Alauddin Khilji

In BIOGRAPHY
October 01, 2022
Alauddin Khilji

Alauddin Khilji

Alauddin Khalji was the nephew and son-in-law of Jalaluddin Khalji. After the downfall of the Malik Chajju and after being appointed the governor of Karah near Allahabad, he won over the boldness of the Sultan by surrendering a large amount of booty to him which he had collected in the expedition of Malwa in 1292.

He had won a great reputation as a soldier. In 1296, after a treacherous murder of his uncle Jalaluddin Firoz Khalji, he proceeded to Delhi to accumulate the throne. There, the widow of Firoz had founded one of her sons Qadir Khan on the throne. But Alauddin was very clever for her. He won over a large number of ministers and nobles to his side with the assistance of gold and money. So he silenced all murmurs of disapproval and discontent by stopping the mouths of people with gold. The military was also won over by the lavish distribution of wealth and presents. The cruel measures he adopted to secure his ill-gotten throne showed clearly that Alauddin was a heartless tyrant. He had no regard for justice. But in spite of his vices, it must be said that he was a brave soldier and an active ruler.

Alauddin wasn’t only a good leader but an excellent administrator. He crushed the ability of the nobility to achieve peace in the country. He confiscated their excess amount of money and property and put a ban on their social gatherings and prohibited them to use wine. He didn’t allow the Ulemas to interfere in the political affairs of the State. He’s also credited to possess introducing various reforms on the land revenue and military departments. His control of the markets is considered one of the marvels of medieval statesmanship. There prevailed complete peace and tranquility during his reign. Alauddin was an excellent patron of learning. Amir Khusrau was patronized by him.

He largely extended the frontiers of the Muslim dominions in India and effectively checked the Mongols’ inroads. Alauddin was an excellent military general. He dreamt to become another Alexander. Sultan maintained a powerful army and punished the Mongols so terribly that they dared to not attack India again. He conquered most of the Hindu states in the North and over-ran the whole of the South. All his military exploits were crowned successfully. Alauddin’s treatment of Hindus was very severe. They were forced to pay land revenue at a better rate. They were also required to pay several unjustified taxes.

They were taxed so heavily that no Hindu could afford to ride a horse or wear fine clothes and carry arms. Besides, for administrative success, he kept a strict eye on the movements of his officials and folks. So for this purpose, he organized an efficient spy system. They were kept at the provincial headquarters, in markets and all told the units of the military. this technique kept the nobles in terror and Sultan remained well-informed about the all good and bad things. Although Alauddin was quite illiterate he had great administrative and organizing qualities. He laid the muse of highly organized administrative machinery through his reforms.

علاؤالدین خلجی

علاؤالدین خلجی جلال الدین خلجی کے بھتیجے اور داماد تھے۔ ملک چھجو کے زوال کے بعد اور الہ آباد کے قریب قرہ کا گورنر مقرر ہونے کے بعد، اس نے 1292ء میں مالوا کی مہم میں جمع ہونے والے مال غنیمت کی ایک بڑی رقم اس کے حوالے کر کے سلطان کا اعتماد حاصل کیا۔ ایک سپاہی کے طور پر بہت شہرت حاصل کی۔ 1296 میں، اپنے چچا جلال الدین فیروز خلجی کے غدارانہ قتل کے بعد، وہ تخت حاصل کرنے کے لیے دہلی چلا گیا۔ وہاں فیروز کی بیوہ نے اپنے ایک بیٹے قادر خان کو تخت پر بٹھایا تھا۔

لیکن علاء الدین اس کے لیے بہت چالاک تھا۔ اس نے سونے اور پیسوں کی مدد سے بڑی تعداد میں وزراء اور امرا کو اپنی طرف سے جیت لیا۔ چنانچہ اس نے لوگوں کے منہ سونے سے روک کر ناپسندیدگی اور عدم اطمینان کی تمام گنگناہٹ کو خاموش کردیا۔ دولت اور تحائف کی شاندار تقسیم سے فوج بھی جیت گئی۔ اس نے اپنے ناجائز تخت کو محفوظ رکھنے کے لیے جو ظالمانہ اقدامات کیے اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ علاؤالدین ایک سنگدل ظالم تھا۔ اسے انصاف کی کوئی پرواہ نہیں تھی۔ لیکن ان کی برائیوں کے باوجود یہ کہنا ضروری ہے کہ وہ ایک بہادر سپاہی اور ایک زور آور حکمران تھے۔

علاؤالدین نہ صرف ایک عظیم فوجی رہنما تھے بلکہ ایک بہترین منتظم تھے۔ اس نے ملک میں امن قائم کرنے کے لیے شرافت کی طاقت کو کچل دیا۔ اس نے ان کی زائد رقم اور جائیداد ضبط کر لی اور ان کے اجتماعات پر پابندی لگا دی اور شراب کے استعمال سے منع کر دیا۔ انہوں نے علمائے کرام کو ریاست کے سیاسی معاملات میں مداخلت کی اجازت نہیں دی۔ انہیں زمینی محصولات اور فوجی محکموں میں مختلف اصلاحات متعارف کرانے کا سہرا بھی جاتا ہے۔ بازاروں پر اس کے کنٹرول کو قرون وسطیٰ کی سیاست کے کمالات میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ ان کے دور حکومت میں مکمل امن و سکون تھا۔ علاؤالدین علم کا بہت بڑا سرپرست تھا۔ امیر خسرو ان کی سرپرستی کرتے تھے۔

اس نے بڑے پیمانے پر ہندوستان میں مسلم تسلط کی سرحدوں کو بڑھایا اور سڑکوں پر منگولوں کو مؤثر طریقے سے چیک کیا۔ علاؤ الدین ایک عظیم فوجی جرنیل تھے۔ اس نے دوسرا سکندر بننے کا خواب دیکھا۔ سلطان نے ایک مضبوط فوج برقرار رکھی اور منگولوں کو اس قدر خوفناک سزا دی کہ وہ دوبارہ ہندوستان پر حملہ کرنے کی ہمت نہ کر سکے۔ اس نے شمال میں زیادہ تر ہندو ریاستوں کو فتح کیا اور پورے جنوب پر قبضہ کر لیا۔ اس کے تمام فوجی کارناموں کو کامیابی کا تاج پہنایا گیا۔ ہندوؤں کے ساتھ علاؤالدین کا سلوک بہت سخت تھا۔ وہ زیادہ شرح پر زمینی محصول ادا کرنے پر مجبور تھے۔ انہیں کئی ناجائز ٹیکس بھی ادا کرنے پڑتے تھے۔ ان پر اتنا بھاری ٹیکس لگایا گیا تھا کہ کوئی ہندو گھوڑے پر سوار ہونے یا عمدہ کپڑے پہننے اور ہتھیار اٹھانے کا متحمل نہیں تھا۔ اس کے علاوہ انتظامی کامیابی کے لیے وہ اپنے اہلکاروں اور لوگوں کی نقل و حرکت پر کڑی نظر رکھتے تھے۔ چنانچہ اس مقصد کے لیے اس نے ایک موثر جاسوسی نظام ترتیب دیا۔ انہیں صوبائی ہیڈ کوارٹر، بازاروں اور فوج کے تمام یونٹوں میں رکھا گیا۔ اس نظام نے امرا کو دہشت میں مبتلا کر رکھا تھا اور سلطان تمام اچھی بری چیزوں سے باخبر رہتا تھا۔ علاؤالدین اگرچہ کافی پڑھے لکھے تھے لیکن ان میں بڑی انتظامی اور تنظیمی خوبیاں تھیں۔ انہوں نے اپنی اصلاحات کے ذریعے انتہائی منظم انتظامی مشینری کی بنیاد رکھی۔

/ Published posts: 1277

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram