Swat Valley

In TOURISM
September 27, 2022
Swat Valley

Swat Valley

Swat valley is one of the main tourist attractions of Pakistan. It’s called the Switzerland of Pakistan, it’s one of the oldest civilizations in history and one of the most attractive scenery one could ever see.

Location:

It lies between 34°-40′ to 35° N latitude and 72′ to 74°-6′ E longitude. It’s located between the foothills of the Hindukush mountain range. It’s part of the North-West Frontier Province of Pakistan. The location of Swat valley contains major strategic importance because it lies in the region where South Asia, Central Asia, and China meet.

Accessibility:

Swat valley can reach through Peshawar, Rawalpindi, and Islamabad. The overall distance from Peshawar is 151 km and from Rawalpindi via Nuwshera- Mardan and Malakand Pass is 270 km. We will easily find regular flights to Saidu Sharif, the capital city of Swat. When traveling on personal vehicles, the Motorway (M-1) can be used to reach Mardan Interchange from Islamabad which takes approximately 1.5 hours (131km). From Mardan, a distance of 112 km is often covered via Takh-e-Bai, Dargai, Malakand Pass, Batkhella, Chakdara to reach Mingora or Saidu Sharif. It takes almost 5 hours to hide the space of 247 km. The traveling routes are open throughout the year. Nowadays transport facilities have also improved. Daewoo buses are commonly used for traveling.

Attractions:

The main attractions of the Swat valley include its archeology, luxurious green sites, history, and art.

History of Swat Valley

The history of Swat valley goes back to around 2000 years ago. It absolutely was known as Udyana and later the name was changed to Suvastu. The valley was a really peaceful area for living until the 11th century. The game of power led to the disruption of the valley and it had been first conquered by Mahmud of Ghazni. The ritual of acquiring the lands continued and Swat valley was then condemned by the Yusufzais.

In the period of time of 19th century, swat valley was under Akhund Sahib who believed in Muslim law. At this point, the economy of Swat valley flourished thanks to agriculture and it became one of the significant trading areas for businesses.

The population of Swat valley is around 1,257,602 and they have a variety of cultural groups living among which the foremost prominent ones are Pakhtuns, Yusufzais, Kohistanis, Gujars, and Awans.

Swat Valley is known because of the “mini Switzerland”. Its landscapes are proof of natural beauty and it had been one of the most visited areas and had a serious tourism industry. There have been events that led to the downfall of tourism which was one of the major sources of income for the Swats economy. The conflicts between the Taliban and also the Pakistani army have affected the valley’s attractions. The entire conflict started in the 1990s when Sufi Muhammad, a cleric figure tried to impose the sharia law on the people of swat valley. In 2007, his son-in-law tried to follow in his footstep by imposing faith with the strength of arms. The Pakistan army took control of things and in 2008 the war of Swat was put to an end. Another factor that also contributed to diminishing the tourism industry include the floods in 2010 in which most of the infrastructure was destroyed including the roads and bridges resulting in difficulties in traveling to Swat valley.

Buddhism in Swat Valley

Swat valley is additionally famous in the world because the “holy land of Buddhist learning and piety.” It was one of the major hubs of Buddhist pilgrimage. It was said in the early times that Buddha himself came to Swat in the process of his last reincarnation and he spread the education of peace and harmony. It had been also given the name of “cradle of Buddhism”. As mentioned earlier the name of swat was Udayana and it stands for the ancient epics. It absolutely was also mentioned in history that Alexender of Macedonia had fought many major battles in this land before he crossed the delta of the Indus river. Swat valley has also been named the “valley of hanging chairs.” The history also states that Swat was once the cradle of Buddhism where 1400 monasteries had survived and flourished and they also made a Gandhara School of Sculpture.

Characteristics of Swat Valley

Elevation:

  • The altitude of the Swat Valley is 975.36 meters and reaches to 2900meters.
  • The highest peak of Hindu kush point Swat Valley is Falak Sher/Sar Peak which is 5918 meters.
  • The Malakand passes between Mardan and Swat and is 470m to 663 m.
  • Shangla pass/ top is approximately 7000 feet above sea level and covers a 56 km distance from Saidu Sharif and 45 km from Besham.

The full distance between Islamabad and Saidu Sharif is 266 km and the travel time is five and half hours.

Climate

From March to October, Swat has the best season for tourism. The valley welcomes the people through its magnificent mountains, lush green forests, running streams, and meadows.

Languages

Some of the major languages spoken in the swat valley area are Pushto and Kohistani. Nowadays Urdu and English also are spoken by the locals.

Swat Valleys Heritage

They are also famous for handmade ornaments and ornamental household articles. The embroidered items made by women are the trademark. as example ladies’ shawls, wooden furniture, handicrafts, and honey are famous items. they’re also very famous for precious and semi-precious stones.

Wood carving:

The huge statues of Buddha in Bamiyan, Afghanistan, and the elaborately designed statues of Buddha in Swat are sufficient proof of the long-lasting and devoted labor of the artists of that era. The tradition still continues in the valley of Swat with great enthusiasm.

In Swat, the dark black, hard, durable, and naturally hued wood of walnut trees is used for this art. Its hard texture, pleasant appearance, and powerful fragrance reinforce the wonder of the designs and labor of the artist. Cedar and pinewood also are used for woodcarving. Especially the naturally hued, shaded, designed, and fragranced wood of the Deodar tree is employed.

Swati Ornaments:

Swat is known for its unique culture. The goldsmiths of this valley have made beautiful jewelry and ornaments that are original, typical, and regional. the gorgeous girls of Swat are often seen wearing these artistic sorts of jewelry.

Swati Embroidery:

Swati embroidery has great significance and has won a novel status due to its innovative and inventive underpinning everywhere in the country. The pure silver yarn was used in embroidery in the past. Unmarried Swati girls have adopted this art as their hobby. These talented girls decorate all the dresses, shawls, blankets, bed sheets, pillow covers, table cloths, veils, head scarves, handkerchiefs, etc. which is to become a part of their dowry after their marriage. The golden lace embroidery of Swat is famous throughout the country.

Areas of Interest

Some of the major places that are significant tourist spots in Swat valley are discussed in detail which includes the famous historical Buddhist Stupas, Swat museum, Margazar, White Palace, and Fizza Gat. Coming to the upper Swat Valley Miandam, Malam Jabba, Madyan, Bahrain, Kalam, and Ushu will be explained. we will even be covering the major lakes of Swat Valley which are Mahodand, Kundal, Khapiro, and Spin Khawar.

Saidu Sharif / Mingora

A tourist visiting Swat Valley first reaches Saidu Sharif, the capital city and its twin city Mingora. Saidu Sharif is the capital city of Swat. it’s situated near the swat river between the villages of Kanju and Dherai of Khyber Pakhtunkhwa. Its GPS coordinates are 34°45’0N 72°21’0E and it’s an altitude of 970 meters (3182 feet). The capital city is the center of administration control and every one of the regional government affairs are managed within the government buildings. Saidu Sharif has also a medical college.

Mingora is the commercial hub of Swat. it’s located 2 km from the capital city of Saidu Sharif. the town is known for its shopping and features a number of mineral reserves further like emerald reserves in hills northward of the town.

Accessibility: Saidu Sharif is 263 km from Islamabad and can be reached through public transport or personal cars. The travel time is around 5 hours. There is also an airport in Mingora and regular flights are available from Islamabad and Peshawar.

Tourist Attraction in and around Saidu Sharif

1) Buddhist Stupas

Nomogram is a place famous for its monasteries. It is one of the most famous archeological sites of the Buddhist period. Swat was said to be filled with 1400 beautiful stupas and monasteries. They were used as worship houses for 6,000 gold images of the Buddhists and also for creating awareness about the Buddhism religion through education.

It has a number of stupas in which the 3 most significant stupas will be discussed in detail. It is said that the stupas are built with a special kind of stone known as the “dress stone.” They were the best architect of old times and they are said to resemble the “Andan Dhery” monastery which is situated in the Dir district. The Shankardar Stupa is situated at a distance of 3 km from Barikot towards Saidu Sharif. History says it was built between the 3rd and 4rth centuries and it is the only stupa that is left with the original dome still intact. Large figures of Buddha have also been carved on the stones in nearby places. The second major stupa is called Butkara Stupa. This was one of the Chinese Buddhist pilgrim’s centers and is situated in the ancient capital of Mingawara. It is mentioned in history that the stupa was “under event five reconstruction.” Another Gumpat Stupa is also a famous site situated in Kandag valley (9km from the south of Birkot). It consists of a number of sacred images for worshipping and it is said to be the most preserved stupa compared to the rest.

2) Swat Museum

Swat museum is famous for the old heritage of the Gandhara civilization. It is located between Mingora and Saidu Sharif. The museum showcases the main antiques and Buddhist artifacts which are proof of the glorious civilization. The ancient jewelry and wooden articles are preserved with care for preserving the old cultural findings.

3) Margazar

This place is located about 13km from the capital city of Saidu Sharif. It is situated at the foot of Mount Ilam. The meaning of the word Margazar is “green land.” This area is surrounded by green valleys, water springs, and mountains. From here one can view mountain Koh-e-Alam, which has a height of 10,000 feet. It is an ideal place for a morning walk.

4) White Place

One of the specialties of Saidu Sharif is the Sufed Mahal (White Palace), constructed right next to Margazar. The palace was used as the residence of the Wali (ruler) both before and after the independence of Pakistan. Its location is on Margazar Hill (7000 feet above sea level). This tourist resort has around 30 rooms and the charges per day lie in the range of Rs5000-6000 per day.

5) Shrine of Akhund

Saidu is known as shirf (a pious city) because of the shine of Akhund. The shrine of Akhund is housed in the marble courtyard of a mosque in Saidu Sharif. It is open for visitors, provided they are properly dressed. One also needs to remove shoes outside the compound before entering the shrine.

Fizagat

This is another picnic location along the river Swat. Fizagat has beautiful parks and all the finest quality emerald mines. They have the best restaurants and it is best for the children’s recreational activities in all seasons. They also have a Rock city resort, another tourist destination with a 30 km hiking track that depicts the complete picture of nature and also provides fishing facilities. Thames hotel is one the best hotels in fizagat with beautiful scenery and is famous for its architectural designs.

Malam Jabba

Location: Malam Jabba is one of the most beautiful resorts in the area of Swat. It is eighty-seven hundred feet above sea level. Approximately 314 km away from Islamabad, it is situated on the top of the Hindu Kush mountain range, the Northeast of Saidu Sharif. Saidu Sharif is a lovely place 51 km away from this resort.

Accessibility:

Tourists can reach Saidu Sharif using the airport facility and from there cars and jeeps are used to travel to other nearby places.

Tourist Attractions:

The Malam Jabba Ski Resort is owned by the Pakistani Tourism Development Corporation (PTDC). The Ski Resort was a joint effort of the Pakistani government and its Austrian counterpart. It had a ski slope of about 800m with the highest point of the slope 2804m (9200 feet) above sea level.

Modern facilities including roller/ice-skating rinks, chair lifts, skiing platforms, telephones, and snow clearing equipment are available at the resort. These are one of the tourist attractions of the area.

Two stations at Malam Jabba provide the facility of chair lifts for tourists and couples for their enjoyment. This chair lift can elevate approximately 56 passengers at a time to the height of 10500 feet. Inside the Malam Jabba resort, the facility of indoor games and other ice games are available. In winter, six to eight feet of snow falls around the resort.

Two beautiful tracks for walking are also available in the area. The surroundings of those tracks included tall trees and beautiful scenic views. There is a ‘Green Valley’ where the tour guides can take you to experience the beauty of a valley that has a green carpet of grass. Cattles can be seen grazing around in the valley. Flowers and plants of different kinds can be seen there on the way to Green Valley. Following is the view of Green Valley:

Kalam

Location:

Along the upper swat is a beautiful valley, known as Kalam valley in Khyber Pakhtunkhwa. It is a 270 km drive from Islamabad, 29 km from Bahrain, and 2000 meters above sea level.

Accessibility:

In order to reach Kalam, tourists can use Motorway to reach the Mardan interchange which is about a half hour’s drive from Islamabad. Mardan onwards they can use different routes such as Dargai, Malakand Pass, and Chakdara which will lead to Saidu Sharif. The total distance from Mardan to Saidu Sharif is 112 km and the estimated time is two and a half hours. From here onwards, public transport is available and air-conditioned buses. Moreover, the Daewoo bus service operates directly from Lahore, Rawalpindi, and Peshawar to Mingora without any stops in between.

Tourist attractions:

A place is known for its lakes, waterfalls, and greenery. It is one of the most popular destinations for tourists. There are small and fertile plateaus adding to its beauty. Additionally, the Ushu and Utrot rivers joined in Kalam, to form the Swat River.

Madyan

Location:

It is 56 km from Mingora city and 560 km from Islamabad. It also lies on the main road that leads to Bahrain, Kalam, and other beautiful valleys of Swat.

Accessibility:

Roads are there which makes it easier to access Madyan. Public transport is also available for tourists. Tourists usually stay here for a long as the sites and valleys are easy to access.

Tourist Attractions:

Madyan is indeed the best place for nature lovers. Every kind of modern facility is available in this valley such as cellular networks, internet, cable, hotels, restaurants, etc. which makes it different from others. Moreover, there are concrete houses surrounded by tall trees and mountains.

Madyan is surrounded by the green valleys if Chail, Shanku, and Bashigram. Quantities of mushrooms, fruits, and timber are produced over there. In addition to this, the rivers and streams have Swati fish and trout which makes it unique among the other valleys. The major agricultural produce includes maize, wheat, onions, potatoes, and beans.

Miandam

Location:

It is a hill station located in Khyber Pakhtunkhwa. It is 55 km from Mingora and 56 km from Saidu Shareef. While talking about Islamabad, it just takes 3 hours42 and minutes to reach Miandam.

Accessibility:

There are metaled roads that pass through the hills and houses. It is a good place for walkers as tracks are there for tourists.

Tourist attractions:

A few years ago, it completed a medical complex, mosque, and plumbing system. Moving towards the economy, it focuses on tourism and agriculture such as corn and potatoes. Miandam also promotes medicinal plants and now about 1000 people are dependent on it for their income. The estimated population is 20,000 which has increased from 3000 in 1988. In graveyards, there are crave wooden grave posts with floral designs.

Bahrain

Location:

It is a hill station located in Kyber Pakhtunkhwa. It is 312 km from Islamabad and 10 km from Madyan. Additionally, it is 4500 feet above sea level.

Tourist Attractions:

The meaning of Bahrain is two rivers. This is because Daral and swat rivers meet here. Due to this, the atmosphere is most pleasant in Bahrain. There are resorts and bazaars which are known for their handicrafts. Tourists visit this place throughout the year because many hotels can be found at cheap rates. Furthermore, Bahrain is known for its mosques and buildings and the surrounding area has beautiful valleys which are suitable for hiking.

Ushu

Location:

In the Northern Kalam, there is a plateau 6 km wide where two rivers; Ushu and Utrot intersect (one from the northeast and one from the west). It is 10 km from Kalam and is 3200 meters above sea level.

There are mainly Muslims living in this area who speak Kashmiri, Pushto, Persian, and Punjabi. There are mountains which are famous for hiking. As the weather in winter is very cold, people are usually cut off in winter and move southwards and return back when the weather is suitable, usually in spring. For ushu, tourism is the main source of income till now.

Lake Mahodand

Location:

Lake Mahodand lies in the North of Kalam and is 12 km away from Ushu. It takes around 6.5 hours to reach this beautiful lake from Islamabad which is 381 km away. It is famous among nature and peace lovers and trout fish hunters. ‘Mahodand’ means ‘Lake of fishes’ (especially trout fishes).

Accessibility:

Mahodand valley can be reached through an un-metalled road from Kalam in a 4×4 vehicle. Although the road is rough and tricky, the beauty of the surrounding landscapes is a treat for the visitors. Small villages are scattered in the mountains and the hollering smoke that coils into the sky from the houses are some attractive views, which live in the memory forever.

The valley is long and wide and it touches the Chitral boundary in the extreme North. After driving for about four to five hours from the vast valley of Kalam, 35 kilometers away, one can reach the spectacular valley of Mahodand where the small lakes, tall cedar trees, and widespread pastures can be seen. Small birds that are called ‘non-game birds’ fill the air with their melodious music all day long.

Tourist Attractions:

The Lake looks like a river and changes its shape throughout. It is best to visit Lake Mahodand in the spring or late June because that is the time when glaciers have melted.

Temporary restaurants and hotels have been constructed by the locals, which provide essential facilities of food and accommodation. There is only one restaurant that cooks good local food. Boating facilities are also available for rent.

Fishing permits can be obtained from the PTDC resort in Kalam. Rising problems include over-fishing by the locals and inappropriate ways of fishing e.g. electrocution, large nets, and dynamiting. This has reduced the population of trout fish in the lake. Authorities must take initiative to save this rare feature of the valley.

Another attraction in the area is the ‘Spring of Healing’ where people come from around the world to bathe in the water that is said to have healing properties. Trekkers can reach Shandoor Top or Gazar in Chitral through a proper track. The valley provides beautiful and peaceful camping sites. Trekkers are advised to arrange gas cylinders. This will help to reduce the burden on the natural ecosystem and also preserve the deteriorating environment of the valley. Small huts have been constructed by the nomads of the area who take their livestock to lush green areas for grazing.

There are several waterfalls in this vicinity that increase the beauty of the valley. Waterfalls are of different lengths and sizes. The sound of these waterfalls echoes throughout the valley and creates a cracking sound on the rocks. A visitor explained the beauty of this place as “The spectacular landscapes, the canopy of tall cedar trees, the vast pastures, the roaring waterfalls, the shimmering lakes, the sky touching mountains, and the exotic fragrance of wildflowers and herbs leave such strong imprints on the mind that the visitor is always in search of other opportunities to become one with nature again.”

Kundal Lake

Location:

Kundal Lake has situated 21 km from Kalam and 281 km from Islamabad. It lies in the North of Utror valley.

Accessibility:

Kundal Lake can be easily accessed from Kalam via Utror from where a link road ends in a green valley called ‘Ladu’ in the foothills of the lake. The trail to the lake from Ladu is easy to follow as a huge stream flows down from the lake, which mingles with River Swat in Kalam valley.

Hiking can be a way to reach Ladu from Utror or a four-wheeler can be used to make the journey easy. It takes four hours to reach the lake from Ladu. The first two hours walk is in a narrow valley beside a stream however the valley becomes wide later and expands till the lake is reached. Good quality shoes with gripping soles must be used to walk through the trail and care should be taken as an accidental slip can be dangerous.

Tourist attraction:

Kundal is a huge and extensive lake. Its length is 2 km and width is 1 km. A huge watercourse feeds it on the eastern side where huge glaciers melt down in summers. There are two hamlets where two small mosques can provide accommodation but it is better to have your own tents in case of emergency use. The mountains around this small valley are covered with tall cedar and pine trees.

They have also arranged diesel-operated motorboats in which you can take a tour of the lake and reach the other side easily because otherwise, it may take two hours minimum. People who take temporary residency over here during summers plow the open land and harvest potatoes and turnips, which are famous all over the country for their exotic taste. Kundal Sanctuary is situated 15km away from Sawaimadhopur on Sawaimadhopur-Kalibhat road (shown in the picture below on the right).

Local people are friendly and provide guidance if one asks them. They also help in carrying the luggage. They are very cooperative and will provide the typical nomadic delicacies of butter, buttermilk, cheese, and maize bread upon request happily. Some of them have also opened a kind of hut restaurants where tea is served upon payment.

The lake seems to be an exact duplicate of Lake Saifulmaluk in Naran Kaghan. Both lakes are almost of the same size and appearance. The location and surroundings of both the lakes are almost identical but one is known and the other is still concealed in the mountains of Swat valley. The tourism authorities need to wake up to publicize the lake and arrange special tours to familiarize this precious gift of nature for all. Different beautiful views of the lake are shown in the pictures below:

Two other lakes, Khapiro (Faries), and Spin khwar (White Stream) are located in the peripheries of Kundal Lake and can be accessed through the lake in five to six hours. It would take almost four days to visit all three lakes in a go.

Khapiro/Pari Lake I

Location:

The name ‘Pari’ or “Khapiro’ means ‘house of fairies’. It is believed that fairies live there and bathe in the water of this lake. Khapiro Lake is located in the North East of Utror Valley. It has a considerable depth and lies in the foothills of the highest mountains. 281 km from Islamabad

Accessibility:

Khapiro Lake can be accessed from Izmis and Kundal Lake by trekking. It takes almost 5 hours to reach the top of Izmis and Kundal Lake. The track is very sharp on both sides. Beautiful flowers and green meadows can be seen in the surrounding.

Tourist attraction:

Khapiro Lake is encircled by sharp rough rocks and mountains with grass and beautiful flowers. It is a relatively small lake, triangular in shape, and a great Pari Lake which is situated below it is fed by it. The water of this lake is emerald green in color. Crystal clear water fills the lake from the waterfall from the glaciers and mountains. Tourists are attracted by the green highlands, sky-touching mountains, and beautiful environment in the area. Except for the month of August and September, the lake is sunk by glaciers throughout the year.

Khapiro/Pari Lake II

Location:

Khapiro/ Pari Lake II is located near Pari Lake I, at the highest altitude in the mountain ranges of Swat.

Tourist attraction:

The Lake is 0.25 km in length and is surrounded by steep pastures. When fodder is limited in the plains, grazers take their livestock to the pastures in summer. It is comparatively greater in size and depth than the other lake situated in its vicinity and remains open in the months of July, August, and September. Kundal Lake is situated in the foothills down and water from Pari Lake II flows to Kundal Lake. Due to the uncertain weather and alarming height, the lake remains undisturbed.

Pari Lake II has twofold importance:

  • It provides a huge share of water to the gigantic Kundal Lake.
  • It is a safe feeding ground for the native as well as migratory birds.

The high mountains surrounding the lake are a safe dock for the bulky Snow-cock and brightly colored Monal pheasants. These birds can be heard and seen during the early hours of dawn.

Pari Lake II is a beautiful place to visit as its wide horizon, spectacular landscapes and cool breeze are priceless gifts of nature that remain in the memory of a visitor.

Spin Khwar (White Stream) Lake

Location:

Spin Khwar is situated towards the North of Kundal Lake and East of Utror valley. It is 176 km away from Islamabad. The name Spin Khwar has importance as a small white stream in the east flows down to the lake from the surrounding mountains and is a major source of water for the lake.

Accessibility:

Spin Khwar Lake can be accessed through two tracks: One from Kundal, and the other from Ladu valley. The track from Ladu is easy to walk and less tiring while the track from Kundal is not only difficult but dangerous; although it is short and links Kundal and Spin Khwar.

Tourist attraction:

The Lake is large in size and is an ideal refuge for animals and local and migratory birds. Tall coniferous trees around the lake add to the beauty of the surroundings and the lake. Landscapes surrounding the lake are decorated with wildflowers and green meadows.

Due to lack of publicity and popularity, Spin Khwar is not much visited by tourists. However, it has a great potential to attract tourists due to its beautiful landscapes. Campsites are available near the lake. The lake can become a famous recreational spot if proper tracks and other necessary facilities are provided to the visitors.

وادی سوات

وادی سوات پاکستان کے اہم سیاحتی مقامات میں سے ایک ہے۔ یہ پاکستان کے سوئٹزرلینڈ کے نام سے جانا جاتا ہے، اس کی قدیم ترین تہذیبوں کی تاریخ ہے اور اس کے خوبصورت مناظر میں سے ایک ہے

مقام

یہ 34°-40′ سے 35° این عرض البلد اور 72′ سے 74°-6′ ای طول البلد کے درمیان ہے۔ یہ ہندوکش پہاڑی سلسلے کے دامن کے درمیان واقع ہے۔ یہ پاکستان کے شمال مغربی سرحدی صوبے کا حصہ ہے۔ وادی سوات کا محل وقوع ایک بڑی تزویراتی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ یہ اس خطے میں واقع ہے جہاں جنوبی ایشیا، وسطی ایشیا اور چین ملتے ہیں۔

قابل رسائی

وادی سوات پشاور، راولپنڈی اور اسلام آباد سے ہوتی ہوئی پہنچ سکتی ہے۔ پشاور سے کل فاصلہ 151 کلومیٹر ہے اور راولپنڈی سے نوشہرہ- مردان اور ملاکنڈ پاس کے راستے 270 کلومیٹر ہے۔ ہم سوات کے صدر مقام سیدو شریف کے لیے باقاعدہ پروازیں آسانی سے تلاش کر سکتے ہیں۔ ذاتی گاڑیوں پر سفر کرتے وقت، موٹروے (ایم-1) کو اسلام آباد سے مردان انٹرچینج تک پہنچنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے جس میں تقریباً 1.5 گھنٹے (131 کلومیٹر) لگتے ہیں۔ مردان سے 112 کلومیٹر کا فاصلہ تخت بائی، درگئی، مالاکنڈ پاس، بٹ خیلہ، چکدرہ سے ہوتا ہوا مینگورہ یا سیدو شریف پہنچ سکتا ہے۔ 247 کلومیٹر کا فاصلہ طے کرنے میں تقریباً 5 گھنٹے لگتے ہیں۔ سفری راستے سال بھر کھلے رہتے ہیں۔ آج کل پبلک ٹرانسپورٹ کی سہولیات میں بھی بہتری آئی ہے۔ ڈائیوو بسیں عام طور پر سفر کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔

پرکشش مقامات

وادی سوات کے بڑے پرکشش مقامات میں اس کے آثار قدیمہ، سرسبز و شاداب مقامات، تاریخ اور ان کا فن شامل ہے۔

وادی سوات کی تاریخ

وادی سوات کی تاریخ تقریباً 2000 سال پرانی ہے۔ اسے اڈیانہ کے نام سے جانا جاتا تھا اور بعد میں اس کا نام بدل کر سواستو رکھ دیا گیا۔ یہ وادی 11ویں صدی تک رہنے کے لیے بہت پرامن علاقہ تھی۔ طاقت کے کھیل نے وادی میں خلل ڈالا اور اسے سب سے پہلے غزنی کے محمود نے فتح کیا۔ زمینوں کے حصول کی رسم جاری رہی اور پھر وادی سوات پر یوسف زئیوں نے قبضہ کر لیا۔

انیسویں صدی کے زمانے میں وادی سوات اخوند صاحب کے ماتحت تھی جو مسلم قانون پر یقین رکھتے تھے۔ اس وقت وادی سوات کی معیشت زراعت کی وجہ سے پروان چڑھی اور یہ کاروبار کے لیے اہم تجارتی علاقوں میں سے ایک بن گیا۔

وادی سوات کی آبادی تقریباً 1,257,602 ہے اور ان میں متعدد ثقافتی گروہ رہتے ہیں جن میں پختون، یوسفزئی، کوہستانی، گجر اور اعوان نمایاں ہیں۔

وادی سوات کو ’’منی سوئٹزرلینڈ‘‘ کہا جاتا ہے۔ اس کے مناظر قدرتی حسن کا منہ بولتا ثبوت ہیں اور یہ سب سے زیادہ دیکھے جانے والے علاقوں میں سے ایک تھا اور سیاحت کی ایک بڑی صنعت تھی۔ ایسے واقعات رونما ہوئے جن کی وجہ سے سیاحت کا زوال ہوا جو سوات کی معیشت کی آمدنی کا ایک بڑا ذریعہ تھا۔ طالبان اور پاکستانی فوج کے درمیان تنازعات نے وادیوں کی توجہ کو متاثر کیا ہے۔ یہ سارا تنازعہ 1990 کی دہائی میں شروع ہوا جب ایک مذہبی شخصیت صوفی محمد نے وادی سوات کے لوگوں پر شریعت نافذ کرنے کی کوشش کی۔ 2007 میں اس کے داماد نے اسلحے کے زور پر مذہب کو مسلط کرکے اس کے قدم قدم پر چلنے کی کوشش کی۔ پاک فوج نے حالات پر قابو پالیا اور 2008 میں سوات کی جنگ کا خاتمہ کر دیا گیا۔ ایک اور عنصر جس نے سیاحت کی صنعت کو زوال پذیر کرنے میں بھی کردار ادا کیا وہ 2010 میں آنے والا سیلاب ہے جس میں سڑکوں اور پلوں سمیت زیادہ تر انفراسٹرکچر تباہ ہو گیا تھا جس کی وجہ سے وادی سوات میں سفر کرنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

وادی سوات میں بدھ مت

سوات کی وادی دنیا میں ’’بدھ مت کی تعلیم اور تقویٰ کی مقدس سرزمین‘‘ کے طور پر بھی مشہور ہے۔ یہ بدھ مت کی زیارت کے بڑے مراکز میں سے ایک تھا۔ ابتدائی زمانے میں کہا جاتا تھا کہ مہاتما بدھ خود اپنے آخری تناسخ کے عمل میں سوات آئے تھے اور انہوں نے امن اور ہم آہنگی کی تعلیم کو عام کیا۔ اسے ’’بدھ مت کا گہوارہ‘‘ کا نام بھی دیا گیا۔ جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے کہ سوات کا نام ادیانہ تھا اور اس کا مطلب قدیم مہاکاوی ہے۔ تاریخ میں یہ بھی مذکور ہے کہ مقدونیہ کے الیگزینڈر نے دریائے سندھ کے ڈیلٹا کو عبور کرنے سے پہلے اس سرزمین پر کئی بڑی لڑائیاں لڑی تھیں۔ وادی سوات کو ’’لٹکتی کرسیوں کی وادی‘‘ کا نام بھی دیا گیا ہے۔ تاریخ یہ بھی بتاتی ہے کہ سوات کسی زمانے میں بدھ مت کا گہوارہ تھا جہاں 1400 خانقاہیں زندہ اور پروان چڑھی تھیں اور انہوں نے گندھارا سکول آف سکلپچر بھی بنایا تھا۔

وادی سوات کی خصوصیات

بلندی
نمبر1: وادی سوات کی اونچائی 975.36 میٹر ہے اور 2900 میٹر تک پہنچتی ہے۔
نمبر2:وادی سوات میں کوہ ہندوکش کی بلند ترین چوٹی فلک شیر/سر چوٹی ہے جو 5918 میٹر ہے۔
نمبر3:مالاکنڈ مردان اور سوات کے درمیان سے گزرتا ہے اور 470 میٹر سے 663 میٹر تک ہے۔
نمبر4:شانگلہ پاس/ ٹاپ سطح سمندر سے تقریباً 7000 فٹ بلند ہے اور سیدو شریف سے 56 کلومیٹر اور بیشام سے 45 کلومیٹر کا فاصلہ طے کرتا ہے۔
نمبر5:اسلام آباد اور سیدو شریف کے درمیان کل فاصلہ 266 کلومیٹر ہے اور سفر کا وقت ساڑھے پانچ گھنٹے ہے۔

آب و ہوا

مارچ سے اکتوبر تک سوات میں سیاحت کے لیے بہترین موسم ہوتا ہے۔ یہ وادی اپنے شاندار پہاڑوں، سرسبز و شاداب جنگلات، بہتی ندیوں اور گھاس کے میدانوں کے ذریعے لوگوں کا خیرمقدم کرتی ہے۔

زبانیں

وادی سوات میں بولی جانے والی کچھ بڑی زبانیں پشتو اور کوہستانی ہیں۔ آج کل مقامی لوگ اردو اور انگریزی بھی بولتے ہیں۔

سوات کی وادیوں کا ورثہ

وہ ہاتھ سے تیار زیورات اور آرائشی گھریلو مضامین کے لئے بھی مشہور ہیں۔ خواتین کے ذریعہ تیار کردہ کڑھائی والی اشیاء ٹریڈ مارک ہیں۔ مثال کے طور پر خواتین شال ، لکڑی کا فرنیچر ، دستکاری اور شہد مشہور اشیاء ہیں۔ وہ قیمتی اور نیم قیمتی پتھروں کے لئے بھی بہت مشہور ہیں۔

لکڑی کی نقش و نگار
بامیان ، افغانستان میں بدھ کے بڑے مجسمے اور سوات میں بدھ کے وسیع پیمانے پر ڈیزائن کیے گئے مجسمے اس دور کے فنکاروں کی دیرپا اور عقیدت مند مشقت کا کافی ثبوت ہیں۔ یہ روایت اب بھی بڑے جوش و خروش کے ساتھ وادی سوات میں جاری ہے۔

سوات میں ، اس فن کے لئے سیاہ ، سخت ، سخت ، پائیدار اور قدرتی طور پر اخروٹ کے درختوں کی لکڑی کا استعمال کیا جاتا ہے۔ اس کی سخت ساخت ، خوشگوار ظاہری شکل اور مضبوط خوشبو آرٹسٹ کے ڈیزائن اور مزدوری کی خوبصورتی کو تقویت دیتی ہے۔ دیودار اور پائن ووڈ کو لکڑی کی تراشنے کے لئے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ خاص طور پر دیوڈر کے درخت کی قدرتی طور پر سایہ دار ، سایہ دار ، ڈیزائن اور خوشبو والی لکڑی استعمال کی جاتی ہے۔

سواتی زیورات
سوات اپنی انوکھی ثقافت کے لئے جانا جاتا ہے۔ اس وادی کے سنار نے خوبصورت زیورات اور زیورات بنائے ہیں جو اصل ، عام اور علاقائی ہیں۔ زیورات کی یہ فنکارانہ شکلیں پہنے ہوئے سوات کی خوبصورت لڑکیاں۔

سواتی کڑھائی
سواتی کڑھائی کی ایک بہت بڑی اہمیت ہے اور اس نے پورے ملک میں اس کی جدید اور تخلیقی صلاحیتوں کی وجہ سے ایک انوکھی حیثیت حاصل کی ہے۔ ماضی میں کڑھائی میں خالص چاندی کا سوت استعمال ہوتا تھا۔ غیر شادی شدہ سواتی لڑکیوں نے اس فن کو اپنے شوق کے طور پر اپنایا ہے۔ یہ باصلاحیت لڑکیاں تمام کپڑے ، شال ، کمبل ، بستر کی چادریں ، تکیے کے احاطہ ، ٹیبل کپڑوں ، پردے ، سر کے اسکارف ، رومال وغیرہ سجاتی ہیں جو ان کی شادی کے بعد ان کے جہیز کا حصہ بننا ہے۔ سوات کی گولڈن لیس کڑھائی پورے ملک میں مشہور ہے۔

دلچسپی کے شعبے

وادی سوات میں سیاحوں کے اہم مقامات کے کچھ اہم مقامات پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا جائے گا جس میں مشہور تاریخی بدھسٹ اسٹوپا ، سوات میوزیم ، مارگازار ، وائٹ پیلس اور فیزا گیٹ شامل ہیں۔ اوپری سوات ویلی میاندم ، مالم جبہ ، مدیان ، بہرائن ، کلام اور عشو میں آنے کی وضاحت کی جائے گی۔ ہم وادی سوات کی بڑی جھیلوں کا احاطہ بھی کریں گے جو مہوڈینڈ ، کنڈال ، کھپیرو اور اسپن کھور ہیں۔

سیدو شریف / مینگورا

وادی سوات کا دورہ کرنے والا ایک سیاح پہلے دارالحکومت اور اس کے جڑواں شہر مینگورا ، سیدو شریف تک پہنچتا ہے۔ سیدو شریف سوات کا دارالحکومت ہے۔ یہ دریائے سوات کے قریب واقع ہے۔ اس کے جی پی ایس کوآرڈینیٹ 34 ° 45’0این 72 ° 21’0ای ہیں اور اس کی اونچائی 970 میٹر (3182 فٹ) ہے۔ دارالحکومت کا شہر انتظامیہ کے کنٹرول کا مرکز ہے اور تمام علاقائی سرکاری امور سرکاری عمارتوں میں انتظام کیے جاتے ہیں۔ تزو شریف کے پاس ایک میڈیکل کالج بھی ہے۔

مینگورا سوات کا تجارتی مرکز ہے۔ یہ دارالحکومت سیدو شریف سے 2 کلومیٹر دور واقع ہے۔ یہ شہر اپنی خریداری کے لئے مشہور ہے اور اس میں متعدد معدنی ذخائر ہیں جیسے قصبے کے شمال میں پہاڑیوں میں زمرد کے ذخائر۔

قابل رسائی
سیدو شریف اسلام آباد سے 263 کلومیٹر دور ہے اور اسے پبلک ٹرانسپورٹ یا ذاتی کاروں کے ذریعے پہنچا جاسکتا ہے۔ سفر کا وقت 5 گھنٹے کے لگ بھگ ہے۔ مینگورا میں ایک ہوائی اڈہ بھی ہے اور اسلام آباد اور پشاور سے باقاعدہ پروازیں دستیاب ہیں۔

سیاحوں کی توجہ اور اس کے آس پاس ساؤ شریف

نمبر1) بدھسٹ اسٹوپا

نموگرام اپنی خانقاہوں کے لئے مشہور ہے۔ یہ بدھ مت کے دور کے مشہور آثار قدیمہ والے مقامات میں سے ایک ہے۔ کہا جاتا ہے کہ سوات کو 1400 خوبصورت اسٹوپا اور خانقاہوں سے بھرا ہوا تھا۔ وہ بدھ مت کی 6،000 سونے کی تصاویر کے لئے اور تعلیم کے ذریعہ بدھ مت کے مذاہب کے بارے میں شعور پیدا کرنے کے لئے بھی پوجا گھروں کے طور پر استعمال ہوتے تھے۔

اس میں متعدد اسٹوپا ہیں جن میں 3 انتہائی اہم اسٹوپا پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ کہا جاتا ہے کہ اسٹوپا خاص قسم کے پتھروں کے ساتھ تعمیر کیے گئے ہیں جسے “لباس پتھر” کہا جاتا ہے۔ وہ پرانے زمانے کے بہترین معمار تھے اور کہا جاتا ہے کہ وہ “آندن ڈیری” خانقاہ سے ملتے جلتے ہیں جو ضلع دیر میں واقع ہے۔ شنکارڈر اسٹوپا باریکوٹ سے 3 کلومیٹر کے فاصلے پر سیدو شریف کی طرف واقع ہے۔ تاریخ کا کہنا ہے کہ یہ تیسری اور 4 ویں صدی کے درمیان تعمیر کیا گیا تھا اور یہ واحد اسٹوپا ہے جو اصل گنبد کے ساتھ رہ گیا ہے جو اب بھی برقرار ہے۔ قریبی جگہوں پر پتھروں پر بدھ کی بڑی شخصیت بھی کھدی ہوئی ہے۔ دوسرا میجر اسٹوپا کو بٹکارا اسٹوپا کہا جاتا ہے۔ یہ چینی بدھ مت کے حجاج کے مرکز میں سے ایک تھا اور یہ مینگوارہ کے قدیم دارالحکومت میں واقع ہے۔ تاریخ میں یہ ذکر کیا گیا ہے کہ اسٹوپا “ایونٹ پانچ تعمیر نو کے تحت۔” ایک اور جمپٹ اسٹوپا ایک مشہور سائٹ بھی ہے جو کندگ ویلی (برکوٹ کے جنوب سے 9 کلومیٹر دور) میں واقع ہے۔ اس میں عبادت کے لئے متعدد مقدس تصاویر پر مشتمل ہے اور کہا جاتا ہے کہ آرام کے مقابلے میں یہ سب سے محفوظ اسٹوپا ہے۔

نمبر2) سوات میوزیم

سوات میوزیم گندھارا تہذیب کے پرانے ورثے کے لئے مشہور ہے۔ یہ مینگورا اور سیدو شریف کے درمیان واقع ہے۔ میوزیم میں اہم نوادرات اور بدھ مت کے نمونے پیش کیے گئے ہیں جو شاندار تہذیب کا ثبوت ہیں۔ قدیم زیورات ، لکڑی کے مضامین پرانے ثقافت کے نتائج کو محفوظ رکھنے کی دیکھ بھال کے ساتھ محفوظ ہیں۔

نمبر3) مارگازار

یہ جگہ دارالحکومت سیدو شریف سے 13 کلومیٹر دور واقع ہے۔ یہ پہاڑ الام کے دامن میں واقع ہے۔ لفظ مارگازار کے معنی “سبز سرزمین” ہیں۔ یہ علاقہ سبز وادیوں ، پانی کے چشموں اور پہاڑوں سے گھرا ہوا ہے۔ یہاں سے کوئی ماؤنٹین کوہ الام دیکھ سکتا ہے ، جس کی اونچائی 10،000 فٹ ہے۔ یہ صبح کی سیر کے لئے ایک مثالی جگہ ہے۔

نمبر4) سفید جگہ

سیدو شریف کی ایک خصوصیات میں سے ایک صوتی محل (وائٹ پیلس) ہے ، جو مارگازار کے عین قریب تعمیر کی گئی ہے۔ یہ محل پاکستان کی آزادی سے پہلے اور اس کے بعد بھی ولی (حکمران) کی رہائش گاہ کے طور پر استعمال ہوتا تھا۔ اس کا مقام مارگازار پہاڑی (سطح سمندر سے 7000 فٹ) پر ہے۔ اس سیاحتی ریزورٹ میں 30 کے قریب کمرے ہیں اور روزانہ چارج روزانہ 5000-6000 روپے میں رہتے ہیں۔

نمبر5) اکھنڈ کا مزار

صفر (ایک پرہیزگار شہر) کے نام سے جانا جاتا ہے کیونکہ اکھنڈ کی چمک کی وجہ سے۔ اکھنڈ کا مزار سیدو شریف میں ایک مسجد کے سنگ مرمر کے صحن میں رکھا گیا ہے۔ یہ زائرین کے لئے کھلا ہے ، بشرطیکہ وہ مناسب طریقے سے ملبوس ہوں۔ کسی کو مزار میں داخل ہونے سے پہلے کمپاؤنڈ کے باہر جوتے ہٹانے کی بھی ضرورت ہے۔

فیزاگٹ

یہ دریائے سوات کے ساتھ ایک اور پکنک مقام ہے۔ فیزاگٹ میں خوبصورت پارکس اور تمام بہترین معیار کے زمرد کی کانیں ہیں۔ ان کے پاس بہترین ریستوراں ہیں اور یہ ہر موسم میں بچوں کی تفریحی سرگرمیوں کے لئے بہترین ہے۔ ان کے پاس راک سٹی ریسورٹ بھی ہے ، ایک اور سیاحتی مقام ہے جس میں 30 کلومیٹر پیدل سفر کا ٹریک ہے جس میں فطرت کی مکمل تصویر کو دکھایا گیا ہے اور ماہی گیری کی سہولیات بھی مہیا کرتی ہیں۔ تیمس ہوٹل خوبصورت مناظر کے ساتھ فیزاگٹ کا ایک بہترین ہوٹل ہے اور فن تعمیراتی ڈیزائنوں کے لئے مشہور ہے۔

مالم جببا

مقام
مالم جببا سوات کے علاقے میں ایک خوبصورت ترین ریزورٹس ہے۔ یہ سمندر کی سطح سے اسی طرح سات سو فٹ بلندی پر ہے۔ اسلام آباد سے لگ بھگ 314 کلومیٹر دور ، یہ سڈو شریف کے شمال مشرق میں ، ہندوکش پہاڑی سلسلے کی چوٹی پر واقع ہے۔ سیدو شریف اس ریزورٹ سے 51 کلومیٹر دور ایک خوبصورت جگہ ہے۔

قابل رسائی
سیاح ہوائی اڈے کی سہولت کا استعمال کرتے ہوئے ساسو شریف تک پہنچ سکتے ہیں اور وہاں سے کاروں اور جیپوں کو قریبی دیگر مقامات پر سفر کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔

سیاحوں کے پرکشش مقامات

مالم جببا اسکی ریسارٹ پاکستانی ٹورزم ڈویلپمنٹ کارپوریشن (پی ٹی ڈی سی) کی ملکیت ہے۔ اسکی ریسارٹ پاکستانی حکومت اور اس کے آسٹریا کے ہم منصب کی مشترکہ کوشش تھی۔ اس میں تقریبا 800 میٹر کی اسکی ڈھلوان تھی جس میں سطح سمندر سے بلندی 2804میٹر (9200 فٹ) کے اعلی ترین نقطہ ہے۔ جدید سہولیات جن میں رولر/آئس اسکیٹنگ رنکس ، کرسی لفٹیں ، اسکیئنگ پلیٹ فارم ، ٹیلیفون اور برف صاف کرنے کا سامان بشمول ریسارٹ میں دستیاب ہے۔ یہ اس علاقے کے سیاحوں میں سے ایک پرکشش مقامات ہیں۔

مالم جبہ میں دو اسٹیشن سیاحوں اور جوڑے کے لئے ان کے لطف اندوزی کے لئے کرسی لفٹ کی سہولت فراہم کرتے ہیں۔ یہ کرسی لفٹ ایک وقت میں تقریبا 56 56 مسافروں کو 10500 فٹ کی اونچائی تک پہنچا سکتی ہے۔ مالم جبہ ریسارٹ کے اندر ، انڈور گیمز اور دیگر آئس گیمز کی سہولت دستیاب ہے۔ سردیوں میں ، ریزورٹ کے آس پاس چھ سے آٹھ فٹ برف پڑتی ہے۔

اس علاقے میں چلنے کے لئے دو خوبصورت پٹریوں بھی دستیاب ہیں۔ ان پٹریوں کے گردونواح میں لمبے لمبے درخت اور خوبصورت قدرتی نظارے شامل ہیں۔ ایک ’گرین ویلی‘ ہے جہاں سیاحوں کے رہنما آپ کو کسی وادی کی خوبصورتی کا تجربہ کرنے کے ل take لے سکتے ہیں جس میں گھاس کا سبز قالین ہے۔ وادی میں بلیوں کو چرتے دیکھا جاسکتا ہے۔ گرین ویلی کے راستے میں وہاں مختلف قسم کے پھول اور پودے دیکھے جاسکتے ہیں۔ گرین ویلی کا نظارہ مندرجہ ذیل ہے

کلام

مقام
بالائی سوات کے ساتھ ساتھ ایک خوبصورت وادی ہے جسے خیبر پختونخواہ میں وادی کالام کہا جاتا ہے۔ یہ اسلام آباد سے 270 کلومیٹر، بحرین سے 29 کلومیٹر اور سطح سمندر سے 2000 میٹر کی بلندی پر ہے۔

قابل رسائی
کالام تک پہنچنے کے لیے، سیاح مردان انٹرچینج تک پہنچنے کے لیے موٹر وے کا استعمال کر سکتے ہیں جو اسلام آباد سے تقریباً ڈیڑھ گھنٹے کی مسافت پر ہے۔ مردان کے بعد وہ مختلف راستے استعمال کر سکتے ہیں جیسے درگئی، ملاکنڈ پاس، چکدرہ جو سیدو شریف کی طرف جائیں گے۔ مردان سے سیدو شریف تک کل فاصلہ 112 کلومیٹر ہے اور وقت کا تخمینہ ڈھائی گھنٹے ہے۔ یہاں سے پبلک ٹرانسپورٹ اور ایئر کنڈیشنڈ بسیں دستیاب ہیں۔ مزید یہ کہ ڈائیوو بس سروس لاہور، راولپنڈی اور پشاور سے مینگورہ تک بغیر کسی سٹاپ کے براہ راست چلتی ہے۔

سیاحوں کے لیے پرکشش مقامات
ایک جگہ جو اپنی جھیلوں، آبشاروں اور ہریالی کے لیے مشہور ہے۔ یہ سیاحوں کے لیے مقبول ترین مقامات میں سے ایک ہے۔ چھوٹے اور زرخیز سطح مرتفع اس کی خوبصورتی میں اضافہ کرتے ہیں۔ مزید برآں، اوشو اور اُتروٹ ندیاں کالام میں مل کر دریائے سوات بنتی ہیں۔

مدین

مقام
یہ مینگورہ شہر سے 56 کلومیٹر اور اسلام آباد سے 560 کلومیٹر دور ہے۔ یہ مرکزی سڑک پر بھی واقع ہے جو بحرین، کالام اور سوات کی دیگر خوبصورت وادیوں کی طرف جاتی ہے۔

رسائی
وہاں سڑکیں ہیں جو مدین تک رسائی کو آسان بناتی ہیں۔ سیاحوں کے لیے پبلک ٹرانسپورٹ بھی دستیاب ہے۔ سیاح عام طور پر یہاں زیادہ دیر تک ٹھہرتے ہیں کیونکہ سائٹس اور وادیوں تک رسائی آسان ہے۔

سیاحوں کے لیے پرکشش مقامات
مدیان واقعی فطرت سے محبت کرنے والوں کے لیے بہترین جگہ ہے۔ اس وادی میں ہر قسم کی جدید سہولت دستیاب ہے جیسے سیلولر نیٹ ورک، انٹرنیٹ، کیبل، ہوٹل، ریستوراں وغیرہ جو اسے دوسروں سے مختلف بناتی ہے۔ مزید یہ کہ، لمبے درختوں اور پہاڑوں سے گھرے کنکریٹ کے گھر ہیں۔

مدیان ہری وادی سے گھرا ہوا ہے اگر چل، شنکو اور بشیگرام۔ وہاں کھمبیوں، پھلوں اور لکڑیوں کی مقدار پیدا ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ دریاؤں اور ندی نالوں میں سواتی مچھلی اور ٹراؤٹ پائے جاتے ہیں جو اسے دیگر وادیوں میں منفرد بناتا ہے۔ اہم زرعی پیداوار میں مکئی، گندم، پیاز، آلو اور پھلیاں شامل ہیں۔

میاندم

مقام
یہ خیبر پختونخواہ میں واقع ایک پہاڑی اسٹیشن ہے۔ یہ مینگورہ سے 55 کلومیٹر اور سیدو شریف سے 56 کلومیٹر دور ہے۔ اسلام آباد کی بات کرتے ہوئے میاندم پہنچنے میں صرف 3 گھنٹے 42 منٹ لگتے ہیں۔

رسائی
یہاں دھاتی سڑکیں ہیں جو پہاڑیوں اور مکانات سے گزرتی ہیں۔ یہ پیدل چلنے والوں کے لیے ایک اچھی جگہ ہے کیونکہ وہاں سیاحوں کے لیے ٹریک موجود ہیں۔

سیاحوں کے لیے پرکشش مقامات
کچھ سال پہلے، اس نے میڈیکل کمپلیکس، مسجد اور پلمبنگ کا نظام مکمل کیا۔ معیشت کی طرف بڑھتے ہوئے، یہ سیاحت اور زراعت پر توجہ مرکوز کرتا ہے جیسے مکئی اور آلو۔ میاندام دواؤں کے پودوں کو بھی فروغ دیتا ہے اور اب تقریباً 1000 لوگ اپنی آمدنی کے لیے اس پر منحصر ہیں۔ تخمینہ شدہ آبادی 20,000 ہے جو 1988 میں 3000 سے بڑھ گئی ہے۔

بحرین

مقام

یہ خیبر پختونخواہ میں واقع ایک پہاڑی مقام ہے۔ یہ اسلام آباد سے 312 کلومیٹر اور مدین سے 10 کلومیٹر دور ہے۔ مزید برآں، یہ سطح سمندر سے 4500 فٹ بلند ہے۔

سیاحوں کی توجہ

حرین کے معنی دو دریا ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یہاں درال اور سوات دریا ملتے ہیں۔ جس کی وجہ سے بحرین میں ماحول زیادہ تر خوشگوار ہے۔ یہاں ریزورٹس اور بازار ہیں جو اپنی دستکاری کے لیے مشہور ہیں۔ سیاح سال بھر اس جگہ کا رخ کرتے ہیں کیونکہ بہت سے ہوٹل سستے داموں مل سکتے ہیں۔ مزید برآں، بحرین اپنی مساجد اور عمارتوں کے لیے جانا جاتا ہے اور آس پاس کے علاقے میں خوبصورت وادیاں ہیں جو پیدل سفر کے لیے موزوں ہیں۔

اوشو

مقام
شمالی کالام میں 6 کلومیٹر چوڑا سطح مرتفع ہے جہاں دو دریا؛ اوشو اور اوٹروٹ آپس میں ملتے ہیں (ایک شمال مشرق سے اور ایک مغرب سے)۔ یہ کالام سے 10 کلومیٹر دور ہے اور سطح سمندر سے 3200 میٹر بلند ہے۔

اس علاقے میں زیادہ تر مسلمان رہتے ہیں جو کشمیری، پشتو، فارسی اور پنجابی بولتے ہیں۔ یہاں پہاڑ ہیں جو پیدل سفر کے لیے مشہور ہیں۔ چونکہ سردیوں میں موسم بہت ٹھنڈا ہوتا ہے، اس لیے لوگ عموماً سردیوں میں کٹ جاتے ہیں اور جنوب کی طرف چلے جاتے ہیں اور موسم مناسب ہونے پر واپس لوٹ جاتے ہیں، عموماً بہار میں۔ اوشو کے لیے، سیاحت اب تک آمدنی کا اہم ذریعہ ہے۔

جھیل مہوڈنڈ

مقام
جھیل مہوڈینڈ کلام کے شمال میں اور عشو سے 12 کلومیٹر دور واقع ہے۔ اسلام آباد سے اس خوبصورت جھیل تک پہنچنے میں 6.5 گھنٹے لگتے ہیں جو 381 کلومیٹر دور ہے۔ یہ فطرت اور امن سے محبت کرنے والوں اور ٹراؤٹ مچھلی کے شکاریوں میں مشہور ہے۔ ‘مہوڈینڈ’ کا مطلب ہے ‘مچھلیوں کی جھیل’ (خاص طور پر ٹراؤٹ مچھلیوں)۔

قابل رسائی
مہوڈینڈ ویلی کو 4 × 4 گاڑی میں کلام سے ایک غیر شادی شدہ سڑک کے ذریعے پہنچا جاسکتا ہے۔ اگرچہ سڑک کھردرا اور مشکل ہے ، لیکن آس پاس کے مناظر کی خوبصورتی زائرین کے لئے ایک سلوک ہے۔ چھوٹے دیہات پہاڑوں میں بکھرے ہوئے ہیں اور گھروں سے آسمان میں گھومنے والے دھواں دھواں کچھ پرکشش نظارے ہیں ، جو ہمیشہ کے لئے یاد میں رہتے ہیں۔

وادی لمبی اور چوڑی ہے اور یہ انتہائی شمال میں چترال کی حد کو چھوتی ہے۔ 35 کلومیٹر دور کلام کی وسیع وادی سے تقریبا چار سے پانچ گھنٹوں تک گاڑی چلانے کے بعد ، کوئی مہوڈینڈ کی شاندار وادی تک پہنچ سکتا ہے جہاں چھوٹی جھیلوں ، لمبے دیودار کے درخت اور وسیع پیمانے پر چراگاہیں دیکھی جاسکتی ہیں۔ چھوٹے پرندوں کو جنہیں ’غیر کھیل پرندے‘ کہا جاتا ہے وہ سارا دن اپنی مدھر موسیقی سے ہوا کو بھرتے ہیں۔

سیاحوں کے پرکشش مقامات
جھیل ایک ندی کی طرح دکھائی دیتی ہے اور اس کی شکل بدل جاتی ہے۔ موسم بہار میں یا جون کے آخر میں جھیل مہوڈینڈ کا دورہ کرنا بہتر ہے کیونکہ یہی وہ وقت ہے جب گلیشیر پگھل گئے ہیں۔

عارضی ریستوراں اور ہوٹلوں کو مقامی لوگوں نے تعمیر کیا ہے ، جو کھانے اور رہائش کی ضروری سہولیات مہیا کرتے ہیں۔ صرف ایک ریستوراں ہے جو اچھا مقامی کھانا پکاتا ہے۔ بوٹنگ کی سہولیات کرایہ پر بھی دستیاب ہیں۔

کلام میں پی ٹی ڈی سی ریسورٹ سے ماہی گیری کے اجازت نامے حاصل کیے جاسکتے ہیں۔ بڑھتے ہوئے مسائل میں مقامی لوگوں کے ذریعہ زیادہ ماہی گیری اور ماہی گیری کے نامناسب طریقے شامل ہیں جیسے۔ بجلی ، بڑے جال اور متحرک۔ اس سے جھیل میں ٹراؤٹ مچھلی کی آبادی کم ہوگئی ہے۔ حکام کو وادی کی اس نایاب خصوصیت کو بچانے کے لئے اقدامات کرنا ہوں گے۔

اس علاقے میں ایک اور کشش ’شفا یابی کا موسم بہار‘ ہے جہاں لوگ دنیا بھر سے پانی میں نہانے کے لئے آتے ہیں جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ شفا بخش خصوصیات رکھتے ہیں۔ ٹریکرز مناسب ٹریک کے ذریعے چترال میں شینڈور ٹاپ یا غزر تک پہنچ سکتے ہیں۔ وادی خوبصورت اور پرامن کیمپنگ سائٹیں مہیا کرتی ہے۔ ٹریکرز کو گیس سلنڈروں کا بندوبست کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ اس سے قدرتی ماحولیاتی نظام پر بوجھ کم کرنے اور وادی کے خراب ہونے والے ماحول کو بھی محفوظ رکھنے میں مدد ملے گی۔ اس علاقے کے خانہ بدوشوں نے چھوٹی چھوٹی جھونپڑیوں کی تعمیر کی ہے جو اپنے مویشیوں کو چرنے کے لئے سرسبز علاقوں میں لے جاتے ہیں۔

اس آس پاس میں متعدد آبشار ہیں جو وادی کی خوبصورتی کو بڑھاتے ہیں۔ آبشار مختلف لمبائی اور سائز کے ہوتے ہیں۔ ان آبشاروں کی آواز پوری وادی میں گونجتی ہے اور پتھروں پر کریکنگ آواز پیدا کرتی ہے۔ ایک زائرین نے اس جگہ کی خوبصورتی کو “حیرت انگیز مناظر ، لمبے دیودار کے درختوں کی چھتری ، وسیع چراگاہوں ، گرجنے والے آبشار ، چمکتی ہوئی جھیلیں ، آسمان کو چھونے والے پہاڑوں ، اور جنگلی پھولوں اور جڑی بوٹیوں کی غیر ملکی خوشبو سے اس طرح کی مضبوطی کی وضاحت کی۔ ذہن پر یہ تاثر دیتا ہے کہ آنے والا ہمیشہ فطرت کے ساتھ ایک بننے کے دوسرے موقع کی تلاش میں رہتا ہے۔

کنڈال جھیل

مقام
کنڈال جھیل کلام سے 21 کلومیٹر اور اسلام آباد سے 281 کلومیٹر دور واقع ہے۔ یہ وادی کے شمال میں واقع ہے۔

رسائی
کنڈال جھیل کو آسانی سے کلام سے اتٹرور کے راستے تک رسائی حاصل کی جاسکتی ہے جہاں سے جھیل کے دامن میں ایک سبز وادی میں ایک لنک روڈ ختم ہوتا ہے۔ لاڈو سے جھیل کی پگڈنڈی کی پیروی کرنا آسان ہے جب جھیل سے ایک بہت بڑا ندی بہتی ہے ، جو وادی کالام میں دریائے سوات کے ساتھ مل جاتی ہے۔

پیدل سفر اتٹرور سے لاڈو تک پہنچنے کا ایک طریقہ ہوسکتا ہے یا سفر کو آسان بنانے کے لئے چار پہیے والا استعمال کیا جاسکتا ہے۔ لاڈو سے جھیل تک پہنچنے میں چار گھنٹے لگتے ہیں۔ پہلی دو گھنٹے کی واک ایک ندی کے ساتھ ایک تنگ وادی میں ہے تاہم وادی بعد میں چوڑی ہوجاتی ہے اور جھیل تک پہنچنے تک پھیل جاتی ہے۔ پگڈنڈی کے ساتھ چلنے کے لئے اچھے معیار کے جوتے کا استعمال کرنا ضروری ہے اور اس کی دیکھ بھال کرنا چاہئے کیونکہ حادثاتی پرچی خطرناک ہوسکتی ہے۔

سیاحوں کی توجہ
کنڈال ایک بہت بڑی اور وسیع جھیل ہے۔ اس کی لمبائی 2 کلومیٹر اور چوڑائی 1 کلومیٹر ہے۔ ایک بہت بڑا واٹر کورس اسے مشرقی طرف میں کھلاتا ہے جہاں گرمیوں میں بڑے گلیشیر پگھل جاتے ہیں۔ دو ہیملیٹس ہیں جہاں دو چھوٹی مساجد رہائش فراہم کرسکتی ہیں لیکن ہنگامی استعمال کی صورت میں اپنے خیمے رکھنا بہتر ہے۔ اس چھوٹی سی وادی کے آس پاس کے پہاڑ لمبے دیودار کے درختوں سے ڈھکے ہوئے ہیں۔

انہوں نے ڈیزل سے چلنے والی موٹر بوٹوں کا بھی اہتمام کیا ہے جس میں آپ جھیل کا دورہ کرسکتے ہیں اور آسانی سے دوسری طرف پہنچ سکتے ہیں کیونکہ بصورت دیگر اس میں کم سے کم دو گھنٹے لگ سکتے ہیں۔ گرمیوں کے دوران یہاں عارضی رہائش اختیار کرنے والے افراد کھلی زمین کو ہل چلا دیتے ہیں اور آلو اور شلجم کی کٹائی کرتے ہیں ، جو اس کے غیر ملکی ذائقہ کے لئے پورے ملک میں مشہور ہیں۔ کنڈال سینکوریری صومادھو پور-کالیبھت روڈ (دائیں طرف کی تصویر میں دکھایا گیا ہے) پر صومادھو پور سے 15 کلومیٹر دور واقع ہے۔

مقامی لوگ دوستانہ ہیں اور اگر کوئی ان سے پوچھتا ہے تو رہنمائی فراہم کرتا ہے۔ وہ سامان لے جانے میں بھی مدد کرتے ہیں۔ وہ بہت کوآپریٹو ہیں اور خوشی سے درخواست پر مکھن ، چھاچھ ، پنیر اور مکئی کی روٹی کے عام خانہ بدوش پکوان فراہم کریں گے۔ ان میں سے کچھ نے ایک قسم کے جھونپڑی والے ریستوراں بھی کھولے ہیں جہاں ادائیگی کے بعد چائے پیش کی جاتی ہے۔

ایسا لگتا ہے کہ یہ جھیل ناران کاغان میں جھیل سیفلملوک کا عین مطابق نقل ہے۔ دونوں جھیلیں تقریبا ایک ہی سائز اور ظاہری شکل کی ہیں۔ دونوں جھیلوں کا مقام اور گردونواح تقریبا ایک جیسی ہے لیکن ایک جانا جاتا ہے اور دوسرا وادی سوات کے پہاڑوں میں اب بھی پوشیدہ ہے۔ سیاحت کے حکام کو جھیل کو عام کرنے اور خصوصی دوروں کا اہتمام کرنے کے لئے بیدار ہونے کی ضرورت ہے تاکہ فطرت کے اس قیمتی تحفہ کو سب کے لئے واقف کیا جاسکے۔ نیچے کی تصاویر میں جھیل کے مختلف خوبصورت نظارے دکھائے گئے ہیں:

دو دیگر جھیلیں ، کھپیرو (فیریز) ، اور اسپن کھور (سفید ندی) کنڈال جھیل کے پردیی میں واقع ہیں اور پانچ سے چھ گھنٹوں میں جھیل کے ذریعے اس تک رسائی حاصل کی جاسکتی ہے۔ چلتے پھرتے تینوں جھیلوں کا دورہ کرنے میں لگ بھگ چار دن لگیں گے۔

کھپرو/پیری جھیل ون

مقام
نام ‘پیری’ یا “کھپیرو ‘کا مطلب ہے’ ’پریوں کا گھر‘ ‘۔ یہ خیال کیا جاتا ہے کہ پریاں وہاں رہتے ہیں اور اس جھیل کے پانی میں نہاتے ہیں۔ کھپرو جھیل وادی کے شمال مشرق میں واقع ہے۔ اس کی کافی گہرائی ہے اور اونچی پہاڑوں کے دامن میں جھوٹ ہے۔ 281 کلومیٹر اسلام آباد سے

رسائی
کھپرو جھیل کو ٹریکنگ کے ذریعہ ازمیس اور کنڈال جھیل سے حاصل کیا جاسکتا ہے۔ ازمیس اور کنڈال جھیل کی چوٹی تک پہنچنے میں تقریبا 5 گھنٹے لگتے ہیں۔ ٹریک دونوں اطراف سے بہت تیز ہے۔ آس پاس کے خوبصورت پھول اور سبز میدانوں میں دیکھا جاسکتا ہے۔

سیاحوں کی توجہ کا مرکز
کھپرو جھیل تیز کھردری چٹانوں اور پہاڑوں سے گھیرے ہوئے ہے جس میں گھاس اور خوبصورت پھول ہیں۔ یہ ایک نسبتا چھوٹی جھیل ہے ، شکل میں سہ رخی اور ایک عمدہ پیری جھیل جو اس کے نیچے واقع ہے اس کو کھلایا جاتا ہے۔ اس جھیل کا پانی رنگین سبز رنگ کا ہے۔ کرسٹل صاف پانی گلیشیروں اور پہاڑوں سے آبشار سے جھیل کو بھرتا ہے۔ سیاح سبز پہاڑیوں ، آسمان کو چھونے والے پہاڑوں اور علاقے میں خوبصورت ماحول سے راغب کرتے ہیں۔ اگست اور ستمبر کے مہینے کے علاوہ ، یہ جھیل سال بھر گلیشیروں میں ڈوبی جاتی ہے۔

کھپیرو/پیری جھیل ٹو

مقام
کھپیرو/ پیری لیک ٹو پیری لیک ون کے قریب واقع ہے ، سوات کے پہاڑی سلسلوں میں اونچائی پر۔

سیاحوں کی کشش
جھیل کی لمبائی 0.25 کلومیٹر ہے اور اس کے چاروں طرف کھڑی چراگاہیں ہیں۔ جب میدانی علاقوں میں چارہ محدود ہوتا ہے تو ، گریزر اپنے مویشیوں کو موسم گرما میں چراگاہوں میں لے جاتے ہیں۔ اس کے آس پاس میں واقع دوسری جھیل کے مقابلے میں یہ نسبتا زیادہ اور گہرائی میں ہے اور جولائی ، اگست اور ستمبر کے مہینوں میں کھلا رہتا ہے۔ کنڈال جھیل نیچے کے دامن میں واقع ہے اور پیری جھیل ٹو سے کنڈال جھیل تک پانی پانی ہے۔ غیر یقینی موسم اور تشویشناک اونچائی کی وجہ سے ، جھیل غیر منقولہ ہے۔

پری لیک ٹو کی دوگنا اہمیت ہے

نمبر1:یہ بہت بڑی کنڈال جھیل کو پانی کا ایک بہت بڑا حصہ فراہم کرتا ہے۔
نمبر2:یہ مقامی کے ساتھ ساتھ ہجرت کرنے والے پرندوں کے لئے بھی ایک محفوظ کھانا کھلانے کا میدان ہے۔

جھیل کے آس پاس کے اونچے پہاڑ بڑے برف کا لنڈ اور چمکدار رنگ کے مونل فیزنٹس کے لئے ایک محفوظ گودی ہیں۔ یہ پرندوں کو طلوع فجر کے ابتدائی اوقات میں سنا اور دیکھا جاسکتا ہے۔ پیری لیک ٹو دیکھنے کے لئے ایک خوبصورت جگہ ہے کیونکہ اس کے وسیع افق ، شاندار مناظر اور ٹھنڈی ہوا فطرت کے انمول تحائف ہیں جو دیکھنے والے کی یاد میں باقی ہیں۔

اسپن کھور (وائٹ اسٹریم) جھیل

مقام
اسپن کھور کنڈال جھیل کے شمال اور وادی کے مشرق میں واقع ہے۔ یہ اسلام آباد سے 176 کلومیٹر دور ہے۔ اسپن کھور نام کی اہمیت ہے کیونکہ مشرق میں ایک چھوٹی سی سفید ندی کے آس پاس کے پہاڑوں سے جھیل تک بہتا ہے اور یہ جھیل کے لئے پانی کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔

رسائی
اسپن کھور جھیل تک دو پٹریوں کے ذریعے رسائی حاصل کی جاسکتی ہے: ایک کنڈال سے ، اور دوسرا وادی لاڈو سے۔ لاڈو کی طرف سے ٹریک چلنا آسان ہے اور کم تھکاوٹ ہے جبکہ کنڈال سے ٹریک نہ صرف مشکل ہے بلکہ خطرناک ہے۔ اگرچہ یہ مختصر ہے اور کنڈال اور اسپن کھور کو جوڑتا ہے۔

سیاحوں کی کشش
جھیل سائز میں بڑی ہے اور یہ جانوروں اور مقامی اور نقل مکانی کرنے والے پرندوں کے لئے ایک مثالی پناہ ہے۔ جھیل کے آس پاس لمبے لمبے درخت آس پاس اور جھیل کی خوبصورتی میں اضافہ کرتے ہیں۔ جھیل کے آس پاس کے مناظر جنگلی پھول اور سبز میدانوں سے سجا ہوا ہے۔

تشہیر اور مقبولیت کی کمی کی وجہ سے ، اسپن کھور کو سیاحوں کے ذریعہ زیادہ دورہ نہیں کیا جاتا ہے۔ تاہم ، اس کے خوبصورت مناظر کی وجہ سے سیاحوں کو راغب کرنے کی ایک بہت بڑی صلاحیت ہے۔ کیمپسائٹس جھیل کے قریب دستیاب ہیں۔ اگر دیکھنے والوں کو مناسب پٹریوں اور دیگر ضروری سہولیات فراہم کی جائیں تو یہ جھیل ایک مشہور تفریحی مقام بن سکتی ہے۔

/ Published posts: 1249

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram