اس حد تک پہنچ گیا کہ لوگ اپنے اپنے گھروں میں سکے بنا رہے تھے۔ جیسا کہ بارانی کہتے ہیں، ’’ہر ہندو کا گھر ٹکسال بن گیا‘‘۔ بادشاہ کو اپنی ناکامی کو تسلیم کرنے کا احساس ہوا اور تین یا چار سال بعد ٹوکن کرنسی کو گردش سے واپس لے لیا گیا۔ تاہم اس کے تعارف اور ناکامی نے نہ تو سلطان پر عوام کا اعتماد بڑھایا اور نہ ہی اس نے ملک میں معاشی خوشحالی بحال کی۔

1327 میں، اس نے جنوب میں بغاوتوں پر قابو پانے کے لیے حکومت کی نشست کو زیادہ مرکزی حیثیت میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس نے اس مقصد کے لیے دیواگیری شہر کا انتخاب کیا اور اس کا نام دولت آباد رکھا۔ اس نے اسے ایک شاندار شہر بنایا اور دہلی کو دولت آباد سے ملانے والی ایک شاہراہ کے ساتھ باقاعدہ چوکی بھی فراہم کی۔ اس کے بجائے اس نے دہلی کے مسلمان باشندوں کو نئے دارالحکومت کی طرف ہجرت کرنے کی دعوت دی، لیکن وہ کسی غیر مانوس سرزمین میں آباد ہونے سے گریزاں تھے۔ بادشاہ نے اپنے فرمان کو نافذ کرنے کے لیے سخت اقدامات کیے اور مکمل انخلا کا حکم دیا۔ لیکن اس کے حکم نے لوگوں کو بہت تکلیفیں پہنچائیں۔ دولت آباد تک 700 میل کے طویل راستے میں بہت سے لوگ مارے گئے۔

بادشاہ کا فیصلہ بہت زیادہ تزویراتی اہمیت کا حامل تھا۔ جنوب میں مسلم حکمرانی کا استحکام شاید ان کا بنیادی خیال تھا، اور اس میں کوئی شک نہیں کہ معاشرے کے تمام طبقات سے تعلق رکھنے والی ایک بڑی مسلم آبادی کی ہجرت نے برصغیر کے اس حصے میں مسلم حکمرانی قائم کی۔ کچھ عرصے کے بعد سلطان نے ان لوگوں کو دہلی واپس جانے کی اجازت دے دی، لیکن بہت سے لوگ جو جنوب میں چلے گئے تھے وہ قائم رہے اور جنوب کے مسلمان حکمرانوں کے لیے طاقت کا باعث تھے۔ بادشاہ کے کچھ اور اقدامات بھی اتنے ہی غلط اور بدقسمت تھے۔ ٹرانسکسیانا اور فارس کے معاملات میں مداخلت کرنے کا اس کا منصوبہ، شاید کچھ علاقوں کو ضم کرنے اور 1337-38 میں تبت کی فتح کا منصوبہ ناکامی اور جان و مال کے کافی نقصان میں ختم ہوا۔

صوفی بزرگوں کے بارے میں محمد تغلق کی پالیسی ان کی دیگر پالیسیوں سے بہت مختلف تھی۔ اس نے سوچا کہ صوفی بزرگوں کا عہدہ تخت کے لیے خطرہ ہے اس لیے اس نے ان کی طاقت کو توڑنے کے لیے مختلف اقدامات اٹھائے۔ اس نے انہیں منتشر کیا یا، دوسری صورت میں انہیں ستایا۔ اس نے عصر حاضر کے سرکردہ صوفیاء کے لیے جوش و خروش کی سختی سے حوصلہ شکنی کی۔ اس منظم پالیسی کا نتیجہ یہ نکلا کہ دہلی میں صوفیوں کا اثر تیزی سے کم ہوا۔ دارالحکومت میں صوفیوں کے بارے میں محمد تغلق کی پالیسی بنیادی طور پر سیاسی سوچ پر مبنی تھی، لیکن بارانی کے مطابق، اس کی وجہ شکی اور فلسفیوں کے ساتھ ان کی وابستگی بھی تھی۔

وسیع پیمانے پر بغاوتیں ہوئیں اور وسیع سلطنت ٹوٹنے لگی۔ 1335 میں مبر آزاد ہوا، اس کے بعد تین سال بعد بنگال۔ 1346 میں وجے نگر ایک طاقتور ہندو ریاست کا مرکز بن گیا۔ اسی سال گجرات اور کاٹھیاواڑ میں بغاوت ہوئی، لیکن سلطان ان دونوں علاقوں میں بغاوتوں کو کچلنے میں کامیاب رہا۔ اس کے بعد سندھ کی باری تھی، اور، 1351 میں، بادشاہ ٹھٹھہ کی طرف کوچ کر رہا تھا کہ وہاں بغاوت کو کچل دے جب وہ بیمار ہو کر مر گیا۔ جیسا کہ بدعونی کہتے ہیں: ‘بادشاہ کو اس کے لوگوں سے اور وہ اپنے بادشاہ سے آزاد ہوئے تھے۔’

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram