Mirpur – The Mini England

In TOURISM
August 18, 2022
Mirpur – The Mini England

Mirpur – The Mini England

Mirpur is a part of the Azad Kashmir division. It’s situated on the most Peshawar to Lahore Grand highway at Dina Tehsil. The division of Mirpur consists of three districts Kotli, Bhimber, and Mirpur. An outsized part of Mirpur’s population has migrated to England, They send their foreign income to Pakistan so as to form malls, buildings, and huge bungalows in Mirpur hence Mirpur is now called “Mini England”.

Language

The dominant language spoken in Mirpur is Pahari Potohari language which is additionally named because of the Mirpuri language. Although now because of the vast immigrations to England, English is additionally becoming popular. Many institutions have started spoken English courses currently. Urdu is additionally spoken but Mirpuri is usually preferred by the inhabitants. There are words like kutha for where, kiyaan for why, Miki for I, mara for my, julayan for going, etc. Mirpur could be a part of Kashmir but the little population of it knows the Kashmiri language.

Religion and Belief

The religion of the majority in Mirpur city is Islam. They follow mostly the practices of the Punjabi Potohari culture because of the closeness with the Potohar plateau. Islamiyat is a compulsory subject till graduation level. Mirpur contains a very famous darbar they visit occasionally, that’s the shrine of Baba Peer Shah Ghazi and Mian Mohammad Baksh who were famous Sufi saints. They need named this darbaar as Chechiyaan Darbaar or Khari Shareef. People of Mirpur have a firm belief that if one wants some prayer or wish to be accepted, he or she must promise to grant some money, provides a daaig, or put a chadar on the shrine of Peer Shah Ghazi once the wish is granted. Not only the people of Mirpur but people from Punjab also believe this and visit this place wholeheartedly.

Food

People within the said city have the identical taste as that of Punjabis. They just like the same spicy dishes like biryani, pulao, korma, etc. But the foremost famous and favorite dish of Mirpur is laal labia with white rice. There are many restaurants, food stalls, and stands on the road selling this dish by the name “pothi chaaval” or “lobia chaaval” and people from all social classes be it a class person or an elite class Chaudry like being here and eating this dish. Even ex-pats from the UK love this dish and take a look at it whenever they visit Mirpur.

Dresses:

Shalwar and Kameez are the basic dress of Mirpur city but because of the large immigration to England, now jeans have added to the culture of Mirpur too. Many of the ladies are now seen wearing jeans with long shirts or kurtas. a number of the elder members of the family wear a turban too and consider it part of their culture.

Events and Festivals:

Eid Milad un Nabi: This event is widely known on the 12th Rabi ul Awal in line with the calendar. It’s the date of birth of Prophet Muhammad (S.A.W). In Mirpur, this church festival is widely known with high enthusiasm. People everywhere in town decorate their houses with lights and other decorations. everybody from an old man to a faculty boy participates in it. Young boys decorate their cars with lights. Streets are decorated with garlands, sprigs, festoons, and colorful shining papers. Masajid are decorated with lights and there are Naats and Hamds played throughout town on radios and decks. There also are some peaceful processions in the evening.

Urs celebration of Baba Peer Shah Ghazi: this is often another celebration of the people in Mirpur. it’s a 3-day celebration that starts on the 20-22nd Zil Hajj consistent with the Islamic calendar. People from everywhere Mirpur and other small villages near it combine and a procession with dhol and dancing reaches the shrine on the 20th, so this festival continues till the 22nd. There are Naats, poems, and kalaams for the saint nowadays and food is served in huge amounts to the people who participate during this urs.

Elections: This is often hard to believe but elections are one of the foremost exciting events in Mirpur. Because it is a small city, almost everyone knows one another. So at the time of the election, there are groups of women and ladies going house to house at the time of election and persuading people to vote for their party. They need the flag of their party on their arms and that they enjoy it considerably. Especially the women have a good time during this event as this is often the sole event after they have full permission to roam around the whole city. One among them also encompasses a loud speaker in their hand and raises slogans for their parties. Then when the counting is finished and the result’s announced, there’s a lot of celebrations by the winning party, they send sweets and gifts to all or any the people everywhere and celebrate their winning enthusiastically.

Traditions and Customs:

Inter family marriages: It’s a custom of individuals in Mirpur to marry their children in their family and if there’s nobody suitable in the family, marriage is to be worn out baradari or same cast. It’s an awfully strict custom and people follow it. Even sometimes they are doing not consider the selection and can of their children and obtain them engaged at a very small age. It’s forbidden strictly to marry their daughters to someone outside their family. Although sometimes the male members marry girls outside the family it’s also something they avoid mostly.

Female education: Females in Mirpur are considered to work at home mostly so there are very less institutions for their education. There are schools, colleges, and universities having co-education and a few families don’t prefer it so avoid educating their daughters. They even have a perspective that females don’t require education but should be taught household chores. Although this point of view has been changing over time still there’s an oversized population who still has this kind of mindset.

Nepotism: Jobs are mostly given on the idea of family relations instead of abilities, skills, and education. An intermediate (FA) pass boy can have a decent job in a bank if he has an uncle at a high post. This is often not only practiced within the government sector but also in private and multinational companies operating there.

Family comes first: People in Mirpur believe that family is the most significant asset of their life. They always give first priority to family irrespective of what. Even if their family is wrong, still they’re going to be standing with them. They need very strong affiliations with their family be it those living in Mirpur or those in England.

Attributes of the Inhabitants:

Mirpur has those who are very loving and sort naturally. They’re helpful in times of need even for their enemies. They consider their guests as “Rahmat and Barkat” (good omen). They welcome their guests warmly and treat them with their whole hearts. Most of the people in Mirpur are lazy and don’t want to figure hard, so they make malls, shops, bungalows, buy cars and provide them for rent which is their source of income. In this way, they don’t need to put your all into it and by sitting at home and doing nothing they earn.

میرپور – دی منی انگلینڈ

میرپور آزاد کشمیر ڈویژن کا ایک حصہ ہے۔ یہ تحصیل دینہ میں مرکزی پشاور تا لاہور گرینڈ ٹرنک روڈ پر واقع ہے۔ میرپور ڈویژن تین اضلاع کوٹلی، بھمبر اور میرپور پر مشتمل ہے۔ میرپور کی آبادی کا ایک بڑا حصہ انگلستان ہجرت کر چکا ہے، وہ میرپور میں مال، عمارتیں اور بڑے بنگلے بنانے کے لیے اپنی غیر ملکی آمدنی پاکستان بھیجتے ہیں، اس لیے میرپور کو اب ’’منی انگلینڈ‘‘ کہا جاتا ہے۔

زبان

میرپور میں بولی جانے والی غالب زبان پہاڑی پوٹھوہاری زبان ہے جسے میرپوری زبان کا نام بھی دیا جاتا ہے۔ اگرچہ اب انگلستان میں وسیع امیگریشن کی وجہ سے انگریزی بھی مقبول ہو رہی ہے۔ اس وقت بہت سے اداروں نے اسپوکن انگلش کورسز شروع کیے ہیں۔ اردو بھی بولی جاتی ہے لیکن میرپوری کو زیادہ تر باشندے ترجیح دیتے ہیں۔ جہاں کے لیے کتھا، کیوں کے لیے کیا، میں کے لیے مکی، میرے لیے مارا، جانے کے لیے جولیاں وغیرہ جیسے الفاظ ہیں، میرپور کشمیر کا حصہ ہے لیکن اس کی بہت کم آبادی کشمیری زبان جانتی ہے۔

مذہب اور عقیدہ

میرپور شہر میں اکثریت کا مذہب اسلام ہے۔ پوٹھوہار کی سطح مرتفع کے ساتھ قربت کی وجہ سے وہ زیادہ تر پنجابی پوٹھوہاری ثقافت کے طریقوں کی پیروی کرتے ہیں۔ اسلامیات گریجویشن کی سطح تک لازمی مضمون ہے۔ میرپور میں ایک بہت مشہور دربار ہے جو وہ کبھی کبھار جاتے ہیں، وہ بابا پیر شاہ غازی اور میاں محمد بخش کا مزار ہے جو مشہور صوفی بزرگ تھے۔ انہوں نے اس دربار کو چیچیاں دربار یا کھری شریف کا نام دیا ہے۔ میرپور کے لوگوں کا پختہ عقیدہ ہے کہ اگر کوئی دعا چاہتا ہے یا قبول ہونا چاہتا ہے تو اس کی خواہش پوری ہونے کے بعد اسے کچھ رقم دینے، دیگ دینے یا پیر شاہ غازی کے مزار پر چادر چڑھانے کا وعدہ کرنا چاہیے۔ نہ صرف میرپور کے لوگ بلکہ پنجاب کے لوگ بھی اس پر یقین رکھتے ہیں اور دل سے اس جگہ کا دورہ کرتے ہیں۔

کھانا

مذکورہ شہر کے لوگوں کا ذائقہ وہی ہے جو پنجابیوں کا ہے۔ انہیں بریانائی، پلاؤ، قورمہ وغیرہ جیسی مسالے دار پکوان پسند ہیں لیکن میرپور کی سب سے مشہور اور پسندیدہ ڈش سفید چاولوں کے ساتھ لال لوبیا ہے۔ سڑکوں پر بہت سے ریستوران، کھانے پینے کے سٹالز اور اسٹینڈز پر اس ڈش کو ‘پوتھی چاول’ یا ‘لوبیا چاول’ کے نام سے فروخت کیا جاتا ہے اور تمام سماجی طبقے کے لوگ خواہ وہ نچلے طبقے کے فرد ہوں یا ایلیٹ کلاس کے چوہدری یہاں آکر کھانا پسند کرتے ہیں۔ . یہاں تک کہ برطانیہ کے تارکین وطن بھی اس ڈش کو پسند کرتے ہیں اور جب بھی وہ میرپور جاتے ہیں اسے آزماتے ہیں۔

کپڑے

شلوار اور قمیض میرپور شہر کا بنیادی لباس ہے لیکن انگلستان کی بڑی امیگریشن کے باعث اب جینز نے میرپور کی ثقافت میں بھی اضافہ کر دیا ہے۔ بہت سی لڑکیاں اب لمبی قمیضوں یا کرتوں کے ساتھ جینز پہنے نظر آتی ہیں۔ خاندان کے کچھ بڑے افراد بھی پگڑی پہنتے ہیں اور اسے اپنی ثقافت کا حصہ سمجھتے ہیں۔

تقریبات اور تہوار

عید میلاد النبی

یہ تقریب قمری کیلنڈر کے مطابق 12 ربیع الاول کو منائی جاتی ہے۔ یہ پیغمبر اسلام (ص) کی تاریخ پیدائش ہے۔ میرپور میں یہ مذہبی تہوار انتہائی جوش و خروش سے منایا جاتا ہے۔ شہر بھر کے لوگ اپنے گھروں کو روشنیوں اور دیگر سجاوٹ سے سجاتے ہیں۔ بوڑھے سے لے کر سکول کے لڑکے تک ہر شخص اس میں حصہ لیتا ہے۔ نوجوان لڑکے اپنی گاڑیوں کو روشنیوں سے سجا رہے ہیں۔ سڑکوں کو ہاروں، ٹہنی، تہواروں اور رنگ برنگے چمکتے کاغذوں سے سجایا گیا ہے۔ مسجدوں کو روشنیوں سے سجایا گیا ہے اور شہر بھر میں ریڈیو اور ڈیکوں پر نعتیں اور حمدیں بجائی جاتی ہیں۔ شام کو کچھ پرامن جلوس بھی نکلتے ہیں۔

بابا پیر شاہ غازی کے عرس کی تقریب: میرپور میں لوگوں کا یہ ایک اور جشن ہے۔ یہ تین روزہ جشن ہے جو اسلامی کیلنڈر کے مطابق 20-22 ذی الحج کو شروع ہوتا ہے۔ میرپور اور اس کے آس پاس کے دیگر چھوٹے چھوٹے دیہاتوں سے لوگ اکٹھے ہوتے ہیں اور ڈھول اور رقص کے ساتھ ایک جلوس 20 تاریخ کو مزار پر پہنچتا ہے اور پھر یہ میلہ 22 تاریخ تک جاری رہتا ہے۔ ان دنوں میں ولی کے لیے نعتیں، اشعار اور کلام ہوتے ہیں اور اس عرس میں شرکت کرنے والوں کو بڑی مقدار میں کھانا پیش کیا جاتا ہے۔

انتخابات

اس پر یقین کرنا مشکل ہے لیکن میرپور میں انتخابات سب سے دلچسپ واقعات میں سے ایک ہیں۔ چونکہ یہ ایک چھوٹا شہر ہے، تقریباً ہر کوئی ایک دوسرے کو جانتا ہے۔ اس لیے الیکشن کے وقت لڑکیوں اور خواتین کے گروپس گھر گھر جا کر لوگوں کو اپنی پارٹی کو ووٹ دینے پر آمادہ کرتے ہیں۔ ان کے بازوؤں پر اپنی پارٹی کا جھنڈا ہے اور وہ اس سے بہت لطف اندوز ہوتے ہیں۔ خاص طور پر لڑکیاں اس تقریب میں مزے کرتی ہیں کیونکہ یہ واحد تقریب ہے جب انہیں پورے شہر میں گھومنے کی مکمل اجازت ہوتی ہے۔ ان میں سے ایک کے ہاتھ میں لوڈ سپیکر بھی ہے اور وہ اپنی جماعتوں کے لیے نعرے لگا رہا ہے۔ اور پھر جب گنتی ہوتی ہے اور نتیجہ کا اعلان ہوتا ہے تو جیتنے والی پارٹی کی طرف سے جشن منایا جاتا ہے، وہ تمام لوگوں کو مٹھائیاں اور تحائف بھیجتے ہیں اور اپنی جیت کا جشن مناتے ہیں۔

روایات اور رسم و رواج

خاندانی شادیاں: میرپور کے لوگوں کا رواج ہے کہ اپنے بچوں کی شادی اپنے خاندان میں کرتے ہیں اور اگر خاندان میں کوئی مناسب نہ ہو تو شادی بارہ داری یا ایک ہی ذات میں کی جاتی ہے۔ یہ بہت سخت رواج ہے اور لوگ اس پر عمل کرتے ہیں۔ یہاں تک کہ بعض اوقات وہ اپنے بچوں کی پسند اور مرضی کا خیال نہیں رکھتے اور انہیں بہت چھوٹی عمر میں ہی منگنی کروا لیتے ہیں۔ اپنی بیٹیوں کی شادی اپنے خاندان سے باہر کسی کے ساتھ کرنا سختی سے منع ہے۔ اگرچہ بعض اوقات مرد ارکان خاندان سے باہر لڑکیوں سے شادی کرتے ہیں لیکن یہ بھی ایسی چیز ہے جس سے وہ زیادہ تر گریز کرتے ہیں۔

خواتین کی تعلیم

میرپور میں خواتین کو زیادہ تر گھر پر کام کرنا سمجھا جاتا ہے اس لیے ان کی تعلیم کے لیے ادارے بہت کم ہیں۔ ایسے سکول، کالج اور یونیورسٹیاں ہیں جن میں مخلوط تعلیم ہے اور بعض خاندانوں کو یہ پسند نہیں ہے اس لیے اپنی بیٹیوں کو تعلیم دینے سے گریز کریں۔ ان کا یہ نقطہ نظر بھی ہے کہ خواتین کو تعلیم کی ضرورت نہیں ہے بلکہ انہیں گھر کے کام سکھائے جانے چاہئیں۔ اگرچہ یہ نقطہ نظر وقت کے ساتھ بدلتا رہا ہے لیکن پھر بھی ایک بڑی آبادی ایسی ہے جو اب بھی اس قسم کی ذہنیت رکھتی ہے۔
اقربا پروری: نوکریاں زیادہ تر اہلیت، ہنر اور تعلیم کی بجائے خاندانی تعلق کی بنیاد پر دی جاتی ہیں۔ انٹرمیڈیٹ (ایف اے) پاس لڑکا کسی بینک میں اچھی نوکری کر سکتا ہے اگر اس کا کوئی چچا اعلیٰ عہدے پر ہو۔ یہ نہ صرف سرکاری شعبے میں بلکہ وہاں کام کرنے والی نجی اور ملٹی نیشنل کمپنیوں میں بھی رائج ہے۔

خاندان پہلے آتا ہے

میرپور کے لوگ سمجھتے ہیں کہ خاندان ان کی زندگی کا سب سے اہم اثاثہ ہے۔ وہ ہمیشہ خاندان کو پہلی ترجیح دیتے ہیں چاہے کچھ بھی ہو۔ یہاں تک کہ اگر خاندان غلط ہے، تب بھی وہ ان کے ساتھ کھڑے ہوں گے۔ ان کی اپنے خاندان سے بہت مضبوط وابستگی ہے خواہ وہ میرپور میں رہنے والے ہوں یا انگلینڈ میں۔

باشندوں کی صفات

میرپور میں ایسے لوگ ہیں جو فطرت کے لحاظ سے بہت محبت کرنے والے اور مہربان ہیں۔ وہ ضرورت کے وقت اپنے دشمنوں کے لیے بھی مددگار ثابت ہوتے ہیں۔ وہ اپنے مہمانوں کو ’’رحمت و برکت‘‘ (نیک شگون) سمجھتے ہیں۔ وہ اپنے مہمانوں کا گرم جوشی سے استقبال کرتے ہیں اور ان کے ساتھ پورے دل سے پیش آتے ہیں۔ میرپور کے اکثر لوگ سست ہیں اور محنت نہیں کرنا چاہتے اس لیے وہ مال، دکانیں، بنگلے بناتے ہیں، گاڑیاں خریدتے ہیں اور کرائے پر دیتے ہیں جو ان کی آمدنی کا ذریعہ ہے۔ اس طرح انہیں محنت نہیں کرنی پڑتی اور گھر بیٹھ کر کچھ نہیں کرنا پڑتا۔

/ Published posts: 1277

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram